بارش سے ہوئی تباہی کی تفصیلی رپورٹ ملنے کے بعد معاوضہ دیاجائے گا: ریاستی وزیر سدھاکر

Source: S.O. News Service | Published on 31st August 2022, 12:01 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 31؍اگست (ایس او نیوز؍نامہ نگار) ضلع میں پچھلے دنوں معمول سے 200فیصد سے زیادہ بارش ہونے کی وجہ سے کسانوں کو اور عوام کومشکلا ت کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔اگلے دنوں میں راج کالوے کی تعمیر،کسانوں کو ہوئے نقصانات کے بارے میں تفصیلات و جانکاری حاصل کرنے کے بعد معاوضہ دیا جائے گا۔یہ بات مقامی ایم ا یل اے و ریاستی وزیر برائے میڈیکل ایجوکیشن و ہیلتھ ڈاکٹر کے سدھاکر نے کہی۔

انہوں نے آج صبح بارش سے ہوئے نقصانات کا جائزہ لینے، انڈر پاس میں بھرے پانی کا معائنہ کرنے اور کسانوں سے شکایتیں سنے کے بعد نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ40سال پہلے کے حالات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت کے حالات اور آج کے حالات یکساں ہیں۔ اس لئے کہ زمین،راستہ میں کوئی فرق دکھائی نہیں دے رہاہے،جہاں بھی دیکھو پانی ہی پانی نظر آرہا ہے۔جس سے ایک طرف خوشی ہے تو اس سے ہورہے نقصانات سے دکھ بھی پہنچ رہا ہے۔

ڈاکٹر سدھاکر نے بتایا کہ اس شدید بارشوں کی وجہ سے کسانوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا رہا ہے، مگر ان بارشوں اور ایچ این ویلی سیذخیرہ ہونے والا پانی اگلے چند سالوں تک کام آئے گا،پچھلے کئی سالوں سے کسانوں نے بورویل کی کھدائی نہیں کی ہے، جس سے کسانوں کو مالی طور پربچت ضرور ہوئی ہے۔ضلع میں کئی ترقی یافتہ کسان موجود ہیں،پھر پانی نہ ملنے کی وجہ سے پریشانیوں کا سامنا کرتے چلے آرہے ہیں، مگر ان سب کو اب پانی کیلئے اتنی مشکلوں کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا،جس سے وہ سبھی بہتر طور پر زراعت کرتے ہوئے مالی طور پر ترقی آگے بڑھتے ہوئے کامیابی کے ساتھ ریاست کے لئے بھی اپنی خدمات انجام دیں گے۔

سدھاکر نے بتایا کہ پچھلے دونوں ضلع کے چکبالاپور و گڈی بنڈاتعلقہ میں شدید بارش ریکارڈ کی گئی ہے،پچھلے دنوں وزیر اعلیٰ بسوراج بومئی نے بارش کے دوران یہاں پہنچ کر جائزہ لیا تھا،اس دوران راج کالوے کے تعلق سے بھی وزیر اعلیٰ نے رپورٹ حاصل کی تھی، جو کندوار تالاب سے سدلگٹہ روڈ تک کیلئے راج کالوے کی تعمیر کیلئے منظوری ملنے کے انتظار میں ہیں۔افسران کی کوشش کی بدولت یہاں حالات معمول کی طرف لوٹ رہے ہیں۔ضلع انتظامیہ،محکمہ زراعت اور محکمہ باغبانی مشترکہ طور پر بارش سے ہوئی فصلوں کی تباہی کا سروے کرکے حکومت کو رپورٹ پیش کرنے ہدایت دی گئی ہے،رپورٹ ملنے کے بعد کسانوں کو معاوضہ دینے کیلئے ہر ممکن کوشش کی جائے گی۔پچھلے سال کے دوران بھی اس طرح کے نقصانات پر کسانوں کو معاوضہ دیا گیا تھا۔

