مینگلور: ساحلی اضلاع دکشن کنڑا اور اُڈپی میں کورونا پر قابو پانے میں انتظامیہ اب تک ناکام؛ مینگلور میں آج سات لوگوں کی موت، 208 نئے معاملات

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 30th July 2020, 12:56 AM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

مینگلور 29 جولائی (ایس او نیوز) جس طرح ریاست کرناٹک میں کورونا وباء   قابو سے  باہر ہوتے جارہی ہے، ریاست کے بعض اضلاع میں بھی کورونا قابو میں آتی  نظر نہیں آرہی ہے۔  ایک طرف  بنگلور میں سب سے زیادہ  دو ہزار سے زائد معاملات ہر روز درج کئے جارہے ہیں، اسی طرح ساحلی اضلاع میں بھی کورونا پر قابو پانے میں انتظامیہ ناکام ثابت ہوتی نظر آرہی ہے جہاں ہر روز سو اوردو سو معاملات درج کئے جارہے ہیں۔

آج بدھ کو مینگلور میں کوویڈ معاملے میں  پھر سات لوگوں نے دم توڑا جس کے ساتھ ہی  یہاں کورونا سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 142 ہوگئی ہے جبکہ آج ایک ہی دن کورونا کے 208 معاملے درج کئے گئے ہیں۔

مینگلور میں آج جن لوگوں نے کورونا  اثرات کے ساتھ دیگر مرض میں مبتلا ہوکر انتقال کئے ہیں، اُن میں  پڈوبدری کے 52 سالہ شخص، بنٹوال کے 62 سالہ شخص، دھارواڑ کے 66 سالہ شخص، کاروار کے 66 سالہ شخص اور  مینگلور سے تعلق رکھنے والے تین لوگ 39 سالہ، 69 سالہ اور 73 سالہ شخص شامل ہیں۔

مینگلور میں تشویش کی بات یہ ہے کہ یہاں آج جو 208 معاملے سامنے آئے ہیں، اُس میں 58 لوگوں  کے بارے میں حکام یہ پتہ لگانے میں ناکام ہیں کہ کن لوگوں کے رابطے میں آنے سے ان کی رپورٹ پوزیٹیو آئی ہے۔ البتہ اس درمیان راحت کی خبر یہ ہے کہ آج ایک ہی دن 118 لوگ صحت یاب ہوکر وینلاک اور دیگر  اسپتالوں  سے ڈسچارج بھی ہوئے ہیں۔

ایک اور ساحلی ضلع    اُڈپی کی بات کریں تو آج اُڈپی میں ایک ہی دن 173 لوگوں کی رپورٹ کورونا پوزیٹیو آئی ہے،جبکہ تین لوگوں نے دم توڑا ہے۔ آج پوزیٹیو آنے والوں میں  95 لوگ اُڈپی تعلقہ کے ہیں، کنداپور سے 37 اور کارکلا سے 40 لوگ بھی شامل ہیں۔ محکمہ صحت کی طرف سے دی گئی اطلاع کے مطابق ضلع اُڈپی میں اب تک  کورونا کے معاملات کی تعداد بڑھ کر  3895 ہوگئی ہے جس میں ایکٹیو کیسس 1547 ہیں۔ اُڈپی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفسر ڈاکٹر سدھیر چندرا سوڈ کے مطابق  ضلع بھر میں 737 کورونا متاثرین کو ہوم ایسولیشن میں (گھروں میں ہی الگ تھلگ) رکھا گیا ہے۔ یاد رہے کہ ضلع اُڈپی میں اب کوویڈ  وائرس کے ساتھ دیگر مرض میں مبتلا ہوکر اب تک 28 لوگ  اپنی جانیں گنواچکے ہیں۔اُڈپی میں بھی راحت کی بات یہ  ہے کہ  آج ایک ہی دن اُڈپی سے 84 لوگ صحت یاب ہوکر اسپتال سے ڈسچارج بھی  ہوئے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھاری برسات کے وقت منگلوروایئر پورٹ پر طیاروں کو اترنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ ایئر پورٹ ڈائریکٹر راؤ کا بیان

منگلورو انٹر نیشنل ایئر پورٹ کے دائریکٹر وی وی راؤ نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھاری برسات اور خراب موسم کی وجہ سے چیزیں صاف دکھائی نہ دینے کی صورت میں ایئر پورٹ پر طیاروں کو لینڈنگ کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

کرناٹک میں تیز ہوا اور موسلا دھار بارش کا سلسلہ جاری

تیز ہوا کے ساتھ موسلا دھار بارش کا سلسلہ شمالی کرناٹک کے دوردراز اور ساحلی علاقے نیز ملناڈ خطّے میں جاری ہے۔ کچھ مقامات پر کاویری، Thungabhadra اور کرشنا ندی میں طغیانی آگئی ہے۔ بارش کے سبب Talacauvery میں مٹّی کے تودے گرے ہیں۔

کورونا متاثر مریض کی لاش کا کیا جاسکتا ہے آخری دیدار، کرناٹک حکومت نے جاری کی نئی گائیڈلائنس

کرناٹک میں کورونا کی لاشوں کے متعلق نئی گائیڈ لائنس جاری کی گئی ہیں ۔ محمکہ صحت کی جانب سے جاری کی گئی گائیڈ لائنس کے مطابق کورونا وائرس سے مرنے والوں کی لاش اب ان کے رشتہ داروں کے حوالے کی جاسکتی ہے ۔

کووڈ۔19 کی نعشوں سے متعلق ترمیم شدہ رہنما خطوط جاری

کورونا وائرس کے بڑھتے کیسس کے درمیان کرناٹک حکومت نے کووڈ۔19 مریضوں کی نعشوں کے ضمن میں ترمیم رہنما خطوط جاری کیے ہیں جن میں اس وقت تک پوسٹ مارٹم سے بچنے پر زور دیا گیا جب تک کسی خاص وجہ سے ایسا کرنا ضروری نہ ہو۔

بھاری برسات کے وقت منگلوروایئر پورٹ پر طیاروں کو اترنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ ایئر پورٹ ڈائریکٹر راؤ کا بیان

منگلورو انٹر نیشنل ایئر پورٹ کے دائریکٹر وی وی راؤ نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھاری برسات اور خراب موسم کی وجہ سے چیزیں صاف دکھائی نہ دینے کی صورت میں ایئر پورٹ پر طیاروں کو لینڈنگ کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

کیرالہ میں پیش آیا چٹان کھسکنے کا خطرناک حادثہ۔ 15ہلاک اور60سے زائدافراد ہوگئے لاپتہ۔ ملبے میں دب گئیں 30جیپ گاڑیاں 

کیرالہ کے مشہور تفریحی مقام ’مونار‘ سے قریب ’ایڈوکی‘ میں چٹان کھسکنے کا ایک خطرناک حادثہ پیش آیا جس میں تاحال 15افراد ہلاک ہونے اور 60سے زیادہ لوگ لاپتہ ہونے کے علاوہ 30جیپ گاڑیاں چٹان کے ملبے میں دب کر رہ جانے کی خبر ہے۔