بیلگام میں سیلاب راحت کاری میں ناکام مرکزی وریاستی حکومتوں کے خلاف کانگریس کا زبردست احتجاج

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 24th September 2019, 7:36 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بیلگام:24؍ستمبر(ایس اؤ نیوز)سیلاب سےمتاثرہ عوام کے مسائل کی طرف توجہ نہ دیتے ہوئے ان کے حل کی ذرہ برابر کوشش نہ کئے جانےپر کانگریس پارٹی  کے سیکڑوں کارکنان و لیڈران نے سنگولی رائینا سرکل سے کتوررانی چنما سرکل تک احتجاجی ریلی کا اہتمام کرتے ہوئے مرکزی و ریاستی حکومتوں کے خلاف احتجاج کے ذریعے اپنی قوت کا مظاہرہ کیا۔

کانگریس سی ایل پی لیڈر ، سابق وزیرا علیٰ سدرامیا نے احتجاجیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ سیلاب آکر 50دن ہوگئے ابھی تک متاثرین کو کوئی راحت کاری کے کاموں میں مکمل ناکام ہوئی ہے۔ ہماری جدوجہد اب شروع ہوئی ہے۔ ریاست میں جو سیلاب آیا ہے وہ تاریخ میں ایسا کبھی نہیں ہواتھا۔ 22اضلاع کے 103تعلقہ جات کے عوام سیلاب سے متاثر ہوئے ہیں8لاکھ عوام کی زندگی سڑک پر آگئی ہے۔ ڈھائی لاکھ خاندان اپنے گھروں کو کھویاہے۔ 20لاکھ ہیکٹر کی فصل بربادہوئی ہے۔ جائیداد برباد ہوئی ہے، 88لوگ فوت ہوئے ہیں، کسان خود کشی کررہے ہیں، اتنا سب ہونے کے باوجود حکومت اپنی جگہ بالکل خاموش  رہنے پر سخت برہمی کا اظہار کرتےہوئے سدرامیا نے عوام سے سوال پوچھا کہ  کیا ان کی چمڑی انسانوں کی نہیں ہے ؟ انہیں انسانیت نہیں ہے؟ غریبوں کے مسائل حل نہیں کرسکتے تو اقتدار پر کیوں ہیں؟ اگر نہیں ہوتاہے تو اترجائیں۔ کیا تم بیمار ہو؟ کس کا پیسہ خرچ کررہےہو، عوام کے ٹیکس کا پیسہ ،عوام کودینےمیں کیا حرج ہے؟ تمہیں کیا تکلیف ہورہی ہے؟عوا م سڑک پر ہیں  یہاں کی خبر لینے کے بجائے ٹرمپ کے حق میں انتخابی مہم کی تشہیر میں حصہ لینے پر کیا تمہیں شرم نہیں آئی ؟

احتجاجیوں سے خطاب کرتے ہوئے  کانگریس لیڈر ایشور کھنڈرے نےکہاکہ بی جے پی حکومت کسان اورعوام دشمن ہے، سیلاب سے 1لاکھ کروڑ روپیوں کا نقصان ہواہے ، اس کے باوجود ادھر کوئی دیکھنے والا نہیں ہے۔ یڈیورپا متاثرین میں حوصلہ پیدا کرنےکے بجائے اپنی کرسی بچانےمیں مصروف رہنے کا الزام لگایا۔انہوں نے کہاکہ موجودہ حکومت کو  عوام کے متعلق کوئی فکر نہیں ہےعوام بہت جلد اس حکومت کو بے دخل کرنے  کی بات کہی۔ انہوں نے مرکزی وزیر خزانہ سیتارامن پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ نرملا سیتارامن برائے نام سیلاب متاثرہ مقامات کادورہ کرکے چلی گئیں۔ کیا انہوں نے راحت کاری کے لئے ایک پیسہ تک دیاہے عوام اس تعلق سے غور کریں۔ وزیرا عظم بنگلورو کا دورہ کیا مگر سیلاب متاثرین کے متعلق کوئی بات نہیں کی۔ انہوں نے سوالیہ انداز میں عوام سے پوچھا کہ تیجسوی سوریا رکن پارلیمنٹ ہے یا راکشش ہے؟ ایسے لوگوں کو سرحد پار کرنا چاہئے نا؟انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ اس ضمنی انتخاب میں بی جے پی کو سبق سکھائیں اور مطالبہ کیا کہ جو گھر کھوچکے ہیں انہیں 10لاکھ روپیوں کامعاوضہ دیں۔

سابق وزیر داخلہ ،کانگریس لیڈر ایم بی پاٹل نے قومی آفت قرار دینے کے لئے مرکزی حکومت کو سفارش کرنے پر زور دیا۔ متاثرین سے ڈر کر بنگلورو میں ودھان سبھا اجلاس منعقد کرنے پر سخت تنقید کی۔ رکن اسمبلی ستیش جارکی ہولی نے بات کرتےہوئے کہاکہ سیلاب میں پھنس کر عوام پچھلے دو مہینوں سے تڑپ رہے ہیں ابھی تک انہیں کوئی راحت نہیں ملی ہے۔ کم ازکم اب تو وزیر اعلیٰ سیاست کو چھوڑ کر راحت کاری کےکاموں کوانجام دینے کامطالبہ کیا۔

