بدعنوانی کے خلاف آواز اٹھانے والے نظام کی حوصلہ افزائی کریں

Source: S.O. News Service | Published on 19th January 2021, 10:41 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،19؍جنوری(ایس او نیوز؍ایجنسی) نائب صدرجمہوریہ ہند ایم وینکیا نائیڈو نے آج سبھی کارپوریٹ اداروں کو مشورہ دیا ہے کہ وہ بدعنوانی کے خلاف آواز اٹھانے والے نظام کی، خاص طور پر حوصلہ افزائی کریں اور بدعنوانی کے خلاف آواز اٹھانے والوں کے تحفظ کیلئے وافر حفاظتی انتظامات کریں -

بھارت کے کمپنی سکریٹریز کے ادارے میں اپنے سالانہ خطبے میں نائب صدرجمہوریہ نے زور دے کر کہا کہ کارپوریٹ حکمرانی کے سبھی معاملات میں شفافیت اور جواب دہی کو یقینی بنانے کیلئے یہ بہت ضروری ہے کہ شیئر ہولڈرز سمیت سبھی متعلقین فریقوں کے اعتماد میں اضافہ کیاجائے-سرکاری پیسے کی حفاظت کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے وینکیانائیڈونے کہاہے کہ یہ نظام خامیوں سے پاک ہونا چاہئے تاکہ کسی بھی بدعنوانی کی گنجائش نہ رہے- اس بات کو اجاگر کرتے ہوئے کہ کچھ لوگوں کے غلط کاموں سے بھارتی تجارت بدنام ہوتی ہے-

نائب صدرجمہوریہ نے نئے کمپنی سکریٹریز سے زور دے کر کہا کہ وہ رہنمائی کرکے اور سہارا دے کر کارپوریٹ حکمرانی میں اخلاقیات اور جواب دہی کو یقینی بنائے- انہوں نے ان سے کہا ہے کہ اس پیشہ کو ایک مشن کے طور پر سمجھا جائے-یہ امید ظاہر کرتے ہوئے کہ معیشت آئندہ دنوں میں بحال ہوجائے گی- انہوں نے انڈیا ان کارپوریشن سے اصرار کیا کہ وہ اسے ایک بڑی معیشت بنانے میں قائدانہ کردار ادا کریں -یہ رائے ظاہر کرتے ہوئے کہ بھارت نے کورونا وائرس کے خلاف لڑائی میں اور معیشت کی بحالی کے اقدامات میں ترقی یافتہ ملکوں سمیت، دیگر بہت سے ملکوں کی بہ نسبت بہتر کارکردگی انجام دی ہے،انہوں نے بین الاقوامی مالی فنڈ کے سربراہ محترمہ کرسٹا لینا جیورجیوا کی حالیہ رائے زنی کا ذکر کیا جنہوں نے کہا تھا کہ بھارت نے عالمی وباء سے نمٹنے اور اس کے اقتصادی نتائج سے نمٹنے کیلئے بہت ہی فیصلہ کن اقدامات کیے ہیں -

معیشت کو دوبارہ ایک بڑی معیشت بنانے میں سبھی متعلقہ فریقوں کی مربوط کوششوں پر زور دیتے ہوئے وینکیا نائیڈونے کہاہے کہ آئی سی ایس آئی جیسے ادارے معیشت کو واپس معمول پر لانے میں اہم رول ادا کریں گے جس میں اچھی کارپوریٹ حکمرانی پر توجہ دی جائے گی- یہ اظہار خیال کرتے ہوئے کہ کارپوریٹ حکمرانی کے مضبوط حصول، کسی بھی کمپنی کو آگے لے جانے کیلئے بے حد ضروری ہے، انہوں نے کہا کہ شفافیت، دیانت داری اور ایمانداری، ہر وقت برقرار رہنی چاہیے اوریہ بزنس سے متعلق ہر سرگرمی میں ظاہر ہونی چاہیے-بھارت کے شاندار ماضی کے بارے میں طلباء کو بتاتے ہوئے نائب صدرجمہوریہ نے کہا کہ ملک میں صلاحیت کی کمی نہیں ہے-

وقت کی ضرورت یہ ہے کہ اس صلاحیت کو شناخت کیاجائے اور فروغ دیا جائے- انہوں نے کہاکہ بھارت کے پاس، جو130 کروڑ سے زیادہ آبادی والی دنیا کی سب سے بڑی پارلیمانی جمہوریت ہے، ایک خود کفیل ملک بننے کی صلاحیت موجود ہے-یہ اظہار خیال کرتے ہوئے کہ کمپنی سکریٹریز جیسے پیشہ ور افراد معیشت کی بحالی میں کلیدی کردار ادا کریں گے- کیونکہ بھارت مختلف شعبوں میں خود کفیل بننے کے اپنے راستے پر گامزن ہے، نائب صدرجمہوریہ نے ان سے اصرار کیا کہ وہ اعلیٰ اخلاقی قدروں اور اخلاقیات کو برقرار رکھنے کے تئیں ہمیشہ پر عزم رہیں -

انہوں نے یہ بھی کہا کہ آپ کو صحیح ہونے کے راستے سے کبھی علاحدہ نہیں ہونا ہے- کمپنی سکریٹریز کو کارپوریٹ کے باضمیر افراد قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان کیلئے ضروری ہے کہ وہ صحیح راستے گامزن رہیں اور مینجمنٹ کی طرف سے کسی دباؤ کے آگے نہ جھکیں -وینکیا نائیڈونے کہاہے کہ آئی سی ایس آئی جیسے پیشہ ور اداروں کو لازمی طور پر یقینی بنانا چاہیے کہ کارپوریٹ کمپنیاں، نہ صرف پیشہ ورانہ صلاحیت کی حامل ہیں بلکہ قانون کی بھی پابند ہیں -

ایک نظر اس پر بھی

مہاراشٹر: کورونا کے سبب ہنگولی میں 7 روزہ کرفیو نافذ

 مہاراشٹر اور ہنگولی ضلع میں عالمی وبا کورونا وائرس (کووڈ۔19) کے بڑھتے ہوئے کیسزکے پیش نظر ضلع مجسٹریٹ اور ڈسٹرکٹ ڈیزاسٹر منیجمنٹ کے چیرمین روپیش جئے ونشی نے سات روزہ کرفیو نافذ کردیا ہے، جو پیر کی صبح سات بجے سے نافذ ہو گیا۔