کرونا وائرس سے متاثرہ بھٹکل کے تینوں لوگوں کے دبئی کے دوست احباب کی رپورٹ نگیٹیو؛ کیا دبئی میں بھی بھٹکلی شخص کورونا میں ایڈمٹ ہے ؟

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 25th March 2020, 2:51 AM | ساحلی خبریں | خلیجی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل 24/مارچ (ایس او نیوز) کرونا وائرس سے متاثرہ تینوں افراد کے  دبئی میں مقیم دوست احباب نے دبئی اسپتال پہنچ کر اپنی جانچ کرائی ہے اور سبھوں  کی رپورٹ نیگیٹو موصول ہوئی ہے۔ دبئی سے  ذرائع  نے بتایا کہ  تینوں لوگوں کے دوست احباب اور رشتہ داروں  نے اپنا چیک آپ کرایا ہے اور ڈاکٹر نے بتایا ہے کہ کسی میں بھی کرونا کی علامات نہیں پائی گئی ہیں۔ اس دوران دبئی سے اس بات کی اطلاع ملی ہے کہ دبئی  میں بھی بھٹکل کا ایک شخص  کورونا پوزیٹیو پایا گیا ہے اور وہ اسپتال میں ایڈمٹ ہے۔

خیال رہے کہ کرونا کے اثرات پائے جانے والے بھٹکل کے جو   تین  مسافر دبئی سے لوٹے تھے، ان میں پہلا مسافر دراصل مسقط میں ملازمت  کرتا ہے، مگر وہ قریب چار پانچ دن دبئی میں اپنے دوست احباب کے ساتھ مقیم تھا۔ آج بھٹکل کے جن دو لوگوں میں  کووڈ -19 کے وائرس پائے جانے کی رپورٹ موصول ہوئی ہے، ان میں ایک شخص کی عمر 40 سال ہے اور دوسرے کی عمر لگ بھگ 65 سال ہے۔

دبئی میں 15/16 سالوں سے مقیم تھا: 40 سالہ شخص کے تعلق سے معلوم ہوا ہے کہ وہ گذشتہ15/16سالوں سے دبئی میں مقیم تھا، ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار کے مطابق   وہ  21/مارچ کو  صبح 6:30 بجے مینگلور ائرپورٹ پر اُترا تھا، وہاں سے اپنے کزن کےساتھ پرائیویٹ گاڑی پرسوار ہوکر   قریب ساڑھے گیارہ بجے  بھٹکل اپنے گھر پہنچا تھا، کچھ وقت  گھر والوں کے ساتھ گذارنے کے بعددوپہر قریب دو بجے  خود ہی اپنے ایک ساتھی کے ساتھ بھٹکل تعلقہ سرکاری اسپتال میں کرونا کی جانچ کرانے پہنچا تھا، ڈی سی نے بتایا کہ  اُسی دن ہم نے اُس کا کورنٹائن کیا  اور اس  کا swab  حاصل کرکے  جانچ کے لئے روانہ کیا، جس کی رپورٹ ہمیں پیر کو موصول ہوئی، جو پوزیٹیو نکلی۔ ہم نے اس کی رپورٹ کی دو  مرتبہ تصدیق کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ متاثرہ شخص جس جس کے ساتھ رابطہ میں تھا ہم اُن سب کی تفصیلات حاصل کررہے ہیں  اور سب  کو کورنٹائن کریں گے۔

65 سالہ شخص نے قریب پانچ سال پہلے ہی دبئی کو خیر باد کیا   تھا:  دبئی سے بھٹکل پہنچنے والے جس دوسرے شخص کی رپورٹ آج مثبت پائی گئی ہے، اُس شخص کی عمر قریب 65 سال ہے، وہ قریب 30/35 سالوں تک دبئی میں ملازمت کرنے کے بعد  قریب پانچ سال پہلے ہی دبئی کو خیر باد کرکے بھٹکل لوٹے تھے   اور بھٹکل میں ہی مقیم تھے، حال ہی میں اپنے رشتہ داروں سے ملنے وہ دبئی گئے تھے۔ خبر ملی ہے کہ دبئی میں وہ اپنی بیٹی کے گھر پر مقیم تھے،  بتایا گیا ہے کہ اُن  کا  شائد ایک ماہ تک دبئی میں  رہنے کا ارادہ تھا، مگر جیسے ہی کرونا وائرس کی ہوا چلی اور جیسے ہی معلوم ہوا کہ 18 مارچ کے بعد فلائٹ سروس بند ہونے والی ہے، انہوں نے اُسی دن کی ٹکٹ کرائی اور سیدھے ممبئی ہوتے ہوئے اگلے روز  بذریعہ ٹرین بھٹکل پہنچے۔