سدھاکر نے مزید بتایا کہ اس سال ایک کے بعد ایک تہوار ہونے کی بدولت عوام کی چہل پہل بھی زیادہ ہونے اور بازاروں میں بھی عوام اکھٹا ہونے کے پیش نظر کووڈ کے پھیلنے کا خدشہ ہے،اس لئے احتیاط کے طور پر اقدامات کے تحت ماسک کا پہنا ضروری قرار دیا گیا ہے،عوام کو چاہئے کہ وہ کاہلی نہ برتیں،جس سے ایکبار پھر ہماری ہی لاپروائی و غلطیوں سے کووڈ نہ پھیل جائے، اس لئے عوام احتیاط سے رہ کر اپنی حفاظت خود کریں۔

اس موقع پر ڈپٹی کمشنرا ین ا یم ناگراج، ضلع پنچایت سی ای او شیوشنکر،اسسٹنٹ کمشنر ڈاکٹر سنتوش کمار،محکمہ زراعت،محکمہ باغبانی،پی ڈبلیو ڈی،چھوٹی آبپاشی،کے افسروں کے علاوہ تحصیلداراور گرام پنچایت صدر و دیگر موجود تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

بجٹ 2023: ’کوئی امید نہیں، بجٹ ایک بار پھر ادھورے وعدوں سے بھرا ہوگا‘، سدارمیا کا اظہارِ خیال

یکم فروری کو مرکز کی مودی حکومت رواں مدت کار کا آخری مکمل بجٹ پیش کرنے والی ہے۔ مرکزی وزیر مالیات نرملا سیتارمن کے ذریعہ بجٹ پیش کیے جانے سے قبل بجٹ 2023 کو لے کر کانگریس کے کچھ لیڈران نے اپنے خیالات ظاہر کیے ہیں۔

کرناٹک ہائی کورٹ کی وارننگ، کہا: چیف سکریٹری دو ہفتوں میں لاگو کرائیں حکم

کرناٹک ہائی کورٹ نے منگل کو انتباہ دیا کہ اگر ریاستی حکومت دو ہفتوں کے اندر سبھی گاؤں اور قصبوں میں قبرستان کے لئے زمین فراہم کرانے کے اس کے حکم پر عمل درآمد کرنے میں ناکام رہتی ہے تو وہ چیف سکریٹری کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کرنے پر مجبور ہوجائے گا ۔

منگلورو: محمد فاضل قتل میں ہندوتوا عناصر ملوث ہونے کا دعویٰ - اپوزیشن پارٹیوں نےکیا کیس کی دوبارہ جانچ کامطالبہ 

بی جے پی یووا مورچہ لیڈر پروین نیٹارو قتل کے بدلے میں عناصر کی طرف سے سورتکل میں محمد فاضل کو قتل کرنے کا کھلے عام دعویٰ کرنے والے وی ایچ پی اور بجرنگ دل لیڈر شرن پمپ ویل کے خلاف کانگریس ، جے ڈی ایس اور ایس ڈی پی آئی جیسی اپوزیشن پارٹیوں نے اس قتل کیس کی ازسر نو جانچ کا مطالبہ کیا ...

ٹمکورو میں اشتعال انگیز بیان دینے والے شرن پمپ ویل سمیت دیگر ہندوتوا لیڈروں کے خلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ لے کر اے پی سی آر نے ایس پی کو دیا میمورنڈم

حال ہی میں ریاست کرناٹک کے  ٹمکور میں  منعقدہ شوریہ یاترا کے دوران وی ایچ پی لیڈر شرن پمپ ویل نے جو متنازع اور اشتعال انگیز بیان دیا  تھا ، اس پر کٹھن کارروائی کرتے ہوئے اسے گرفتارکرنے کا مطالبہ لے کر  ایسوسی ایشن فار پروٹیکشن آف سوِل رائٹس (اے پی سی آر) کے  ایک وفد نے ٹمکورو ...