کرونا وائرس برطانوی معیشت کا پانچواں حصہ چٹ کر گیا

Source: S.O. News Service | Published on 13th August 2020, 8:46 PM | عالمی خبریں |

لندن، 13/اگست(آئی این ایس انڈیا) رواں سال کی دوسری سہ ماہی کے دوران برطانوی معیشت میں ریکارڈ گراوٹ نوٹ کی گئی ہے۔ کورونا وائرس کی وجہ سے کاروبار کو شدید نقصان ہوا ہے، جس کی وجہ سے ملک کو ریکارڈ کساد بازاری کا سامنا ہے۔

برطانیہ کے قومی شماریاتی ادارے کی طرف سے بدھ کو جاری کیے گئے تازہ اعدادوشمار کے مطابق اپریل تا جون ملکی قومی مجموعی پیداوار میں 20.4 فیصد کی گرواٹ نوٹ کی گئی ہے۔ سال کی دوسری سہ ماہی میں ہونے والا یہ اقتصادی نقصان انتہائی شدید ہے۔ گیارہ برسوں بعد برطانیہ پہلی مرتبہ سرکاری طور پر کساد بازاری کا شکار ہوا ہے۔

کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے برطانیہ میں کاروبار بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ حکومتی رپورٹ کے مطابق کورونا کی عالمی وبا کی وجہ سے ہر شعبہ متاثر ہوا ہے، جن میں چھوٹے کاروباری حضرات سے لے کر بڑے بڑے بزنس بھی شامل ہیں۔رواں سال کی پہلی سہ ماہی میں بھی برطانیہ کی معیشت متاثر ہوئی تھی۔

ان اعدادوشمار کے جاری ہونے کے بعد برطانوی وزیر مالیات رشی سوناک نے کہا کہ 'ڈیٹا تصدیق کرتا ہے کہ مشکل وقت آن پہنچا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے برطانیہ میں لاکھوں افراد بے روزگار ہوئے ہیں جبکہ آنے والے دنوں میں ایسے افراد کی تعداد میں مزید اضافے کا خدشہ ہے۔ حکومتی اعدادوشمار کے مطابق مارچ سے اب تک برٹش کمپنیوں نے اپنے سات لاکھ تیس ہزار سے زائد ملازمین کو پیرول سے فارغ کر دیا ہے۔

یورپ میں برطانیہ ایسا ملک ہے، جہاں کورونا وائرس کی وجہ سے سب سے زیادہ ہلاکتیں ہوئیں ہیں۔ دیگر یورپی ممالک کے مقابلے میں کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے برطانوی معیشت سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہے کیونکہ برطانیہ کی اقتصادیات سروس سیکٹر پر زیادہ انحصار کرتی ہے۔

دریں اثنا بینک آف انگلینڈ نے اقتصادیات کی ریکوری کی خاطر سینکڑوں بلین پاؤنڈز کا کیش مارکیٹ میں ڈالنے کا عمل شروع کر دیا ہے جبکہ اپنے شرح سود کا ریکارڈ سطح پر کم کرتے ہوئے 0.1 فیصد کر دیا ہے۔

حکومتی اعدادوشمار کے مطابق مارچ سے اب تک برٹش کمپنیوں نے اپنے سات لاکھ تیس ہزار سے زائد ملازمین کو پیرول سے فارغ کر دیا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق سال کے آخر تک ملک میں بے روزگاری کی شرح 7.5 فیصد تک پہنچ سکتی ہے۔ اس وقت یہ شرح 3.9 فیصد ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

لیبیا : فائز السراج اکتوبر کے اختتام تک اقتدار سے دست بردار ہونے کے لیے تیار

لیبیا میں وفاق حکومت کی صدارتی کونسل کے سربراہ فائز السراج نے اعلان کیا ہے کہ وہ آئندہ ماہ اکتوبر کے اختتام تک اقتدار سے دست بردار ہونے اور اپنی ذمے داریاں ایگزیکٹو اتھارٹی کے حوالے کرنے کی خواہش رکھتے ہیں۔ ...