کیا دبئی میں کرونا سے متاثرہ شخص سے ہوئی تھی ملاقات؟ :  معلوم ہوا ہے کہ دبئی دورہ کے دوران ان کی ملاقات ایک ایسے شخص سے ہوئی تھی جو کرونا سے متاثر تھا۔ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ  جس وقت ملاقات ہوئی تھی اُس وقت متعلقہ شخص کے تعلق سے پتہ نہیں چلا تھا کہ وہ کرونا سے متاثرہ شخص ہے، 18 مارچ کو جب اُس شخص کی رپورٹ سامنے آئی تو وہ کرونا پوزیٹیو تھی۔ بتایا گیا ہے کہ اُس شخص کا تعلق بھی بھٹکل سے ہے اور وہ فی الحال دبئی کے ایک اسپتال میں زیرعلاج ہے ، یہ بھی خبر ہے کہ اسپتال میں  اُس کی حالت سدھررہی ہے۔

ذرائع کی مانیں تو 65 سالہ شخص جیسے ہی بھٹکل پہنچے، اُس وقت پتہ  چلا تھا کہ  دبئی میں جس شخص سے اُن کی ملاقات ہوئی تھی، اُس کی رپورٹ کرونا پوزیٹیو آئی ہے۔ اس بات کے معلوم ہوتے ہی موصوف فوراً اپنی جانچ کرانے  بھٹکل سرکاری اسپتال پہنچے تھے۔

23/ مارچ کی شام کو جیسے ہی ان کی رپورٹ بھی کرونا پوزیٹیو ہونے کی تصدیق ہوئی اور آج  منگل کو ضلع انتظامیہ نے ان میں کرونا کے اثرات پائے جانے کی تصدیق کی،  دبئی میں مقیم ان کی بیٹی سمیت دیگر رشتہ دار و دوست احباب نے فوری طور پر  دبئی اسپتال پہنچ کر اپنی اپنی جانچ کرائی۔ پتہ چلا ہے کہ سبھوں کی رپورٹ نیگیٹیو آئی  ہے۔دبئی میں مقیم بھٹکل سے تعلق رکھنے والے تینوں لوگوں کے دوست احباب کے   رپورٹس منفی آنے پر بھٹکلی عوام نے  راحت کی سانس لی ہے۔

مینگلور میں ایڈمٹ نوجوان کا ہورہا ہے بہترین علاج:   ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ مینگلور کے وینلاک اسپتال میں ایڈمٹ بھٹکل کے 22 سالہ نوجوان کا بہترین علاج ہورہا ہے۔ پتہ چلا ہے کہ نوجوان کی صحت بالکل ٹھیک ہے اور وہ بالکل پرسکون ہے۔ 

دوسری طرف  65 سالہ شخص  جس کی رپورٹ بھی مثبت آئی ہے،  بھٹکل سرکاری اسپتال میں ایڈمٹ ہے، یہ شخص بھی نہایت پرسکون ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ ان کے  گھر والوں کی شکایت کے بعد کہ بھٹکل اسپتال میں کسی طرح کی کوئی سہولت نہیں ہے  انہیں کل بدھ  کو کاروار سیویل اسپتال منتقل کیا جائے گا۔

