’ہم کورونا کو شکست دیں گے، اچھے دن جلد واپس آئیں گے‘: ملکہ الزبتھ

Source: S.O. News Service | Published on 6th April 2020, 3:43 PM | عالمی خبریں |

لندن،6؍اپریل (ایس او نیوز؍یو این آئی) برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن کے اسپتال میں داخل ہونے کے درمیان ملکہ الزبتھ -II نے کورونا وائرس کے حوالہ سے ملک سے خطاب کرتے ہوئے امید ظاہر کی ہے کہ یہ مشکل دور جلد ہی ختم ہو جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ برطانیہ کورونا وائرس سے جنگ جیت جائے گا اور اچھے دن واپس جلد لوٹیں گے۔ 93 سالہ ملکہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ ’’مجھے معلوم ہے کہ میں اس مشکل دور میں آپ سب سے بات کر رہی ہوں‘‘۔

الزبتھ نے مزید کہا کہ "میں امید کرتی ہوں کہ آنے والے برسوں میں ہم اس بات پر فخر کریں گے کہ ہم نے کس طرح کورونا وائرس کو ساتھ مل کر شکست دی۔ اس کے بعد جو نسل آئے گی وہ ہمارے بارے میں کہے گی کہ ہم کتنے مضبوط تھے۔ نظم و ضبط کی خصوصیات سے مالا مال، لالچ و مفادات سے دور اور یکجہتی اب بھی اس ملک کی خصوصیات ہیں‘‘۔

ملکہ نے یہ بھی کہا کہ ’’ہم جلد ہی اپنے دوستوں اور خاندان کے ساتھ ہوں گے اور ہم ایک بار پھر جلد ملیں گے۔ الگ تھلگ رہنا کئی بار کافی مشکل ہوتا ہے‘‘۔ قابل غور ہے کہ برطانیہ کورونا وائرس سے بہت زیادہ متاثر ہے اور یہاں کے وزیر اعظم جانسن بھی اس سے متاثر ہو چکے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

ایران کے ساتھ مذاکرات میں خلیجی ممالک اور اسرائیل کو شامل کیا جائے گا: بلنکن

امریکا کے نو منتخب صدر جوبائیڈن کے نامزد وزیرخارجہ انتھونی بلنکن نے کہا کہ بائیڈن انتظامیہ ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکے گی۔ان کا کہنا ہے کہ ایران کے ساتھ کسی بھی نوعیت کے جوہری مذاکرات میں خلیجی ریاستوں اور اسرائیل کو شامل کیا جائے گا۔

حکومت مخالف ایرانی مذہبی عالم کا اسرائیل سے مصالحت کا مشورہ

ایران کے ایک سرکردہ مذہبی رہ نما اور حکومت پر سخت تنقید میں شہرت رکھنے والے آیت اللہ عبدالحمید معصومی تہرانی نے کہا ہے کہ اسرائیل کے ساتھ دشمنی رکھنا عقل اور منطق کے خلاف ہے۔ انہوں نے ایرانی حکومت سے زور دیا ہے کہ وہ اسرائیل کے ساتھ صلح کرے جیسا کہ بعض عرب ممالک نے کی ہے۔

جوہری معاہدے کے حوالے سے بائیڈن کی ٹیم اور ایران کے درمیان خفیہ بات چیت

منتخب امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کے ذمے داران نے جوہری معاہدے میں واپسی کے حوالے سے ایران کے ساتھ خاموشی سے بات چیت کا آغاز کر دیا ہے۔ تہران اور عالمی طاقتوں کے درمیان یہ سمجھوتا جولائی 2015ء میں طے پایا تھا۔ اسرائیلی نیوز نیٹ ورک "چینل 12" اور اسرائیلی اخبار "د ٹائمز آف ...