بھیونڈی: قانون کی خلاف ورزی کرکے مسجد میں نماز پڑھنے پر مسجد ٹرسٹیوں کے خلاف مقدمہ درج

Source: S.O. News Service | Published on 24th March 2020, 11:16 AM | ملکی خبریں |

بھیونڈی،24؍مارچ (ایس او نیوز؍ایجنسی)  حکومت کی طرف سے اعلان کردہ لاک ڈاؤن قوانین کی خلاف ورزی کرنے پر کلیان روڈ کے مسجد ٹرسٹیوں پر مقدمہ درج کیا گیا ہے ۔ دوپہر کے دوران مسجد کے اندر نماز پڑھنے کے اطلاع پر موقع پر پہنچی بھیونڈی شہر پولیس نے لوگوں کو باہر نکالا اور جمع بندی قانون کی خلاف ورزی کرنے پر مسجد کے ٹرسٹیوں کے خلاف فوجداری کا مقدمہ درج کیا ہے ۔

پولیس کی اس کارروائی سے شہر میں مسجد کے ٹرسٹیوں میں خوف و ہراس پھیل گیا ہے ۔ بھیونڈی پولیس ڈپٹی کمشنر راج کمار شندے نے مذہبی مقامات پر ہجوم نہ کئے جانے کی اپیل کی ہے ۔ ورنہ قوانین کے تحت سخت کارروائی کئے جانے کا انتباہ بھی دیا ہے ۔

پولیس سے موصولہ اطلاعات کے مطابق بھیونڈی – کلیان روڈ پر واقع آس بی بی مسجد میں دوپہر پہر کے وقت 50-60 افراد مسجد کے اندر نماز پڑھ رہے تھے ۔ مسجد انتظامیہ کی طرف سے لاک ڈاؤن قوانین کی خلاف ورزی کی اطلاع ملتے ہی بھیونڈی شہر پولیس کے پولیس اہلکار فوری طور پر موقع پر پہنچ گئے اور مسجد انتظامیہ سے بات کرنے کے بعد لوگوں کو باہر نکالا ۔ پولیس نے متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ شہر میں جمع بندی قانون لاگو ہے جس کے تحت 5 لوگوں سے زیادہ کہی بھی جمع ہونا ممنوع ہے ۔ پولیس کے مطابق اقلیتی برادری کو نماز کے متعلق مساجد سے نماز کے اوقات میں صرف آذان دینے کی اجازت دی گئی ہے ۔ باوجود جمع بندی ہونے پر قوانین کے تحت قانونی کارروائی کی جائے گی ۔ بھیونڈی شہر پولیس نے آس بی بی مسجد ٹرسٹ کے صدر غلام احمد خان ، خازن مرگون حسن انصاری ، ممبران محمد حبیب انصاری ، حضرت علی انصاری وغیرہ پر جمع بندی قوانین کی خلاف ورزی کرنے کا مقدمہ درج کیا ہے ۔ پولیس ڈپٹی کمشنر راج کمار شندے نے شہریوں سے اپیل کی ہے کورونا وائرس کے اثرات کو روکنے کے لئے حکومت کی طرف سے لاک ڈاؤن کیا گیا ہے ۔ حکومت کے رہنمائی قوانین و ضوابط پر عمل کریں ورنہ سخت کارروائی کا سامنا کرنے کے لئے تیار رہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

کشمیر کی پہلی وائرس متاثرہ خاتون روبہ صحت ہوکر ہسپتال سے رخصت

وادی کشمیر میں کورونا وائرس کے مثبت کیسز میں اضافے کے بیچ سری نگر کے خانیار علاقے سے تعلق رکھنے والی وادی کی پہلی وائرس متاثرہ خاتون مکمل طور پر صحت یاب ہوئی ہے اور اس کو شیر کشمیر انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز صورہ سے ڈسچارج بھی کیا گیا ہے۔

تبلیغی جماعت کے خلاف کیس واپس لینے کا مطالبہ تبلیغی مرکز سے متعلق پیدا شدہ حالات پر سرکردہ مسلم دانشوروں کا بیان

 تبلیغی مرکز سے متعلق پیداشدہ صورتحال پر سرکردہ دانشوروں اور صحافیوں نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے یہاں جاری ایک بیان میں کہا ہے کہ کورونا وائرس کے خلاف جاری جنگ میں ہم حکومت کو اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلاتے ہوئے اس سے یہ اپیل بھی کرنا چاہتے ہیں