گھر گھر پہنچ کر جانچ کرنے کی مہم میں آڑے آرہے ہیں  سوشیل میڈیا کے بے بنیاد مسیجس:   آج صبح مجلس اصلاح و تنظیم کے وفد کے ساتھ  تعلقہ انتظامیہ کی میٹنگ کے بعد اُترکنڑا ضلع پنچایت کے چیف ایکزی کوٹیوآفسر محمد روشن نے کاروار سے خصوصی طور پر بھٹکل پہنچ کر مقامی خواتین سمیت مختلف اسپتالوں کی نرسوں کا تعاون حاصل کرتے ہوئے جنگی پیمانے پر 80 میڈیکل ٹیمیں ترتیب دیں تھیں اور ایک ایک ٹیم  کو اگلے 48 گھنٹوں کے اندر  پچاس پچاس گھروں میں پہنچ کر تفصیلات جمع کرنے کی ذمہ داری سونپی تھی کہ پتہ لگایا جاسکے کہ کرونا کے آثار کسی میں نظر میں آئے تو فورا ان کا علاج کیا جاسکے اور  کرونا وائرس کا مکمل طور پر خاتمہ کیا جاسکے۔ مگر خبر ملی ہے کہ بھٹکل کے کئی عوام نے  میڈیکل ٹیموں کے افراد کو کسی بھی  طرح کی معلومات دینے سے انکار کیا ہے۔ انکار کرنے کی وجہ سوشیل میڈیا پر وائرل ہونے والے مسیجس کو قرار دیا جارہا ہے جس میں کئی لوگوں نے وائس اور وڈیو مسیجس کے ذریعے عوام الناس کو خبردار کیا ہے کہ میڈیکل ٹیم کے  نام پر لوگ این پی آر کی معلومات حاصل کرنے کی کوشش کررہے ہیں لہٰذا ان کو کسی طرح کی معلومات نہ دیں۔

خبر ملی ہے کہ بھٹکل کے عوام کی طرف سے تفصیلات حاصل کرنے سے روکے جانے کے واقعات کے بعد کئی میڈیکل ٹیموں کے کارکنوں نے اعلیٰ حکام سے شکایت کی ہے کہ کئی لوگوں نے ان کے فوٹوز اور وڈیوز لئے ہیں اور اُنہیں بدنام کرنے جیسے مسیجس کے ساتھ ان کے فوٹوز اور وڈیوز سوشیل میڈیا پر  وائرل کئے گئے ہیں، لہٰذا وہ کل سے کسی کے بھی گھروں کو نہیں جائیں گے۔

ذمہ داران سمیت تنظیم کو جھٹکا:  میڈیکل ٹیموں  کو واپس روانہ کرنے کی شکایات  اور کارکنوں کے ساتھ کئے گئے غلط سلوک پر بھٹکل کے ذمہ داران سمیت قومی سماجی ادارہ مجلس اصلاح و تنظیم کو سخت جھٹکا لگا ہے۔ ذمہ داران نے واقعے پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ بعض لوگوں کے غلط پیغامات کو لوگ صحیح سمجھ کر دوسروں کو فارورڈ کرتے ہیں جس سے قوم و ملت کا نقصان ہوتا ہے۔  تنظیم کے صدر ایس ایم پرویز اور جنرل سکریٹری عبدالرقیب ایم جے ندوی نے ایسے غلط اور بے بنیاد   مسیجس وائرل کرنے پر سخت ناراضگی ظاہر کی ہے اور بتایا ہے کہ میڈیکل ٹیموں کو روانہ کرنے کا فیصلہ تنظیم ذمہ داران نے انتظامیہ کے آفسران کے ساتھ  میٹنگ میں  لیا  تھا۔

تنظیم کے ذمہ دار ایڈوکیٹ عمران لنکا نے اس تعلق سے بتایا کہ ہم نے تعلقہ انتظامیہ کے ساتھ میٹنگ کے بعد گھر گھر جانے اور تفصیلات حاص کرنے پر زور دیا تھا اورتعلقہ انتظامیہ سمیت ضلعی انتظامیہ نے ہمارے ساتھ بھرپور تعاون کرتے ہوئے میڈیکل ٹیمیں ترتیب دی تھیں، مگر چند لوگوں نے سوشیل میڈیا پر غلط اوربے بنیاد پیغامات وائرل کرتے ہوئے   عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کی ہے جس سے ہمیں سخت دکھ ہوا ہے، انہوں نے عوام الناس سے درخواست کی کہ وہ گھروں پر پہنچنے والی میڈیکل  ٹیموں کے ساتھ مکمل تعاون کریں اور کرونا وائرس کا بھٹکل سے صفایا کرنے میں  ہمارا ساتھ دیں۔

