کورونا وائرس: ڈاکٹر اور طبی عملہ کو گھروں سے بے دخل نہ کریں؛ مکان مالکین کو ریاستی حکومت کی وارننگ۔ 15 زمروں کے ملازمین کو پاسس جاری کرنے کا فیصلہ

Source: S.O. News Service | Published on 27th March 2020, 11:44 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،27؍مارچ (ایس او نیوز؍پی ٹی آئی) ریاستی حکومت نے سبھی مکان مالکوں کو وارننگ دی ہے کہ کورونا وائرس کے بڑھتے قہر کی وجہ سے اپنے یہاں کرایہ پر مقیم طبی شعبہ کے افراد کو گھروں سے نہ نکالیں۔

محکمہ صحت و خاندانی بہبود کے ایڈیشنل پرسنپ سکریٹری جاوید اختر نے ڈاکٹروں، پیرامیڈیکل اسٹاف اور طبی عملہ کے دفاعی میں حکم جاری کیا ہے کہ قانونی دفعات کے تحت ایسے مکان مالکوں کے خلاف سخت کارروائی کریں۔’’اختر نے ضلع کے دپٹی کمشران، بنگلورو کے بلدی کمشنر ، پولیس اور ریاست کے سینئر عہدیداروں کو یہ احکام جاری کیے۔

انہوں نے کہا کہ ’’ کرناٹک ریاست کے مختلف حصوں سے ڈاکٹروں، پیرامیڈیکل اسٹاف اور طبی عملہ کی جانب سے مسلسل یہ شکایات موصول ہورہی تھیں کہ ان کے مکان مالک ان پر گھر خالی کرنے کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں۔اختر کے مطابق مکان مالکوں کا ایسا رویہ عوام کی خدمت میں مصروف افراد کے کام میں رکاوٹ بن رہا ہے۔

سینئر افسر شاہ نے اس وائرس کی روک تھام کے لیے وبائی امراض قانون 1897ء اور حیدرآباد متعدی مرض قانون 1950ء کے تحت کرناٹک وباء (کووڈ۔19) قانون 2020 نافذ کردیا ہے۔

ریاست کے عہدیداروں کے پاس یہ اختیار ہے کہ وہ اس وباء سے لڑنے کے لیے کام کررہے لوگوں کو نکالنے والے مکان مالکوں کے خلاف کارروائی کرسکیں۔

اسی طرح بنگلورو پولیس کمشنر بھاسکر راؤ نے کہا کہ پیئنگ گیسٹ اور ہاسٹل مالکان بھی وہاں مقیم طلباء، ملازم پیشہ افراد اور دیگر لوگوں کو اس دوران سہولتوں سے محروم نہیں کرسکتے ہیں۔ بھاسکر راؤ نے ٹوئٹ کیا کہ اگر پیئنگ گیسٹ اور ہاسٹل مالکان اپنے یہاں مقیم افراد کو جانے کے لیے کہتے ہیں تو یہ غیر قانونی ہوگا۔ انہیں کھانا بھی دستیاب کرانا ہوگا ورنہ ان کے خلاف مقدمہ چلے گا۔’’

بنگلورو ایک تعلیم مرکز ہے وہاں پورے ملک سے ہزاروں طلباء پہنچتے ہیں۔ جوکہ وہاں عارضی رہائشوں جیسے کہ نجی ہاسٹلوں اور پیئنگ گیسٹ سہولت استعمال کر کے رہتے ہیں۔’’

