بنگلورو: ملک کا سب سے بڑا کووڈ کیئر سینٹر بند کردیا گیا، دس ہزار بیڈ کا انتظام تھا مگر ڈیڑھ ہزار سے زائد بیڈ استعمال میں نہیں آسکے؛ سرکاری فنڈ کے غلط استعمال کا بھی لگا الزام

Source: S.O. News Service | Published on 17th September 2020, 10:26 PM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

بنگلورو،17؍ستمبر(ایس او نیوز) کورونا مریضوں کیلئے بنگلورو میں قائم کئے گئے ملک کے سب سے بڑے کووڈ کیئر سینٹر کو اب بند کردیا گیا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ اس سینٹر میں دس ہزار بیڈ لگانے کا منصوبہ تھا مگر صرف دیڑھ ہزار بیڈ ہی استعمال میں لائے گئے۔ ذرائع کے مطابق  مریضوں کی کمی کو دیکھتے ہوئے سینٹر کو بند کرنا پڑا۔ اطلاع کے مطابق  27 جولائی 2020 کو شروع کئے گئے اس سینٹر کو 15 ستمبر 2020 کو مکمل طور پر بند کردیا گیا اس مناسبت سےیہ سینٹر  محض 50 دن تک ہی چلایا جاسکا۔

بتایا جارہا ہے کہ  ریاستی حکومت اور بروہت بنگلورو مہانگر پالیکے کی ناکام منصوبہ بندی، سرکاری افسروں کی کوتاہی، خامیوں، سرکاری فنڈز کے غلط استعمال کی جیتی جاگتی مثال کے طور پر اس کووڈ سینٹرکو دیکھا جارہا ہے۔ جون اورجولائی کے مہینوں میں ریاست کرناٹک بالخصوص دارالحکومت بنگلورو میں کورونا کی وبا تیزی کے ساتھ پھیل رہی تھی۔ اس وبا سے متاثر ہونے والے لوگوں کی طبی مدد اور صحت یابی کیلئے ریاستی حکومت اور بی بی ایم پی نے شہر کے ٹمکور روڈ پر موجود وسیع و عریض بنگلورو عالمی نمائش سینٹر کو کووڈ کیئر سینٹر میں تبدیل کرنے کا فیصلہ لیا۔ 10 ہزار بیڈ کے منصوبے کے ساتھ اس سینٹرکو ضروری طبی سہولیات سے آراستہ کیا گیا۔

بڑے پیمانے پر تیاریوں، ڈاکٹروں، میڈیکل اسٹاف کی ایک بڑی ٹیم کے ساتھ اس سینٹرکو شروع کیا گیا۔ ابتداء میں کرپشن کے الزامات بھی اس سینٹر کے منتظمین پرلگنے شروع ہوئے۔ تقریباً ساڑھے سات کروڑ روپئے خرچ کرتے ہوئے اس سینٹر کا آغاز کیا گیا۔ بروہت بنگلورو مہا نگر پالیکے (BBMP ) نے اس مفت کووڈ کیئر سینٹر پر ماہانہ 4 کروڑ 23 لاکھ روپئے خرچ کرنے کا منصوبہ بنایا۔ بہرحال 27 جولائی 2020 کو 6500 بیڈ کے ساتھ یہ کورونا کیئر سینٹر اپنی خدمات انجام دینے لگا۔ ان میں 5000 بیڈ مریضوں کیلئے اور ڈیڑھ ہزار بیڈ یہاں کام کرنے والے طبی اور دیگر عملے کیلئے مختص کئے گئے، لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ یہاں  ڈیڑھ ماہ کے وقفہ میں صرف ڈیڑھ ہزار بیڈ ہی کورونا مریضوں کیلئے استعمال میں لائی گئی۔ باقی بیڈ جوں کے توں سینٹر میں مریضوں کا انتظار کرتی ہوئی پڑی رہیں۔