27 لوگوں کے سویب کی جانچ ہوئی ہے، دو کی رپورٹ ملنی باقی:  کرونا سے مشکوک  بھٹکل کے جملہ 27 لوگوں  کے سویب لے کر اُن کی جانچ کی گئی ہے، جس میں دو کی رپورٹ پوزیٹیو آئی ہے، اب تک 23 لوگوں کی رپورٹ نیگیٹو موصول ہوچکی ہے، اب صرف دو لوگوں کی رپورٹ ملنی باقی ہے۔ اس بات کی اطلاع ضلع اُترکنڑا کے ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے دی۔ انہوں نے بتایا کہ  22ْ مارچ تک بھٹکل کے جملہ 56 لوگ غیر ممالک سے بھٹکل لوٹے ہیں، تمام لوٹنے والے حضرات کی ہر ہر حرکت کی  انتظامیہ سختی کے ساتھ نگرانی کررہی ہے، ابتدائی جانچ کی جاچکی ہے، کسی بھی طرح   کے کرونا کے  آثار پائے جانے پر اُن کا کورنٹائن کیا گیا ہے اور اُن کے سویب کے نمونے جانچ کے لئے روانہ کئے جاچکے ہیں، جن میں کسی بھی طرح کی  کرونا  کی کوئی علامت  نہیں پائی گئی ہے، اُنہیں گھر پر ہی اپنے آپ کو بند کرنے کےاحکامات دئے جاچکے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ میڈیکل ٹیم کے ذریعے  جن مکانات پر پہنچ کر جانچ کی جاچکی ہے، اُن کے مکان کی دیوار پر ایک پوسٹر چپکایا جارہا ہے تاکہ معلوم ہوسکے کہ متعلقہ مکان میں رہنےوالوں سے پوچھ تاچھ ہوچکی ہے۔

بھٹکل سرکاری اسپتال میں کئی لوگوں کو کیا گیا ہے کورنٹائن:  حال ہی میں گلف سے جو لوگ بھٹکل لوٹے ہیں، اُن میں سے اکثر کو پہلے ہی کورنٹائن کیا جاچکا ہے، بھٹکل میں آج ایک ساتھ دو لوگوں کی رپورٹ پوزیٹیو آنے کی اطلاع کے بعد مزید کافی لوگوں کو بھٹکل سرکاری اسپتال میں کونٹائن کیا گیا ہے۔ اسی طرح مینگلور میں جس نوجوان کو مثبت رپورٹ آنے کے بعد ایڈمٹ کیا گیا ہے، اُس کے رابطے میں آنےوالے نوجوانوں کا بھی کورنٹائن کیا گیا ہے جس میں دو نوجوان مینگلور میں ہی ایڈمٹ ہیں، اسی طرح اس کی فلائٹ پر آئے ہوئے  چھ دوسرے بھٹکلی مسافروں کو مرڈیشور میں کورنٹائن کیا گیا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق فی الوقت صرف بھٹکل سرکاری اسپتال میں بارہ لوگوں کو کورنٹائن کیا گیا ہے۔

