کرناٹک کے بعد یوپی میں کانگریس نے تحلیل کیں تمام ضلعی کمیٹیاں، اجے کمار للو کو ملی بڑی ذمہ داری

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 24th June 2019, 11:09 PM | ملکی خبریں |

لکھنؤ، 24 جون (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) لوک سبھا انتخابات میں شکست کے بعد کانگریس میں اتھل پتھل کا دور جاری ہے۔کرناٹک ریاست کی یونٹ تحلیل ہونے کے بعد یوپی کانگریس نے بھی ریاست کی ساری ضلع یونٹ تحلیل کر دی ہیں۔آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی سی سی) نے پارٹی کے جنرل سکریٹری اور مشرقی مغربی یوپی کے انچارج کی ہدایت پر یہ فیصلہ لیا۔اسی کے ساتھ کانگریس نے اپنے رکن اسمبلی اجے کمار للو کو مشرقی یوپی کی تنظیم میں ردوبدل کا انچارج مقرر کیا گیا ہے۔تنظیم کے سیکرٹری جنرل کے سی وینو گوپال کی جانب سے پریس نوٹ جاری کر معلومات دی۔اس میں کہا گیا ہے کہ اے آئی سی سی نے اپنے سیکرٹری جنرل کی تجویز کے مطابق کچھ ضروری فیصلے لئے ہیں۔اس کے مطابق، یوپی کی تمام ضلع کمیٹیاں تحلیل کر دی گئی ہیں۔اسی کے ساتھ جہاں جہاں اسمبلی ضمنی انتخابات ہونے ہیں وہاں انتخابات کی تیاری کے لیے دو رکنی ٹیم قائم کر دی گئی ہے۔اسی کے ساتھ لوک سبھا انتخابات کے دوران ڈسپلن شکنی کے معاملات کو دیکھنے کے لیے 3 رکنی ٹیم قائم کی گئی ہے۔لوک سبھا انتخابات میں کراری شکست کے بعد یوپی میں کانگریس کی نظر اب 2022 اسمبلی انتخابات پر ہے۔کہا جا رہا ہے کہ پارٹی اسمبلی انتخابات کے لئے نئے سرے سے عوام کی سطح پر تنظیم کو تیار کرے گی۔بتا دیں کہ لوک سبھا انتخابات میں کانگریس کی خراب کارکردگی کے بعد یہ کارروائی کی جا رہی ہے۔لوک سبھا انتخابات میں کانگریس نے صرف رائے بریلی میں ہی کامیابی حاصل کی تھی۔یہاں تک کہ گاندھی خاندان کے روایتی نشست امیٹھی میں بھی پارٹی کو ہار کا منہ دیکھنا پڑا تھا۔یہاں کانگریس صدر راہل گاندھی کو بی جے پی کی اسمرتی ایرانی سے 55 ہزار ووٹوں سے شکست ملی تھی۔لوک سبھا انتخابات میں خراب کارکردگی کے بعد یوپی کانگریس کے صدر راج ببر نے استعفیٰ بھی بھیجا تھا۔اس سے پہلے کرناٹک کانگریس کی تمام ضلع کمیٹیوں کو تحلیل کر دیا گیا تھا،اگرچہ ریاستی صدر دنیش گڈو راؤ اور ایگزیکٹو چیئرمین ایشور بی کھادرے کو برقرار رکھا گیا تھا۔
 

ایک نظر اس پر بھی

یوپی اسمبلی: پرینکا گاندھی کو سون بھدر جانے سے روکنے اور حراست پر زَبردست ہنگامہ

ریاستی حکومت کے ذریعہ کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا کو سون بھد رجانے سے روکنے، انہیں 27 سے زیادہ گھنٹوں تک حراست میں رکھنے و ریاست میں ایس پی حامیوں کے ہوئے رہے قتل پر یو پی اسمبلی میں کانگریس و ایس پی اراکین نے جم کر ہنگامہ کیا۔

مودی حکومت نے لوک سبھا میں ’آر ٹی آئی‘ ختم کرنے والا بل پیش کیا: کانگریس

  کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ ’کم از کم گورنمنٹ اور زیادہ سے زیادہ گورننس‘ کی بات کرنے والی مرکزی حکومت لوگوں کے اطلاعات کے حق کے تحت حاصل حقوق کو چھین رہی ہے اور اس قانون کو ختم کرنے کی کوشش کررہی ہے۔