بنگلور: بی جے پی کو کانگریس کا جواب؛ یوم آزادی کے موقع پر کانگریس کی طرف سے قومی پرچم، کیپ اور ٹی شرٹ بالکل مفت دینے کا اعلان

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 8th August 2022, 12:38 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 7 اگست (ایس او نیوز) حکمراں بی جے پی کو کرارا جواب دیتے ہوئے آج  کرناٹک کانگریس کی طرف سے اعلان کیا گیا ہے کہ   یوم آزادی کی 75 ویں سالگرہ کے موقع پر 15 اگست کو  بنگلور کے سنگولی رائینا سرکل سے بسونگڈی  تک فریڈم مارچ نکالا جائے گا اور  اس مارچ میں شرکت کے لئے نام درج کروانے والوں کو  قومی پرچم، ایک کیپ اور ایک ٹی شرٹ بالکل  مفت دیا جائے گا۔

یاد رہے کہ   حکمراں بی جے پی نے 15 اگست کے موقع پر ’’ہر گھر ترنگا‘‘ پروگرام  کا اعلان کیا ہے جس کے  تحت قومی پرچم کو 22 روپے کی قیمت پر فروخت کرنے کی بات کہی گئی ہے۔

کرناٹکا پردیش کانگریس کمیٹی  کے سربراہ ڈی کے شیوکمار نے اتوار کو بنگلورو میں کہا، ’’ہم ترنگا لے کر آزادی مارچ میں شامل ہونے والوں کے لیے 1.5 لاکھ سے زیادہ قومی پرچم، کیپ اور ٹی شرٹس لائے ہیں۔‘‘ ڈی کے شیوکمار نے عوام اور پارٹی کارکنوں سے اپیل کی کہ وہ یوم آزادی کے موقع پر سفر کرنے کے لیے بسوں، ریلوے اور میٹرو خدمات کا استعمال کریں اور ٹریفک کی بھیڑ کو کم کرنے کے لیے جہاں تک ممکن ہو ذاتی گاڑیوں کے استعمال سے گریز کریں۔ انہوں نے چیف منسٹر بسواراج بومئی پر زور دیا کہ وہ 15 اگست کو میٹرو کے تمام صارفین کو 50 فیصد رعایت کا اعلان کریں تاکہ لوگوں کو گھومنے پھرنے اور یوم آزادی امرت مہوتسو منانے کے قابل بنایا جا سکے۔

کے پی سی سی چیف نے قومی ترنگا لے کر  کانگریس پارٹی کی طرف سے فریڈم  مارچ نکالنے  کی اجازت دینے پر وزیر اعلیٰ کا شکریہ بھی  ادا کیا۔

اخباری  نمائندوں سے بات کرتے ہوئے، انہوں نے حکمراں بی جے پی پر الزام لگایا کہ بی بی ایم پی وارڈوں کے ریزرویشن کو  حکمراں بی جے پی نے  اپنی  سیاسی سہولت کے مطابق مقرر کیا  ہے اور اس بات کو یقینی بنایا  ہے کہ جن وارڈوں میں کانگریس پارٹی کے مضبوط امیدوار ہیں وہاں خواتین، پسماندہ طبقات اور درج فہرست ذاتوں، درج فہرست قبائل  کے اُمیدواروں کو ریزرویشن دی ہے۔ حالانکہ ریزرویشن کو آبادی کی بنیاد پر کیا جانا چاہئے۔

اسمبلی حلقوں میں آنے والے 93 وارڈوں میں سے 76 خواتین کے لیے مخصوص کیے گئے ہیں، انہوں نے کہا کہ یہ فیصلہ عوام پر چھوڑتے ہیں کہ عوام خود  فیصلہ کریں یہ کتنا  درست ہے۔ مزید بتایا کہ "ہماری پارٹی کے رہنما پہلے ہی آبادی کے اصولوں پر عمل کیے بغیر وارڈوں کے متعصبانہ اور سنسنی خیز ریزرویشن کے خلاف اپنا سخت احتجاج درج کراچکے ہیں۔ تاہم، ہم الیکشن لڑیں گے اور مقابلہ بھی کریں گے۔‘‘ 

کے پی سی سی چیف نے کہا کہ وارڈز اور تحفظات کی من مانی اور متعصبانہ فکسنگ کے خلاف 3,000 سے زیادہ اعتراضات دائر کیے گئے تھے جن پر توجہ نہیں دی گئی۔

وزیر اعلیٰ اور وزراء کی ممکنہ تبدیلی سے متعلق قیاس آرائیوں پر سوالوں کا جواب دیتے ہوئے شیوکمار نے کہا کہ یہ بی جے پی کا اندرونی معاملہ ہے۔ وہ کسی کو بھی وزیراعلیٰ بنائے۔وہ وزیر اعلی. یا  وزیر بنانے یا اس میں  تبدیلی  کرنے میں  آزاد ہیں۔ ہمیں اس کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔ پارٹی اور عوام جس چیز کا مطالبہ کرتے ہیں وہ گڈ گورننس اور سماجی انصاف ہے۔لیکن یہاں  حکومت میں کرپشن عروج پر ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

صدر جمہوریہ دروپدی مرمو نے میسور و کے دس روزہ دسہرہ تقریبات کا افتتاح کیا

دوماہ کی تیاریوں کے بعد آج بروز پیر صدر جمہوریہ دروپدی مرمو نے میسور کے چامنڈی پہاڑ پر دس روزہ دسہرہ تقریبات کا چامنڈیشوری دیوی کی مورتی پر پھول نچھاور کرکے افتتاح کیا۔ پہلے صدر جمہوریہ نے چامنڈیشوری دیوی کے درشن کئے اور اس مندر کی تاریخ کے تعلق سے تفصیل سے جانکاری حاصل کی۔

ذہنی دباؤ بیسویں صدی کا ایک مہلک مرض؛ آئیٹا گلبرگہ کے ورک شاپ سے ڈاکٹر عرفان مہا گا وی کا خطاب

نئے دور کی شدید ترین بیماریوں میں ذہنی دباؤ اور اس سے پیدا ہونے والے اثرات کو مہلک امراض میں شمار کیا جاتا ہے ۔ روز مرہ کی مشینی زندگی میں ذہنی دباؤ  میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے ۔ لیکن اس کو کیسے کم کیا جائے اس پر غور کر نے اور اس سلسلے میں کوشش کرنے کی ضرورت ہے ۔

پی ایف آئی پر ای ڈی اور این آئی اے کے کریک ڈاون کے بعد ایس ڈی پی آئی نے کہا؛ ایجنسیوں نے کبھی بھی آر ایس ایس اور اس سے منسلک تنظیموں پر چھاپہ نہیں مارا

 سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI) کرناٹک یونٹ نے بنگلور میں اپنے ریاستی مرکزی دفتر میں ایک پریس کانفرنس کا انعقاد کرتے ہوئے الزام لگایا کہ ای ڈی اور این آئی اے نے کبھی بھی آر ایس ایس اور اس سے منسلک تنظیموں پر چھاپہ نہیں مارا بلکہ صرف پاپولرفرنٹ آف انڈیا کو ہی نشانہ بنایا ...