کیا کرونا سے متاثرہ لوگوں سے رابطہ کرنے والے تمام لوگوں کا کورنٹائن ہوچکا ہے؟:   دبئی میں مقیم ایک بھٹکلی شخص میں کرونا کے  وائرس کے اثرات پائے جانے کی اطلاع کے بعد کرونا سے متاثرہ بھٹکلی لوگوں کی تعداد اب بڑھ کر  چار ہوگئی ہے۔ دبئی میں اس شخص کے رابطے میں کون کون تھا اوروہاں سے مزید کن کن لوگوں میں کرونا  وائرس منتقل ہوا ہے،  اُس کی جانکاری ملنا ممکن نہیں لگتا، اسی طرح  بھٹکل میں جن دو لوگوں کی رپورٹ مثبت آئی ہے، ان کےرابطے میں مزید کتنے لوگ آچکے ہیں، ممبئی سے جو شخص ٹرین پر سوار ہوکر  بھٹکل پہنچے تھے، ٹرین میں اُن کا سامنا کتنے لوگوں سے ہوا ، ان  کا بھی پتہ لگانا آسان نہیں ہے، اسی طرح بھٹکل پہنچنے کے بعد ان کا رابطہ کتنے لوگوں سے ہوا، اُنہوں نے جمعہ کی نماز کہاں پڑھی تھی وہاں کن کن لوگوں سے اُن کی ملاقات ہوئی تھی   ان سب کی  جانکاری حاصل کرنا بھی ممکن نظر نہیں آتا، ان سب کو دیکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ میڈیکل ٹیموں کو گھر گھر پہنچ کر جانچ کرنا انتہائی ضروری ہے اورہر گھر کی معلومات حاصل کرکے اُسی کے مطابق  کام کو آگے بڑھانے سے  ہی  کرونا وائرس کا خاتمہ  ممکن ہے۔

کرونا کے علامات پانچ دن بعدظاہر ہوتے ہیں:   واضح رہے کہ کرونا وائرس ہونے کی علامت ابتدا میں ظاہر نہیں ہوتی۔ وہ زیادہ تر   پانچ دن بعد  ظاہر ہوتی ہے۔ امریکی  محقق جاہن ہوپکنز کی مانیں تو  کورونا وائرس کی جسم میں موجودگی پر 5 دن میں علامات ظاہر ہونے لگ جاتی ہیں۔جبکہ محقیقن کا یہ بھی کہنا ہے کہ COVID 19 کی علامات ظاہر ہونے والے افرادکو 14 دن کی مدت کے لیےالگ رکھا جاتا ہے تاکہ 14 دن کے اندر وہ وائرس سے چھٹکارا پاسکیں۔  اس بنا پر یہ کہنا غلط ہوگا کہ جن لوگوں میں کورونا وائرس کی علامات آج نہیں پائی گئی ہیں  تو وہ بچ نکلا ہے، بلکہ پانچ اور دس دن بعد بھی علامات ظاہر ہوسکتی ہیں، ایسے میں  ہر ایک کے لئے ضروری ہے کہ وہ احتیاط برتیں، اپنے اداروں کی ہدایات پر عمل کریں اور اس وائرس کا خاتمہ کرنے انتظامیہ کے ساتھ بھی تعاون کریں۔

مساجد میں صرف پنچ  وقتہ اذان، جمعہ نماز بھی نہ پڑھنے قاضی صاحبان کا حکم:   بھٹکل کی دونوں جماعتوں کے قاضی صاحبان نے  مشترکہ طور پر اس بات کااعلان کیا ہے کہ تمام حضرات پنچ وقتہ نماز گھر پر ہی ادا کریں۔ آڈیو مسیج جاری کرتے ہوئے مولانا خواجہ  اکرمی مدنی نے بتایا کہ  بھٹکل کی دونوں جماعتوں کے قاضی صاحبان سمیت جماعتوں کے  ذمہ داران، مجلس اصلاح و تنظیم کے ذمہ داران  اور شہر کے مختلف علماء  نے مل بیٹھ کر اس بات کا فیصلہ کیا ہے کہ مسجد میں صرف پنچ وقتہ اذان دی جائے گی جس کے بعد مسجدوں میں کہا جائے گا کہ سب لوگ اپنے اپنے گھروں میں ہی نماز پڑھیں، اسی طرح مولانا نے بتایا کہ  حالات کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے جمعہ کی نماز بھی نہیں ادا کی جائے گی۔انہوں نے تمام  مسلمانوں سمیت مساجد کے ذمہ داران پر زور  دیا کہ قاضی صاحبان کی ان ہدایات پر سختی کے ساتھ عمل کریں۔ مزید بتایا کہ شریعت کے اندر اس سلسلے میں عذر ہونے  کی وجہ سے  اس طرح کا  موقف اختیار کیا گیا ہے

