انتخابی نتائج کے بعد کانگریس جے ڈی ایس کا وجودختم ہوجائے گا: یڈیورپا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 21st May 2019, 11:03 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 21مئی (ایس او نیوز) ریاستی بی جے پی صدر بی ایس یڈیورپا نے کہاکہ 23 مئی کو لوک سبھا انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے بعد کانگریس اور جے ڈی ایس کے سبھی قائدین اپنے اپنے گھروں میں آرام کرتے ہوئے نظر آئیں گے اور ریاست کا اقتدار بی جے پی کے ہاتھوں میں ہوگا۔اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ایکز ٹ پولس میں نتائج بی جے پی کی توقعات کے عین مطابق ہیں، 23مئی کو بھی ریاستی عوام کا یہی فرمان کرناٹک اور ملک بھر میں ظاہر ہوگا اور وزیراعظم مودی غیر معمولی اکثریت کے ساتھ دوبارہ اقتدار پر آئیں گے۔انہوں نے کہاکہ ملک کی کوئی طاقت مودی کو وزیراعظم کے عہدے سے دور نہیں رکھ سکتی۔ پچھلے پانچ سالوں کے دوران مودی حکومت نے عوام کی امنگوں کے مطابق کام کیا اور ملک کے عوام دوبارہ انہیں ایک اور موقع دیناچاہتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پچھلے ایک سال سے ریاست میں بڑی پارٹی ہونے کے باوجود اقتدار سے باہر رہتے ہوئے بھی بی جے پی نے اپنے آپ کو مضبوط کرنے کی جدوجہد جاری رکھی اور پارٹی کو بنیادی سطحوں پر منظم کیا۔ ایکزٹ پولس کا نتیجہ ظاہر کرتا ہے کہ اس ایک سالہ محنت کا ثمر بی جے پی کو اب مل رہاہے، یڈیورپا نے دعویٰ کیا کہ ریاست کے سرکردہ بشمول سابق وزیراعظم دیوے گوڈا، کانگریس قائدین ملیکارجن کھرگے، ویرپا موئیلی، کے ایچ منی اپا، نکھل کمار سوامی وغیرہ شکست کھانے والے ہیں۔ایکزٹ پولس کے مطابق کانگریس جے ڈی ایس اتحاد دو عدد کے نشانے پر بھی پہنچ نہیں پارہا ہے۔ اسی لئے اب کانگریس رہنماؤں کو چاہئے کہ جے ڈی ایس سے اتحاد توڑ کر اپنے گھروں میں آرام کریں۔ 
 

ایک نظر اس پر بھی

بنگلورو کی خواتین اب بھی ”گلابی سارتھی“ سے واقف نہیں ہیں

بنگلورو میٹرو پالیٹن ٹرانسپورٹ کارپوریشن (بی ایم ٹی سی) نے اسی سال جون کے مہینہ میں خواتین کے تحفظ کے پیش نظر اور ان پر کی جانے والے کسی طرح کے ظلم یا ہراسانی سے متعلق شکایت درج کرانے اور فوری اس کے ازالہ کے لئے 25 خصوصی سواریاں جاری کی تھی جنہیں ”گلابی سارتھی“ کا نام دیا گیا،

بی ایم ٹی سی کے رعایتی بس پاس کے اجراء کی کارروائی اب بھی جاری مگر کارپوریشن نے اب تک 38,000 درخواستیں مسترد کی ہے

بنگلور میٹرو پالیٹن ٹرانسپورٹ کارپوریشن (بی ایم ٹی سی) نے طلباء کی طرف سے رعایتی بس پاس حاصل کرنے کے لئے داخل کردہ کل 38,224 درخواستوں کو اب تک رد کر دیا ہے اور اس کے لئے یہ وجہ بیان کی گئی ہے کہ ان کے تعلیمی اداروں کی طرف سے ان طلباء کی تفصیلات مناسب انداز میں فراہم نہیں کی گئی ہیں۔