مرکزی وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کردہ ہدایات پر عمل کرتے ہوئے کرناٹک پولیس محکمہ لوگوں کی نقل و حرکت کو پابند بنانے پاس سسٹم نافذ کرےگا۔ دو قسم کے پاس جاری کیے جائیں گے۔ ایک افراد کے لیے اور دوسرا گاڑیوں کے لیے۔ یہ پاسس ڈی سی پی لاء اینڈ آرڈر کے دفتر سے جاری ہوں گے اور درخواست فارم کے ادخال پر24 گھنٹے دیستیاب رہیں گے۔ یہ پاسس مندرجہ ذیل زمروں کے ملازمین کو جاری کیے جائیں گے۔ خانگی سیکورٹی گارڈ، پٹرول ، گیس ، ایل پی جی ریٹیل ملازمین، بینکس، اے ٹی ایم، انشورنس کمپنیوں کے ملازمین، غذا سربراہ کرنے والے ایپس کے ڈیلیوری ایجنٹس، آن لائن فارماسیوٹیکل کمپنیوں، ای کامرس پلیٹ فارمس، پرنٹ اینڈ الیکٹرانک میڈیا، راشن، کرانہ، دودھ، گوشت، مچھلی اور مویشیوں کے چارہ کی دکانات، اسپتالوں، کلینکس، ڈسپنسریز، نرسنگ ہومس، لیباریٹڑیز، ایمولینس، ٹیلی کام اور انٹرنیٹ خدمات لازمی خدمات سے وابستہ آئی ٹی کمپنیاں، برقی محکمہ، کیپٹیل اور ڈیٹ مارکٹ خدمات، کولڈ اسٹوریج اور ویرہاؤسنگ خدمات، لازمی اشیاء کی تیاری کے یونٹس، لازمی اشیاء کی منتقلی کرنے والے، ہوٹلیں اور لارجس جہاں سیاح پھنسے ہوئے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

یڈیورپا کا اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ جائزہ اجلاس؛ بعض سرکاری دفاتر کو اندرون ایک ماہ بیلگاوی کے سورونا ودھان سودھا منتقل کرنے وزیر اعلیٰ کی ہدایت

وزیر اعلیٰ بی ایس یڈی یورپا نے حکام کو اندرون ماہ ریاست کے بعض سرکاری دفاتر کی نشاندہی اور ان کی بیلگاوی کے سورونا و دھان سودھا منتقلی کی ہدایت دی جس کا مقصد علاقائی توازن قائم کرنا ہے۔

اُڈپی میں کورونا وائرس کے معاملات کو لے کر ریاستی وزیر اور محکمہ صحت کے اعداد و شمار میں نمایاں فرق؛ کہیں رپورٹ کو چھپایا تو نہیں جارہا ہے ؟

اُڈپی ضلع میں کورونا وائرس کے معاملات کی تعداد کو لے کر ریاستی وزیر برائے محصولات آر اشوک اور محکمہ صحت کی جانب سے جاری اطلاع میں فرق کی وجہ سے اُڈپی ضلع کے عوام تذبذب کا شکار ہوگئے ہیں۔

کوویڈ۔ 19 : کمس اسپتال ہبلی میں ریاست کا پہلا پلازمہ تھیراپی تجربہ کامیاب ؛ بنگلور میں تجربہ ناکام ہونے کے بعد ہبلی ڈاکٹروں کو ملی زبردست کامیابی

ورونا وائرس وبا کی وجہ سے اس وقت پوری دنیا جوجھ رہی ہے۔ اس کے معاملات میں دن بہ دن اضافہ ہی ہوتا جا رہا ہے۔ ہر کوئی چاہتے  یا  نا چاہتے ہوئے بھی اس خطرے کے ساتھ زندگی بسر کرنے پر مجبور ہے۔ کیونکہ پوری دنیا بھر کے ممالک بھی اس کا ٹیکہ دریافت کرنے سے اب تک قاصر رہے ہیں۔

کرناٹک میں کورونا کے 24 گھنٹوں میں 267 نئے معاملات ، داونگیرے میں مریض کی موت سے مرنے والوں کی تعداد 53

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران منگل کی شام 5 بجے تک ریاست میں 267 نئے کو رونا مریض پائے جانے سے ریاست میں کووڈ۔19 سے متاثر مریضوں کی تعداد بڑھ کر 2494 تک پہنچ گئی اور داونگیرے میں مزید ایک مریض کے ریاست میں فوت ہونے سے ریاست میں اس وبائ سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 53 ہوگئی۔