مونگیر تشدد: بی جے پی-جے ڈی یو حکومت سے کانگریس نالاں، پی ایم مودی سے مانگا جواب

Source: S.O. News Service | Published on 29th October 2020, 11:27 PM | ملکی خبریں |

پٹنہ،29؍اکتوبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) بہار میں اسمبلی انتخاب کے درمیان مونگیر شہر میں دو دن پہلے پولس فائرنگ میں ایک نوجوان کی موت کے بعد آج ایک بار پھر شہر میں ہنگامہ ہونے پر کانگریس نے نتیش حکومت کے ساتھ ساتھ پی ایم مودی کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ کانگریس ترجمان رندیپ سنگھ سرجے والا نے کہا کہ "مونگیر کے واقعہ میں یہ واضح ہے کہ نتیش کمار اور سشیل مودی حکومت کے اشارے پر گولی باری واقعہ پیش آیا تھا۔ لیکن اب واقعہ کے 72 گھنٹے بعد مونگیر ایک بار پھر جل رہا ہے۔ مونگیر کے واقعہ پر کیا اب پی ایم اس جانب دھیان دیں گے؟"

اس کے ساتھ ہی رندیپ سرجے والا نے پی ایم مودی پر پانچ سوال داغتے ہوئے ان کے جواب بھی مانگے۔ سرجے والا نے پوچھا کہ مونگیر میں بے قصوروں پر فائرنگ کے لیے کون ذمہ دار ہے؟ لاٹھی چارج کے لیے کون ذمہ دار ہے؟ فائرنگ میں نوجوان کے قتل کے لیے کون ذمہ دار ہے؟ ڈی ایم اور ایس پی کو بچانے کے لیے کون ذمہ دار ہے؟ مونگیر میں جنگل راج کے لیے کون ذمہ دار ہے؟

رندیپ سرجے والا نے مزید کہا کہ مونگیر کے واقعہ کے ذمہ دار لوگوں کو جب تک سزا نہیں مل جاتی ہے، تب تک متاثرین کو راحت نہیں ملے گی۔ سرجے والا نے کہا کہ ریاست میں بھی این ڈی اے کی حکومت ہے اور مرکز میں بھی۔ مونگیر کے ایس پی اور ڈی ایم آپ کی حکومت کے ہیں، تو پھر وہ کیسے سازش کا الزام لگا سکتے ہیں؟

کانگریس لیڈر نے انتخابی کمیشن کے ذریعہ ایس پی-ڈی ایم کے تبادلے پر کہا کہ بہار میں اس وقت انتخابی کمیشن صرف الیکشن مینجمنٹ کے لیے ذمہ دار ہے۔ اب بھی نتیش کمار کارگزار وزیر اعلیٰ اور سشیل مودی کارگزار نائب وزیر اعلیٰ کے طور پر ہیں اور نظام قانون کی ذمہ داری انہی کی ہے۔ سرجے والا نے کہا کہ انتخاب کے دوران ایس پی اور ضلع مجسٹریٹ کی منتقلی صرف خانہ پری ہے۔

واضح رہے کہ بہار اسمبلی انتخاب کے درمیان گزشتہ پیر کو مونگیر میں مورتی وِسرجن کے دوران گولی واقعہ میں ایک نوجوان کی موت ہو گئی تھی۔ اس واقعہ کو لے کر آج پھر شہر میں ہنگامہ ہوا۔ ناراض لوگوں نے جمعرات کو شہر میں خوب ہنگامہ کیا اور پہلے پولس سپرنٹنڈنٹ دفتر میں توڑ پھوڑ کی اور پھر اس کے بعد بے قابو بھیڑ نے پورب سرائے تھانہ میں آگ لگا دی۔ اس درمیان انتخابی کمیشن نے مونگیر کے ضلع مجسٹریٹ اور پولس سپرنٹنڈنٹ کو ہٹانے کا حکم دیتے ہوئے پورے معاملے کی جانچ مگدھ ڈویژن کے کمشنر کو دے دی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

دہلی میں کورونا: چار دنوں میں وصول کیا گیا 1.5 کروڑ روپے کا جرمانہ

ہندوستان کی راجدھانی دہلی میں کورونا انفیکشن کا اثر لگاتار بڑھ رہا ہے، اس کے باوجود لوگوں کی لاپروائی کم ہونے کا نام نہیں لے رہی ہے۔ کورونا پر قابو پانے کے لیے لوگوں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ سوشل ڈسٹنسنگ پر عمل کریں اور ماسک کا استعمال کریں، لیکن کئی مقامات پر لوگوں کو بغیر ماسک ...

ہاتھرس معاملہ: ضلع مجسٹریٹ کو اب تک نہ ہٹائے جانے سے الٰہ آباد ہائی کورٹ ناراض

لکھنؤ: اترپردیش کے ضلع ہاتھرس میں دلت متاثرہ کی اجتماعی عصمت دری کے بعد قتل کے معاملے میں الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنؤ بنچ میں سماعت ہوئی۔اس دوران پورے معاملے کی جانچ کررہی سی بی آئی ٹیم نے جانچ کی پیش رفت رپورٹ عدالت کے سامنے پیش کیا۔ معاملے کی اگلی سماعت 16 دسمبر کو ہوگی۔ ...

مولانا ڈاکٹر کلب صادق صاحب کی رحلت ملی اور قومی سانحہ ہے آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کا اظہار تعزیت

 آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے نائب صدر، ملک کے ممتاز عالم دین و ماہر تعلیم اور عمدہ ترجمان مولانا ڈاکٹر کلب صادق صاحب طویل علالت کے بعد گزشتہ شب انتقال فرما گئے، ان کی رحلت سے ملک ایک بڑی قابل قدر شخصیت،دانشور،اور ممتاز رہنما سے محروم ہوگیا، وہ شریف النفس، باکردار، اور علم و ...

بابری مسجد کیس سے وابستہ سپریم کورٹ کے سینئر وکیل شکیل احمد سید کا انتقال

پریم کورٹ میں بابری مسجد معاملے کے اہم وکیل شکیل احمد سید کا انتقال ہو گیا۔ ان کا انتقال ملک و ملت کیلئے ایک ایسا خسارہ ہے جس کی تلافی آسان نہیں ہے۔ انتقال کے وقت ان کی عمر 67؍ سال تھی۔ ان کے پسماندگان میں اہلیہ اور چار بیٹےہیں۔ تدفین  بدھ کو  دوپہر میں 12؍ بجے ،دہلی گیٹ قبرستان ...

پٹرول- ڈیزل پھر مہنگا؛ پٹرول کی قیمتوں میں گیارہ پیسے اور ڈیزل میں 22 پیسے فی لیٹر اضافہ

پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں  اضافہ رُکنے کا نام نہیں لے رہا ہے،  جمعرات سے ملک کے چار بڑے میٹروں شہروں میں پٹرول کی قیمتوں میں 11 پیسے اور ڈیزل کی قیمتوں میں 20 سے 22 پیسے فی لیٹر اضافہ کیا گیا ہے۔