ایک نظر اس پر بھی

اُڈپی میں کوویڈ کے بڑھتے معاملات پر بھٹکل کے عوام میں تشویش؛ پڑوسی علاقہ سے بھٹکل داخل ہونے والوں پر سخت نگرانی رکھنے ضلعی انتظامیہ سے مطالبہ

بھٹکل کورونا فری ہونے کے بعد اب پڑوسی ضلع اُڈپی میں روزانہ پچاس اور سو کورونا معاملات کے ساتھ  پوری ریاست میں اُڈپی میں سب سے  زیادہ کورونا کے معاملات سامنے آنے پر بھٹکل میں بھی تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔ عوام اس بات کو لے کر پریشان ہیں کہ اُڈپی سے کوئی بھی شخص آسانی کے ساتھ ...

نیسرگا‘طوفان کے دوران طوفانی ہوا اور بارش سے ہیسکام کو کاروار میں ایک ہی دن 8لاکھ اور بھٹکل میں 1 لاکھ سے زائد کا نقصان

مہاراشٹرامیں تباہی مچانے والا ’نیسرگا‘ طوفان ویسے تو کرناٹکا کے ساحلی علاقے کو چھوتا ہوانکل گیا، مگر جاتے جاتے بھٹکل سمیت  کاروار شہر اوراطراف میں اپنے اثرات ضرور چھوڑ گیا۔

مینگلور: آئندہ صرف کورونا سے متاثر افراد کے گھروں کو ’سیل ڈاؤن‘ کیا جائے گا۔ علاقے کو’کٹینمنٹ زون‘ نہیں بنایا جائے گا؛ میڈیکل ایجوکیشن منسٹر کا بیان

سرکاری سطح پرکووِڈ 19کی وباء پر قابو پانے کے لئے ابتدا میں جوسخت اقدامات کیے جارہے تھے، اب بدلتے ہوئے حالات کے ساتھ ان میں نرمی لانے کا کام مسلسل ہورہا ہے۔

کرناٹکا میں آج پھر 257 کی رپورٹ کورونا پوزیٹو؛ اُڈپی میں پھر ایک بار سب سے زیادہ 92 معاملات؛ تقریباً سبھی لوگ مہاراشٹرا سے لوٹے تھے

سرکاری ہیلتھ بلٹین میں پھر ایک بار  کرناٹک میں آج 257 لوگوں میں کورونا  کی تصدیق ہوئی ہے جس میں سب سے زیادہ معاملات پھر ایک بار ساحلی کرناٹک کے ضلع اُڈپی سے سامنے آئے ہیں۔ بلٹین کے مطابق آج  اُڈپی سے 92 معاملات سامنے آئے ہیں اور یہ تمام لوگ مہاراشٹرا سے لوٹ کر اُڈپی پہنچے تھے۔

سعودی عرب نے پرائیویٹ ملازمین کو 2 سال تک نصف تنخواہ کی ادائیگی کا کیا اعلان

دنیا بھر میں کورونا وائرس کے پیش نظر حکومتوں نے عوام، مزدوروں اور ملازمین کو ریلیف فراہم کرنے کے اعلانات کر رکھے ہیں اور اس سلسلہ میں متعدد ممالک کی حکومتوں نے ملازمین کو خصوصی ریلیف فراہم کرنے کے انتظامات بھی کئے ہیں۔

دبئی سے مینگلور جانے کے لئے350 سے زائد درخواستیں موصول،کن کن کو کریں روانہ ؟ ذمہ داران کے سامنے اہم سوال

چارٹرڈ فلائٹ پر دبئی میں پھنسے بھٹکل اور اطراف کے لوگوں کو مینگلور روانہ کرنے کے تعلق سے سینکڑوں  لوگوں کے رابطہ کرنے پر دبئی میں موجود بھٹکل کے ذمہ داران سوچ میں پڑ گئے ہیں کہ اتنی بڑی تعداد میں لوگ دبئی لاک ڈاون میں پھنسے ہیں تو اُنہیں انڈیا روانہ کرنے کے لئے کس طرح کے ...

