کانگریس صدر عہدہ کے لیے ششی تھرور، ملکارجن کھرگے اور کے این ترپاٹھی نے بھرا نامزدگی کا پرچہ

Source: S.O. News Service | Published on 30th September 2022, 9:46 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،30؍ستمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) کانگریس سنٹرل الیکشن کمیٹی کے چیئرمین مدھوسودن مستری نے صحافیوں سے بات چیت میں بتایا کہ جن تین امیدواروں نے صدر عہدہ کے لیے نامزدگی کا پرچہ داخل کیا ہے، ان میں ملکارجن کھرگے، ششی تھرور اور جھارکھنڈ کے کانگریس لیڈر کے این ترپاٹھی شامل ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ ملکارجن کھرگے کی طرف سے نامزدگی کے 14 پرچے داخل کیے گئے ہیں۔ علاوہ ازیں ششی تھرور کی طرف سے 5 اور کے این ترپاٹھی کی طرف سے 1 نامزدگی کے پرچے داخل کیے گئے ہیں۔

مدھوسودن مستری نے اس سلسلے میں مزید بتایا کہ ان تینوں (ششی تھرور، ملکارجن کھرگے اور کے این ترپاٹھی) میں سے کوئی بھی کانگریس پارٹی کا آفیشیل امیدوار نہیں ہے اور سبھی امیدوار ذاتی سطح پر انتخاب لڑ رہے ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ نامزدگی کے پرچوں کی جانچ کا کام کل کیا جائے گا۔ جانچ اور نام واپسی کا وقت نکلنے کے بعد اگر ایک سے زیادہ امیدوار میدان میں ہوں گے تو ووٹنگ ہوگی، جس میں کانگریس پارٹی کے نمائندے ووٹ کریں گے۔ انھوں نے مزید کہا کہ ایسے نمائندے جو ’بھارت جوڑو یاترا‘ میں شامل ہیں، ان کے پوسٹل بیلٹ کا انتظام کیا جا سکتا ہے۔

اس سے قبل نامزدگی کا پرچہ داخل کرنے کے بعد ملکارجن کھڑگے نے صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’میں آپ سبھی کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ آج میں نے اپنا نامزدگی کا پرچہ پیش کیا ہے اور مجھے سبھی لیڈرس، کارکنان، نمائندے اور جتنی بھی اہم ریاستیں ہیں، ان ریاستوں کے لیڈر لوگوں نے بھی یہاں پر حاضر ہو کر میری حوصلہ افزائی کی اور نامزدگی کا پرچہ بھرنے کے لیے وہ خود یہاں پر رہے ہیں، اس لیے میں ان سب کو شکریہ ادا کرتا ہوں۔ میری جو سبھی نمائندے، لیڈرس، کارکنان، کانگریس پارٹی کے سبھی لیڈران نے حوصلہ افزائی کی ہے اور اس انتخاب میں کھڑے ہونے کے لیے مجھے تعاون دیا ہے، اس کا میں تہہ دل سے شکرگزار ہوں۔‘‘

ملکارجن کھرگے نے کہا کہ ’’میں جو لڑائی ہمیشہ لڑتا آیا ہوں، اور لڑنا چاہتا ہوں کہ کانگریس پارٹی کے جو اصول ہیں، جو آئیڈیولوجی ہے، اس آئیڈیولوجی کے ساتھ میں بچپن سے جڑا ہوا ہوں۔ جب میں 8ویں-9ویں میں پڑھتا تھا، تب میں پرچے بانٹتا تھا۔ دیواروں پر لکھنے کی کوشش کرتا تھا کہ اس ملک میں پنڈت جواہر لال نہرو جی کے اصولوں، گاندھی جی کے اصولوں، ڈاکٹر بابا صاحب امبیڈکر، جنھوں نے آئین تیار کیا، ان جیسے لیڈروں کے نظریات کو سامنے رکھتے ہوئے آگے بڑھا جائے۔‘‘ وہ مزید کہتے ہیں کہ ’’میں خصوصاً اس وقت کو یاد کرنا ضروری سمجھتا ہوں جب اندرا گاندھی جی نے خود گلبرگہ آ کر ہم سب کی حوصلہ افزائی کی۔ اس وقت انھوں نے کانگریس میں ایک نئی توانائی پیدا کر کے مجھے پارٹی کی خدمت کرنے کا موقع دیا اور پہلا ٹکٹ مجھے 1972 میں ملا۔ تب سے میں لگاتار منتخب ہوتا آ رہا ہوں اور یہ لوگوں کی دعاؤں کا اثر ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

راہل گاندھی کی بھارت جوڑو یاترا اندور سے برولی پہنچی

 کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی کی بھارت جوڑو یاترا چھٹے دن آج صبح اندور سے مدھیہ پردیش کے برولی گاؤں کی طرف روانہ ہوئی۔ ان کے ساتھ کانگریس کے درجنوں سینئر رہنما اورافسران کے علاوہ ہزاروں کارکنان بھی موجود ہیں۔

مہاراشٹر میں ریلوے فٹ اوور برڈج کاحصہ گرپڑا 20افراد سے زیادہ زخمی،8کی حالت تشویشناک

) مہاراشٹر کے چندر پور میں بلارشاہ ریلوے اسٹیشن پر فٹ اوور برڈج کا ایک حصہ گرنے سے ایک بڑا حادثہ پیش آیا- کئی مسافر تقریباً 60فٹ کی بلندی سے پٹری پر پل سے گر گئے- حادثے میں 20مسافر زخمی ہو گئے-8 افراد کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے-

گجرات کے نوجوان نوکریاں دینے کے جھانسے کو سمجھ چکے ہیں: ملکارجن کھرگے

کانگریس کے صدر ملکارجن کھڑگے نے اتوار کے روز بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) پر نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے کے نام پر صرف جھانسہ دینے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ گجرات کے نوجوان اس کی اصلیت کو سمجھ چکے ہیں اور اسمبلی انتخابات میں بی جے پی کو اس کا مناسب جواب ملے گا۔

راہل گاندھی نے 'بھارت جوڑو یاترا' میں چلائی بلیٹ موٹر سائیکل، پدیاترا میں انہیں دیکھنے کے لیے امڈا جم غفیر

مدھیہ پردیش میں کانگریس کی 'بھارت جوڑو یاترا' جاری ہے۔ پدیاترا میں کافی بھیڑ جمع ہو رہی ہے۔ روزانہ ہزاروں کی تعداد میں لوگ پد یاترا میں شامل ہو رہے ہیں۔ راہل گاندھی کو آج 'بھارت جوڑو یاترا' کے دوران بلٹ موٹر سائیکل چلاتے ہوئے دیکھا گیا۔ اس جی تصاویر اور ویڈیوز منظر عام پر آگئی ...

مدھیہ پردیش کی شیوراج سنگھ حکومت عوام کو دے رہی ’انتخابی دھوکہ‘:میناکشی نٹراجن

حال ہی میں صدر دروپدی مرمو نے مدھیہ پردیش میں دو دن کا قیام کیا۔ ریاستی حکومت کی طرف سے شہڈول ضلع کے لال پور میں برسا منڈا جینتی کے موقع پر منعقدہ ’آدیواسی گورو دیوس‘ میں مدھیہ پردیش 'پی ای ایس اے' اصول کے باضابطہ نفاذ کا اعلان کیا گیا۔