کرناٹک: نابالغوں کی عصمت دری کے ملزم لنگایت مٹھ کے سنت کے خلاف فرد جرم داخل

Source: S.O. News Service | Published on 8th November 2022, 8:44 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،8؍نومبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) کرناٹک پولیس نے ایک اہم پیش رفت میں پیر کو کہا کہ جیل میں قید عصمت دری کے ملزم لنگایت سنت شیومورتی موروگا شرنارو کے خلاف تحقیقات کے دوران الزامات کو برقرار رکھا گیا ہے۔ چتردرگا کے سپرنٹنڈنٹ آف پولیس کے پرشورام نے کہا کہ کلیدی ملزم کے ساتھ خاتون ہاسٹل کی وارڈن رشمی اور ایک اور شخص پرم شیوایا کے خلاف بھی الزامات برقرار رکھے گئے ہیں۔

پولیس اب ایک نابالغ اور پانچویں ملزم گنگادھریا کے خلاف ثبوت تلاش کر رہی ہے۔ ایس پی نے کہا کہ تفتیشی افسر نے 27 اکتوبر کو عدالت میں چارج شیٹ پیش کی تھی۔ دوسرے کیس کے حوالے سے متاثرین کے بیانات بھی قلمبند کر لیے گئے ہیں۔ متاثرین کے والدین نے بھی اپنے بیانات قلمبند کرائے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ملزم سنت کو پولیس کی تحویل میں لے لیا گیا تھا اور اس کیس کے سلسلے میں پوچھ گچھ کی گئی۔

پولیس نے متاثرہ لڑکیوں کے بیانات کی بنیاد پر دیگر لڑکیوں کے بیانات قلمبند کر لیے ہیں۔ لنگایت سنت پر 15 سے زیادہ لڑکیوں کے ساتھ بدسلوکی کرنے کا الزام ہے۔ ایس پی پرشورام نے کہا کہ پولیس نے ’اودانادی‘ این جی او کے بانی اسٹینلے سے اس سمت میں مزید معلومات طلب کی تھیں۔ پولیس نے ان سے تفصیلات بتانے کی درخواست کی ہے اور انہیں مشترکہ تحقیقات کا یقین دلایا ہے۔

ملزم سنت کے ذریعہ مٹھ میں بدسلوکی کے خلاف احتجاج کرنے والی نابالغ لڑکی کی عصمت دری اور قتل کے الزام پر ایس پی نے کہا کہ پہلے کیس کے متاثرین نے کہا ہے کہ ایک لڑکی کی عصمت دری اور قتل کیا گیا تھا۔ اب تک کی تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ لڑکی کی موت آندھرا پردیش کے ہندو پور ریلوے اسٹیشن علاقے میں ٹرین سے گرنے کی وجہ سے ہوئی۔ کیس کو حادثاتی موت قرار دے کر بند کیا جا رہا ہے۔

پرشورام نے کہا کہ پولیس مٹھ میں منشیات کے استعمال کے الزامات کی بھی جانچ کر رہی ہے اور میڈیکل رپورٹ کا انتظار کر رہی ہے۔ طبی معائنے سے ثابت ہوا ہے کہ ملزم سنت جنسی زیادتی کے قابل ہے۔ سنت کے خلاف پوکسو اور ایس سی / ایس ٹی مظالم کا پہلا مقدمہ 26 اگست کو درج کیا گیا تھا۔ اسی طرح کی دفعات کے تحت دوسرا مقدمہ 13 اکتوبر کو درج کیا گیا تھا۔ ملزم سنت کو یکم ستمبر کو گرفتار کیا گیا تھا۔

وہیں، ملزم سنت نے چتردرگا مٹھ کے سربراہ کا عہدہ چھوڑنے سے انکار کر دیا ہے۔ ایک وفد نے وزیر اعلیٰ بسواراج بومئی سے ملاقات کی اور نئے ہیڈ پجاری کی تقرری پر تبادلہ خیال کیا۔ مٹھ کے اندر کے ذرائع کا کہنا ہے کہ ملزم سنت کا مٹھ پر مکمل کنٹرول ہے اور تمام فیصلے وہی لے رہا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کرناٹک میں بی جے پی حکومت کے دوران ہندوؤں کا سب سے زیادہ قتل ہوا، یہی ان کا اصلی چہرہ ہے: سابق وزیر اعلیٰ سدارامیا

کرناٹک کے سابق وزیر اعلیٰ اور کانگریس لیڈر ایس سدارامیا نے منگل کے روز ریاست میں برسراقتدار بی جے پی پر زوردار حملہ کیا۔ انھوں نے بی جے پی پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ریاست میں بی جے پی حکومت میں سب سے زیادہ ہندوؤں کا قتل کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ ہمارے دور میں نہ صرف ہندو، ...

بی جے پی کے ریاستی صدر نلین کمار کٹیل کی بھٹکل آمد؛ آنے والے انتخابات کو لے کر کٹیل نے کہا؛ ساورکر اور ٹیپو نظریات کے درمیان ہوگا الیکشن

اس بار ریاستی انتخابات کانگریس اور بی جے پی کے بجائے ساورکر اور ٹیپو  نظریات کے درمیان ہوں گے۔ یہ بات  بی جے پی ریاستی یونٹ کے صدر نلین کمار کٹیل نے کہی۔ شرالی میں منعقدہ بی جے پی پروگرام میں شریک ہوتے ہوئے  کٹیل نے سوال کیا کہ آپ کو محب وطن ساورکرچاہئے  یا جنونی ٹیپو  چاہئے ...

 اڈانی کمپنی کے خُرد بُرد معاملہ پر کانگریس کا بنگلورو میں احتجاج

ریاست کرناٹک کے دارلحکومت بنگلورو کے میسور بینک سرکل پر کانگریس کی جانب سے اڈانی کمپنی سے جڑے معاملات پراحتتجاج کیاگیا جس میں پارٹی کے رہنما و کارکنان شریک تھے۔ احتجاج کے دوران کانگریس کے رہنماؤں نے کہا کہ راہل گاندھی نے پہلے ہی اس معاملہ سے متعلق پیشن گوئی کی تھی۔

منگلورو: نیشنل ایجوکیشن پالیسی 'ہندوتوا راشٹرا' بنانے کا ٹوُل کِٹ ہے؛ ماہر تعلیم ڈاکٹر نرنجنارادھیا 

کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کی آل انڈیا یوتھ فیڈریشن (اے آئی وائی ایف) جنوبی کینرا و اڈپی، سمدرشی ویدیکے منگلورو، کرناٹکا تھیولوجیکل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ منگلورو کے اشتراک سے 'نیشنل ایجوکیشن پالیسی (این ای پی) اور اسکولی تعلیم' کے عنوان پر شہر میں منعقدہ  سیمینار میں اپنے خیالات کا ...

پتور: آپسی اختلافات بھول کر بی جے پی کو شکست دینے کے لئے متحد ہوجائیں - کانگریس پارٹی کارکنان سے لیڈروں کی اپیل 

کانگریس پارٹی لیڈران نے  پتور کے نیلیاڈی سے  ملناڈ اور ساحلی علاقے کے لئے اپنی 'پرجا دھونی یاترا' کا دوسرا مرحلہ شروع کرتے ہوئے اپنی کارکنان کو آواز دی کہ وہ آپسی اختلافات بھول کر بی جے پی کی  "بد عنوان، غیر فعال، غیر مخلص، غیر موثر اور عوام سے دور" حکومت کو ہٹانے کے لئے متحد ...