کورونا وباء اور لاک ڈاون کے چلتے دبئی میں پھنسے بھٹکل کے عوام کے لئے زبردست خوش خبری؛ 11 جون کو مینگلور کے لئے نکل رہی ہے چارٹرڈ فلائٹ

کورونا وباء کے بعدلاک ڈاون کے چلتے دبئی اور عرب امارات میں پھنسے بھٹکل اور اطراف کے عوام کے لئے ایک زبردست خوش خبری یہ ہے کہ  بھٹکل کے معروف بزنس مین اور نُہیٰ جنرل ٹریڈنگ کمپنی    کے مالک جناب عتیق الرحمن مُنیری نے  عوام کی تکلیفات کو دور کرنے اور اُنہیں اُن کے وطن  واپس ...

اللہ یہ کیسی عید، پروردگار ایسی عید پھر کبھی نہ آئے۔۔۔۔ از:ظفر آغا

اللہ، یہ کیسی عید آئی پروردگار! نہ مسجد میں نماز، نہ بازار میں خریداری، نہ چاند رات کی بے چینی، نہ وہ گلے ملنا اور نہ ہی وہ گلے مل کر عطر سے معطر ہو جانا... کچھ بھی تو نہیں۔ گھروں میں بند، سیوئیاں بھی بے مزہ۔ وہ شام کی دعوتیں، وہ گھر گھر جا کر عید ملنا، سب خواب ہو گیا۔ ارے رمضان بھی ...

کووِڈ کے علاج میں ایک نئی پیش رفت۔ کینسر اسپتال کے ڈاکٹروں نے تلاش کیا ایک نیا طریقہ۔ تجرباتی مرحلے پر ہورہا ہے کام!

سر اور گلے کے کینسر اورروبوٹک سرجری کے ماہر ڈاکٹر وشال راؤ کا کہنا ہے کہ ایچ سی جی کینسر اسپتال میں کووِڈ 19کے علاج کے لئے ڈاکٹروں نے ایک نئے طریقے پر کام کرنا شروع کیا ہے جس میں خون کے اندر موجود سائٹوکینس نامی ہارمون کا استعمال کیا جائے گا۔

کورونا وباء بھٹکل والوں کے لئے بن گئی ایک آفت۔فرقہ پرست نہیں چھوڑرہے ہیں مخصوص فرقے کو بدنام کرنے کا موقع، ہاتھ ٹوٹنے کی وجہ سے بچی کو منگلورو لے جانے پر گودی میڈیا نے مچایا واویلا

بھٹکل کے مسلمانو ں کے لئے بیماری بھی فرقہ وارانہ رنگ و روپ لے کرآتی ہے اورانہیں ہر مرحلے پر نئی ہراسانیوں کا شکار ہونا پڑتا ہے۔کورونا کی وباء ایک طرف مرض کے طور پر مصیبت بن گئی ہے تو کچھ فرقہ پرستوں کی طرف سے اس کو متعصبانہ رنگ دیا جارہا ہے اور یہ دوسری مصیبت بن گئی ہے۔

بھٹکل میں کووِڈ کے تازہ معاملات: کیا جنوبی کینرا اور شمالی کینرا ضلع انتظامیہ کی کوتاہی نے بگاڑا سارا کھیل؟ ۔۔۔۔۔۔ سینئر کرسپانڈنٹ کی خصوصی رپورٹ

بھٹکل میں خلیجی ملک سے کورونا وباء آنے اور پھر ضلع انتظامیہ، پولیس، محکمہ صحت اور عوام کے تعاون سے اس پر تقریباً قابو پالینے کے بعد اچانک جو دوسرا مرحلہ شروع ہوا ہے اور بڑی سرعت کے ساتھ انتہائی سنگین موڑ پر پہنچ گیا ہے اس پر لوگ سوال کررہے ہیں کہ کیا ا س کے لئے ضلع جنوبی کینرا ...