کلیان کرناٹک علاقہ میں ترقیاتی کاموں کو نئی جہت ملے گی: یڈی یورپا

Source: S.O. News Service | Published on 18th September 2020, 11:12 PM | ریاستی خبریں |

کلبرگی میں منعقدہ تقریب میں وزیراعلیٰ نے علاقہ کی ترقی کے لئے کئی اسکیموں کا اعلان کیا

کلبرگی،18؍ستمبر (ایس او نیوز) کلیان کرناٹک اتسوا کے سلسلے میں کلبرگی کے ڈی اے آر پولیس پریڈ گراؤنڈ میں منعقدہ تقریب میں وزیراعلیٰ ایڈی یورپا نے اس علاقے کی ترقی کے لئے کئی ہزار کروڑ روپئے کے ترقیاتی کاموں کے لئے سنگ بنیاد رکھا۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ حیدر آباد۔کرناٹک علاقہ جو اب کلیان کرناٹک کے نام سے جانا جاتا ہے، اس علاقہ کی ترقی کیلئے ریاستی حکومت پابند عہد ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ علاقہ حیدر آباد۔کرناٹک علاقہ کے طور پر جانا جاتا تھا،ریاست میں حکومت کے قیام کے بعد اس علاقہ کو کلیان کرناٹک کا نام دیا گیا ہے۔حکومت نے علاقہ کی ترقی کے لئے کلیان کرناٹک ڈیولپمنٹ بورڈ قائم کیا ہے۔

وزیراعلیٰ نے کہا کہ کلیان کرناٹک کی ترقی کے لئے ریاستی حکومت کی طرف سے کوئی کسر باقی نہیں رکھی جائے گی۔ ریاستِ میسور میں اس علاقہ کے الحاق کے بعد سے ہی اس علاقہ کو نظرانداز کیاجاتا رہا ہے۔جس کی وجہ سے آج بھی یہ علاقہ نہایت پسماندہ علاقہ شمار کیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ریاست کی بی جے پی حکومت نے اس علاقہ کی ترقی کا بیڑہ اٹھایا ہے۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ مرتبہ جب وہ ریاست کے وزیراعلیٰ بنے تھے تو انہوں نے کلبرگی میں ریاستی کابینہ کا اجلاس منعقد کیا تھا۔ریاست میں نئی حکومت کے قیام کے بعد سے دوبارہ اس علاقہ کے ترقیاتی کام شروع کئے گئے ہیں۔

کلیان کرناٹک میں انسانی وسائل، ثقافت اور زراعت کے فروغ کے لئے اسٹڈ ی سنٹر کے قیام کے لئے 300کروڑ روپئے جاری کئے گئے ہیں۔اس کے علاوہ مقامی ثقافتی پروگراموں کو 100کروڑ روپئے جاری کئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کلبرگی اور بیدر اضلاع میں زرعی سرگرمیوں کے لئے پانی اور پینے کے پانی کی فراہمی کے لئے 3ہزار کروڑ روپئے کی لاگت سے خصوصی اسکیم شروع کی گئی ہے۔آبپاشی کے لئے 10/ایستا نیراوری منصوبوں کو منظوری دی گئی ہے۔

رائچور ضلع میں تھرمل پلانٹ قائم ہے۔ ضلع میں 10ہزار کروڑ کی لاگت سے 1200میگا واٹ کے بجلی پلانٹ کے قیام کے لئے سرمایہ کاروں سے بات کی گئی ہے۔ وزیراعلیٰ نے امید ظاہر کی کہ پلانٹ جلد ہی شروع کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ کلیان کرناٹک علاقہ میں شامل اضلاع بیدر، کلبرگی، یادگیر، رائچور،کوپل اور بلاری کا شمار آج بھی پسماندہ اضلاع میں کیا جاتا ہے۔اس علاقہ میں قدرتی وسائل زیادہ ہے ان کے استعمال سے علاقہ کوترقی دی جاسکتی ہے۔اس موقع پر نائب وزیراعلیٰ و ضلع نگراں کار وزیر گووند کارجول، کلیان کرناٹک علاقہ ڈیولپمنٹ بورڈ کے صدر دتاتریہ پاٹل ریور، ایس ای کے آر ٹی سی کے چیرمین راج کمار پاٹل، کلیان کرناٹک زرعی، ثقافتی انجمن کے صدر سابق رکن پارلیمان بسواراج پاٹل سیڈم، رکن پارلیمان ڈاکٹر امیش جادھو، اراکین اسمبلی بسواراج متی موڈ، ڈاکٹر اویناش جادھو، رکن کونسل بی جی پاٹل، ضلع انتظامیہ کے سرکاری افسر اور دیگر شریک رہے۔

ایک نظر اس پر بھی

مرسی مشن کی کورونا متاثرین کیلئے خدمات کے 6 ماہ مکمل، ضرورت مندوں کی مدد کے لئے جوش کے ساتھ سلیقہ مندی کے امتزاج کی انوکھی مثال

شہر بنگلورو میں جب سے کورونا وائرس کے واقعات نے سر اٹھانا شروع کیا، اس وقت سے ہی شہر کے نوجوانوں کی ٹیم ضرورت مندوں کی مختلف زاویوں سے ہر ممکن مدد کرنے کے لئے متحرک رہی ہے