بی بی ایم پی کے افسروں کے مطابق اس سینٹر پر کل 11 کروڑ 55 لاکھ روپئے خرچ کئے گئے ہیں۔ حکومت کی جانب سے کورونا کے پہلے مرحلے کے مریضوں کو گھروں میں علاج کی اجازت دیئے جانے کے بعد زیادہ تر مریض کووڈ سینٹروں کا رخ نہیں کررہے ہیں۔ اس لئے بنگلورو عالمی نمائش سینٹر میں بھی مریضوں کی تعداد کافی کم ہوئی، لہٰذا غیر ضروری طور پر سرکاری اخراجات کو بچانے کیلئے اس سینٹرکو بند کرنے کا فیصلہ لیا گیا۔اس سینٹر کیلئے خریدے گئے پلنگ، گدے، تکئے، بادلی، چمبو وغیرہ تمام چیزوں کو ریاست بھر میں موجود سرکاری ہاسٹلوں کو روانہ کرنے کا فیصلہ لیا گیا ہے۔  بی بی ایم پی کے سابق اپوزیشن لیڈر عبدالواجد نے کہا کہ یہ سینٹر حکومت اور بی بی ایم پی کی ناکام منصوبہ بندی کی مثال ہے۔

انہوں نے کہا کہ کورونا کے مریضوں کو راحت پہنچانے کے بجائے سرکاری فنڈ میں خرد برد اور بدعنوانی کے منصوبے کے تحت یہ سینٹر قائم کیا گیا۔ اس سینٹر کیلئے پہلے 24 کروڑ روپے کا تخمینہ بنایا گیا تھا لیکن پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر ڈی کے شیوکمار کے اعتراض کے بعد تخمینہ کو کم کیا گیا۔ اس کے باوجود ملک کے سب سے بڑے کووڈ کیئر سینٹر سے عوام کو جو فائدہ پہنچنا چاہئے تھا وہ نہیں پہنچ پایا ہے۔  عبدالواجد نے کہا کہ کورونا کی وبا سے نمٹنے کیلئے  ریاست کی بی جے پی حکومت اور بی جے پی کے زیر اقتدار بروہت بنگلورو مہانگر پالیکے کے کئی فیصلےغلط ثابت ہوئے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

مرسی مشن کی کورونا متاثرین کیلئے خدمات کے 6 ماہ مکمل، ضرورت مندوں کی مدد کے لئے جوش کے ساتھ سلیقہ مندی کے امتزاج کی انوکھی مثال

شہر بنگلورو میں جب سے کورونا وائرس کے واقعات نے سر اٹھانا شروع کیا، اس وقت سے ہی شہر کے نوجوانوں کی ٹیم ضرورت مندوں کی مختلف زاویوں سے ہر ممکن مدد کرنے کے لئے متحرک رہی ہے

مودی حکومت سے ناراض محبوبہ مفتی نے کہا "ہم خاموش بیٹھنے والے نہیں، طاقت ہے تو چین کو نکالو"

 پی ڈی پی صدر و سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے کہا ہے کہ مرکزی حکومت جموں و کشمیر کے لوگوں پر طاقت آمائی کرتی ہے جبکہ چین کا نام لینے سے بھی تھرتھراتی ہے جس نے لداخ میں ہماری زمین ہڑپ لی ہے

مونگیر تشدد: بی جے پی-جے ڈی یو حکومت سے کانگریس نالاں، پی ایم مودی سے مانگا جواب

بہار میں اسمبلی انتخاب کے درمیان مونگیر شہر میں دو دن پہلے پولس فائرنگ میں ایک نوجوان کی موت کے بعد آج ایک بار پھر شہر میں ہنگامہ ہونے پر کانگریس نے نتیش حکومت کے ساتھ ساتھ پی ایم مودی کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

آن لائن جوے، گیمنگ، سٹہ کی ویب سائٹوں اور ایپس پر روک لگائی جائے: جگن موہن ریڈی

اے پی کے وزیراعلی وائی ایس جگن موہن ریڈی نے مرکزی وزیر الکٹرانکس و انفارمیشن ٹیکنالوجی روی شنکر پرساد سے اپیل کی ہے کہ وہ انٹرنیٹ سروس خدمات فراہم کرنے والوں کو ہدایت دیں کہ وہ تمام آن لائن جوے، گیمنگ، سٹہ کی ویب سائٹس اور ایپس کو ریاست میں بلاک کر دیں۔