آئی پی ایل2020: آخری گیند تک چلے دلچسپ مقابلے میں کولکاتا پر چنئی کی فتح

Source: S.O. News Service | Published on 29th October 2020, 11:53 PM | اسپورٹس |

دبئی،29؍اکتوبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) آخری گیند تک چلے آج آئی پی ایل کے 49ویں میچ میں چنئی سپر کنگز نے فتح کا پرچم لہرا کر کولکاتا نائٹ رائیڈرس کے لیے پلے آف میں پہنچنے کی راہ مشکل کر دی ہے۔ کولکاتا نے 20 اوور میں 5 وکٹ کے نقصان پر 172 رن کا بہترین اسکور کھڑا کیا تھا، لیکن آج چنئی کے بلے باز ریتو گائیکواڈ اور امباتی رائیڈو نے اس اسکور کو چھوٹا ثابت کر دیا۔ آخر کے اووروں میں رویندر جڈیجہ نے بھی طوفانی انداز میں بلے بازی کی جس کی وجہ سے ایک وقت جیتتی ہوئی نظر آ رہی کولکاتا کی ٹیم آخری گیند پر میچ ہار گئی۔ 20 اوور میں چنئی نے 4 وکٹ کے نقصان پر 178 رن بنا ڈالے، یعنی ٹیم کو 6 وکٹ سے جیت نصیب ہوئی۔

آئی پی ایل پلے آف میں پہنچنے سے قاصر چنئی سپر کنگز کے کپتان مہندر سنگھ دھونی نے آج ٹاس جیت کر پہلے گیندبازی کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ کولکاتا نائٹ رائیڈرس کے سلامی بلے بازوں شبمن گل اور نتیش رانا نے ٹیم کو ایک اچھی شروعات دی تھی، لیکن بہترین بلے بازی کر رہے شبمن گل 17 گیندوں پر 26 رن بنا کر آٹھویں اوور میں آؤٹ ہو گئے۔ اس وقت ٹیم کا اسکور 53 رن تھا۔ یہاں پر کولکاتا کی ٹیم تھوڑی لڑکھڑائی اور تھوڑے تھوڑے رن کے فرق پر سنیل نرائن (7 رن)، رنکو سنگھ (11 رن) اور کپتان ایان مورگن (15 رن) آؤٹ ہوتے چلے گئے۔ اچھی بات یہ رہی کہ نتیش رانا نے ایک طرف سے اچھی بلے بازی کی اور جب وہ اٹھارہویں اوور کی پہلی گیند پر آؤٹ ہوئے تو 61 گیندوں پر 4 چھکوں اور 10 چوکوں کی مدد سے 87 رن بنا چکے تھے۔ انھوں نے رنوں کی رفتار بھی بڑھائی اور ایک طرف سے وکٹ گرنے کا سلسلہ بھی روکے رکھا۔

آخر کے اوور میں کولکاتا کے سابق کپتان دنیش کارتک نے طوفانی بلے بازی کی۔ انھوں نے محض 10 گیندوں پر 21 رن بنائے اور ناٹ آؤٹ رہے۔ انھوں نے اپنی اس چھوٹی سی اننگ میں 3 چوکے لگائے۔ راہل ترپاٹھی نے 2 گیندوں پر 3 رن بنائے اور وہ بھی ناٹ آؤٹ رہے۔ مقررہ 20 اوور میں کولکاتا نے 5 وکٹ کے نقصان پر 172 رن بنائے جو مقابلے کے لیے ایک بہترین اسکور تھا۔

چنئی کی طرف سے گیندبازی میں لنگی انگیڈی سب سے کامیاب رہے جنھوں نے 2 وکٹ لیے، لیکن 4 اوور میں انھوں نے 34 رن دیے۔ سب سے کفایتی گیندباز رویندر جڈیجہ رہے جنھوں نے 3 اوور میں 20 رن دے کر 1 وکٹ لیا۔ 1-1 وکٹ کرن شرما اور مشیل سینٹنر کو حاصل ہوا جنھوں نے بالترتیب 4 اوور میں 35 رن اور 3 اوور میں 30 رن دیے۔ علاوہ ازیں دیپک چاہر نے 3 اوور میں 31 رن اور سیم کرن نے 3 اوور میں 21 رن دیے اور ان دونوں کو کوئی وکٹ حاصل نہیں ہوا۔

173 رنوں کے ہدف کا پیچھا کرنے اتری چنئی کے لیے ایک بار پھر شین واٹسن نے مایوس کیا جو 19 گیندوں پر محض 14 رن بنا کر ورون چکرورتی کا شکار ہو گئے۔ لیکن اس کے بعد رتوراج گائیکواڈ کا ساتھ دینے آئے امباتی رائیڈو نے ایک بہترین شراکت داری کی۔ دونوں نے مل کر تقریباً 6 اوور میں 68 رن بنائے۔ میچ پر جب چنئی کی گرفت بالکل مضبوط نظر آ رہی تھی تو رائیڈو 20 گیندوں پر 38 رن بنا کر پویلین لوٹ گئے۔ اس کے بعد کپتان مہندر سنگھ دھونی محض ایک رن بنا کر چکرورتی کا شکار ہو گئے اور میچ نے دلچسپ موڑ لے لیا۔