سابق وزیر ایچ کے پاٹل نے وزیر اعظم پر تنقید کرتے ہوئے کہاکہ مودی کے پاس ہر ایک کے لئے وقت ہے لیکن سیلاب متاثرین کے آنسو پونچھنےکے لئے وقت نہیں ہے۔ بی جےپی ایم پی تیجسوی سوریا متاثرین کی توہین کرتےہوئے انہیں دکھ دیاہے، انہوں نے عوام سے پوچھا کہ ایم پی کا  سر خراب ہواہےیا انہیں بہت غرور ہے ؟ کیا کہیں اس کو۔ وہ متاثرین کے پیر چھو کر معافی مانگنے کا مطالبہ کیا۔

رکن اسمبلی لکشمی ہیبالکر  نے بھی مرکزی و ریاستی حکومتوں کے خلاف تنقید کرتےہوئے کہاکہ حکومت کے سامنے بھیک مانگنے پر بھی ان کی آنکھ نہیں کھلی ، عوام کے ساتھ دھوکہ کیا ہے، ارکان اسمبلی کو خریدنے پیسہ تھا متاثرین کی بازآبادکاری کے لئے پیسہ نہیں ہے ؟ انہوں نے سوالوں کی بوچھار کرتے ہوئے کہاکہ  کیا حکومت کی آنکھ اور کان نہیں ہیں؟تیجسوری سوریا کو بھاشن دینے آتاہے عوام کی مشکلات کے متعلق انہیں کچھ بھی پتہ نہیں ہے۔امریکن صدر کی بیوی سےمعافی مانگنے والے مودی  کو لاکھوں عوام کی تکالیف پرتوجہ دی ہے؟ اس تعلق سے ایک بھی ٹویٹ کیا ہے؟ پرکاش ہوکیری،اوما شری ، ایس آر پاٹل، ڈاکٹر ایچ سی مہا دیوپا ،کے پی سی سی صدر دنیش گنڈوراؤ ،سی ایم ابراہیم وغیرہ نے بھی اپنے خطاب میں مرکزی و ریاستی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

ایک نظر اس پر بھی

شیواجی نگر حلقے سے کانگریس کا راست مقابلہ بی جے پی سے عوام کو حلقے کی فلاح کے حق میں فیصلہ لینا ہوگا۔ انتشار سے فرقہ پرست بی جے پی کو فائدہ ہوگا: رضوان ارشد

یواجی نگر اسمبلی حلقہ جو ان اسمبلی حلقوں میں شامل ہے جس کے اراکین اسمبلی نے بی جے پی کے آپریشن کنول کا حصہ بن کر اپنی رکنیت سے استعفیٰ دیا اور نا اہل قرار پائے اس حلقے میں 5دسمبر کو ضمنی انتخابات کے لئے تینوں اہم سیاسی جماعتوں سے امیدوار میدان میں آچکے ہیں۔

بیدر میں گرلزاسلامک آرگنائزیشن کی جانب سے یومِ اُردو کا انعقاد؛ ”ایک قدم...اُُردو کی بقاء ترقی و ترویج کیلئے“

گرلز اسلامک آرگنائزیشن آف انڈیا کرناٹک (بیدریونٹ) کی جانب سے یومِ اُردو بعنوان ”ایک قدم...اُردو کی بقا ء ترقی و ترویج کیلئے“کا انعقاد بیدر میں منعقد ہوا  جس میں مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے محترمہ ڈاکٹر سرورعرفانہ سی آر پی بھا لکی محکمہ تعلیمات عامہ بیدر نے کہا کہ ...

منکی اور مرڈیشور کے ساحل اور محمد حیات کرناٹکا یونیورسٹی دھارواڑ کے کرکٹ یونیورسٹی بلیو منتخب

کھیل کے میدان میں بھٹکل اور اطراف کے کھلاڑیوں کا یونیورسٹی بلیو منتخب ہونا عام ہوتاجارہا ہے، تازہ خبر یہ ہے کہ  پڑوسی علاقہ منکی اور مرڈیشور سے تعلق رکھنےو الے دونوجوان کرکٹ میں کرناٹکا یونیورسٹی دھارواڑ کی کرکٹ ٹیم کے لئے  منتخب ہوگئے ہیں

ووٹر آئی ڈی کارڈ میں اگرکچھ کمی ہے، تو گھر بیٹھے کروا سکتے ہیں صحیح

ہندوستان ایک جمہوری ملک ہے اور کسی بھی جمہوری ملک کی سب سے اہم عضو اس ملک کے عوام ہوتی ہے۔عوام کی طرف سے جمہوری ملک کی حکومت عوام کے ذریعہ منتخب کی جاتی ہے۔ہندوستان میں تمام شہری جو 18 سال یا اس سے اوپر کے ہیں اور ان کا ووٹر آئی ڈی کارڈ بنا ہوا ہے وہ الیکشن میں ووٹ دے سکتے ہیں۔اس کا ...

مینگلور کے قریب پتورمیں ایک بزرگ مرد اور نوجوان لڑکی کا دوہرا قتل۔ مقتول بزرگ کی اہلیہ شدید زخمی

قریبی علاقہ  پتور کے ہوسمار علاقے میں ایک وحشت ناک دوہرے  قتل کی واردات پیش آئی ہے جس میں کوگّو صاحب (65 سال) اور ان کی نواسی سمیحہ بانو(16سال) جاں بحق ہوگئے ہیں جبکہ کوگّو صاحب کی اہلیہ خدیجہ بی(۵۵سال) شدید زخمی ہوگئی ہیں اور انہیں زندگی اور موت کی کیفیت میں علاج کے لئے اسپتال میں ...