نوٹ بندی کے 3 سال: 8 نومبر کو کانگریس کی ہلہ بول ریلی

Source: S.O. News Service | Published on 7th November 2019, 11:10 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،7؍نومبر (ایس او نیوز؍ یو این آئی)  دہلی کانگریس اقتصادی بحران، بڑھتی بے روزگاری او ر بدحالی کے لئے نوٹوں کی منسوخی کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے اس کے تین برس مکمل ہونے پر آٹھ نومبر کو نریندر مودی حکومت کے خلاف ہلہ بول ریلی منعقد کرے گی۔

دہلی کانگریس کے صدر سبھاش چوپڑا کی قیادت میں چاندنی چوک پارلیمانی حلقہ کے 12 ٹوٹی علاقہ میں منعقد کی جانے والی اس ریلی کے سلسلہ میں بدھ کو چیف ترجمان مکیش شرما نے بتایا کہ پارٹی نے مودی حکومت کو پرزور طریقہ سے گھیرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ شرما نے بتایا کہ اس موقع پر تمام اضلاع اور اہم بازاروں میں کانگریس کارکن ریلیاں کریں گے۔ ان ریلیوں سے چوپڑا کے علاوہ پارٹی کے دیگر لیڈر بھی خطاب کریں گے۔ چاندنی چوک کی ریلی میں سابق ریاستی صدر جے پرکاش اگروال بھی اپنے خیالات کا اظہار کریں گے۔

چوپڑا نے کہا کہ مرکز کی مودی حکومت تمام محاذ پر ناکام رہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ملک میں شدید اقتصادی مندی ہے اور ہر ایک چوتھا شہری قرض کے بوبھ میں دبا ہوا ہے۔ مرکز ی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اس کی پالیساں سرمایہ داروں اور امیروں کے مفادات کی تکمیل کے لئے بنائی جارہی ہے۔ علاقائی مجموعی اقتصادی معاہدہ پر کانگریس کے شدید دباو کی وجہ سے مودی حکومت نے دستخط نہیں کئے۔

دہلی میں پڑھے لکھے نوجوانوں کا ذکر کرتے ہوئے ریاستی صدر نے کہاکہ بڑھتی بے روزگاری مرکز اور دہلی کی اروند کیجریوال حکومت کی غلط پالیسیوں کا نتیجہ ہے۔ دہلی میں اساتذہ کے ہزاروں عہدے خالی ہیں جنہیں بھرا نہیں جارہا ہے۔ مزدوروں کی چھٹنی کی جارہی ہے تو دوسری طرف دہلی حکومت کم از کم اجرت بڑھانے کا ڈرامہ کررہی ہے۔

شرما نے کہاکہ ریاستی کانگریس نئے صدر کی سربراہی میں بی جے پی اور عام آدمی پارٹی کے خلاف فیصلہ کن لڑائی لڑرہی ہے۔ انہوں نے دہلی کی عوام اور کانگریس کارکنوں سے ہلہ بول ریلیوں میں بڑ ی تعداد میں شامل ہونے کی اپیل کی۔

ایک نظر اس پر بھی

مودی-شاہ کی قیادت کی وجہ سے ایودھیا پر ایسا فیصلہ آیا، یوگا گرو بابا رام دیو نے نوے فیصد مسلمانوں کے آباء واجداد کو ہندو بتایا

 9 نومبر کو ایودھیا معاملے میں فیصلہ آنے کے بعدجہاں پہلے ہرطرف’’ امن اورکسی کی جیت نہیں ‘‘کے دعوے اوربیانات دیے جارہے تھے،اب حسب ِ توقع اشتعال انگیزبیانات آنے شروع ہوگئے ہیں۔جس سے سوال آتاہے کہ کیااپنے لیڈروں کوزبان قابورکھنے کی نصیحت بھی جملہ تونہیں تھی؟

لکھنؤ میں مسلم پرسنل لاء بورڈ کے عاملہ کی میٹنگ، بابری مسجد معاملہ کے فریق اقبال انصاری ایکشن کمیٹی کی میٹنگ میں شریک نہیں ہوئے

 آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے عاملہ کی میٹنگ اتوار 17؍ نومبر کو دارالعلوم ندوۃ العلماء میں منعقد ہوگی، اس میٹنگ میں ملک بھر سے بورڈ کے ایکٹیو اراکین شامل ہونے کےلیے وہاں پہنچ چکے ہیں صبح ساڑھے گیارہ بجے سے میٹنگ شروع ہوگی۔

کشمیر: خراب موسمی حالات، جوتوں کی قیمتیں آسمان پر

 وادی کشمیر میں وقت سے پہلے ہی موسم کی بے رخی نے جہاں اہلیان وادی کو درپیش مصائب ومسائل کو دو بھر کردیا وہیں لوگوں کا کہنا ہے کہ جوتے فروشوں نے اس کا بھر پور فائدہ اٹھانے میں کوئی کسر باقی نہیں چھوڑی۔

کشمیر میں غیر یقینی صورتحال کا 104 واں دن، ہنوز غیر اعلانیہ ہڑتالوں کا سلسلہ جاری

وادی کشمیر میں ہفتہ کے روز لگاتار 104 ویں دن بھی غیر یقینی صورتحال کے بیچ معمولات زندگی پٹری پر آتے ہوئے نظر آئے تاہم بازار صبح اور شام کے وقت ہی کھلے رہتے ہیں اور سڑکوں پر اکا دکا سومو اور منی گاڑیاں چلتی رہیں لیکن نجی ٹرانسپورٹ کی بھر پور نقل وحمل سے کئی مقامات پر ٹریفک جام ...