اب تک بہترین بلے بازی کر رہے سلامی بلے باز ریتوراج گائیکواڈ 18ویں اوور کی دوسری گیند پر اس وقت آؤٹ ہوئے جب ٹیم کا اسکور 140 رن تھا۔ گائیکواڈ نے 53 گیندوں پر 2 چھکوں اور 6 چوکوں کی مدد سے 72 رنوں کی اننگ کھیلی۔ یہاں پر ٹیم کے لیے مشکلیں پیدا ہو گئیں کیونکہ میدان میں سیم کرن اور رویندر جڈیجہ کی شکل میں دو نئے بلے باز تھے۔ لیکن رویندر جڈیجہ نے اپنی طاقت دکھائی اور فرگوسن کے 19ویں اور کملیش ناگرکوٹی کے 20ویں اوور میں خوب رن بٹورے۔ آخری دو گیندوں پر جیت کے لیے 7 رن بنانے تھے اور جڈیجہ نے دونوں ہی گیندوں پر چھکا لگا کر جیت کو چنئی کی جھولی میں ڈال دیا۔ جڈیجہ 11 گیندوں پر 31 رن کی ناٹ آؤٹ اننگ کھیلی جب کہ سیم کرن نے 14 گیندوں پر ناٹ آؤٹ 13 رن بنائے۔

آج کولکاتا کی طرف سے ورون چکرورتی اور سنیل نرائن کو چھوڑ دیا جائے تو کسی نے بھی اپنی گیندبازی سے متاثر نہیں کیا۔ چکرورتی نے 4 اوور میں محض 20 رن دے کر 2 وکٹ لیے، جب کہ نرائن نے 4 اوور میں 23 رن دیے حالانکہ انھیں کوئی وکٹ حاصل نہیں ہوا۔ 2 وکٹ پیٹ کمنس کو ملے جنھوں نے 4 اوور میں 31 رن دیے۔ کملیش ناگر کوٹی نے 3 اوور میں 34 رن، لاکی فرگوسن نے 4 اوور میں 54 رن اور نتیش رانا نے 1 اوور میں 16 رن دے ڈالے اور انھیں کوئی وکٹ بھی حاصل نہیں ہوا۔

ایک نظر اس پر بھی

نیوزی لینڈ کو 372 رنز سے شکست، ہندوستان نے گھریلو میدان پر لگاتار 14ویں ٹیسٹ سیریز جیتی

آف اسپنر روی چندرن اشون اور جینت یادو کے چار چار وکٹوں کی بدولت ہندوستان نے دوسرے کرکٹ ٹسٹ میچ کے صبح کے سیشن میں نیوزی لینڈ کو 167 رنز پر ٖڈھیر کرنے کے بعد 372 رنز سے شکست دے کر دو میچوں کی سیریز 1-0 سے جیت لی۔

اعجاز پٹیل کے ’پرفیکٹ 10‘ کے بعد نیوزی لینڈ کی پوری ٹیم 62 رن پر آؤٹ

ورلڈ ٹیسٹ چمپئن نیوزی لینڈ کی ٹیم اپنے بائیں ہاتھ کے اسپنر اعجاز پٹیل کی ہندوستانی اننگ میں تمام دس وکٹیں لینے کی شاندار کارکردگی سے تحریک نہیں لے سکی اوراس کےبلے بازوں نے ہندوستانی گیندبازوں کے سامنے یہاں دوسرے اور آخری ٹسٹ میچ کے دوسرے دن ہفتہ کو محض 62 رن پر گھٹنے ٹیک دئے۔

ممبئی ٹیسٹ: اعجاز پٹیل نے ایک اننگ میں 10 وکٹ لے کر رقم کی تاریخ، ایسا کرنے والے دنیا کے تیسرے گیندباز

نیوزی لینڈ کے گیندباز اعجاز پٹیل نے کسی ٹیسٹ میچ کی ایک اننگ کے تمام 10 وکٹ حاصل کر کے تاریخ رقم کر دی ہے۔ اعجاز پٹیل ایسا کرنے والے نیوزی لینڈ کے پہلے اور دنیا کے تیسرے گیند باز ہیں۔ اعجاز سے پہلے یہ کارنامہ انیل کمبلے اور جیم لیکر انجام دے چکے ہیں۔

تمل ناڈو نے تیسری بار سیدمشتاق علی ٹرافی کا خطاب جیتا

دھماکہ خیز بلے باز شاہ رخ خان کی 15 گیندوں پر 33 رن کی زبردست اننگ کی بدولت تمل ناڈو نے یہاں پیر کو دہلی کے ارون جیٹلی اسٹیڈیم میں فائنل مقابلے میں کرناٹک کو چار وکٹ سے شکست دے کر تیسری بار سید مشتاق علی ٹرافی کاخطاب جیت لیا۔