چندریان2-لینڈروکرم نہیں ٹوٹا اسروپرجوش-رابطہ کے امکانات روشن

Source: S.O. News Service | Published on 10th September 2019, 10:52 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

بنگلورو،10؍ستمبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) ہندوستانی خلائی ادارہ اِسرو نے لینڈر وکرم کا پتہ تو لگا لیا ہے لیکن اس سے رابطہ اب بھی قائم نہیں کیا جا سکا ہے۔ لینڈر وکرم سے رابطہ قائم کرنے کی کوششیں لگاتار جاری ہیں -وہیں چندریان-1کے ڈائرکٹر ایم- انا دورائی نے بتایا ہے کہ آخر کیوں رابطہ قائم کرنے میں اِسرو کو کامیابی نہیں مل رہی ہے۔ انا دورائی نے کہا کہ چاند کی سطح پر موجود رکاوٹیں لینڈر وکرم کو سگنل حاصل کرنے سے روک رہی ہیں -ڈائرکٹر نے نیوز ایجنسی اے این آئی کو بتایا کہ ہم نے لینڈر کا چاند کی سطح پر پتہ لگا لیا ہے، اب ہمیں اس کے ساتھ رابطہ قائم کرنا ہوگا۔ جس جگہ لینڈر اترا ہے، وہ سافٹ لینڈنگ کیلئے مناسب نہیں ہے-ساتھ ہی انا دورائی نے کہا کہ پہلے چندریان کے آربیٹر نے رابطہ قائم کرنے کیلئے لینڈر کی طرف سگنل بھیجے، لیکن موجودہ حال میں یہ دیکھنا ہوگا کہ وہ سگنل پکڑ پاتا ہے یا نہیں۔آربیٹر اور لینڈر کے درمیان ہمیشہ دو طرفہ مواصلات ہوتی ہے، لیکن ہم ایک طرفہ ڈائیلاگ کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں - حالانکہ انہوں نے کہا کہ رابطہ5 سے 10منٹ سے زیادہ کیلئے نہیں ہوگا۔ اس کے علاوہ انھوں نے کہا کہ یہ ایک مشکل حالت ہے لیکن ہمارے سائنسداں اسے سنبھالنے میں کافی اہل ہیں -دوسری جانب حالانکہ وقت نکلنے کے ساتھ ساتھ چندریان-2کے لینڈر وکرم سے رابطہ بحال ہونے کا امکان بھی کم ہوتا جا رہا ہے- لیکن، اِسرو لینڈر وکرم سے رابطہ کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہا ہے۔ اِسرو سربراہ کے. سیون نے کہا کہ خلائی ایجنسی 14 دنوں تک لینڈر سے رابطہ قائم کرنے کی کوشش کرے گی۔ چندریان-2 میں لگے کیمروں سے چاند کی سطح پر لینڈر وکرم کا پتہ اتوار کو چلنے کے بعد انہوں نے دہرایا کہ یہ (رابطہ بحال کرنے کی) کوششیں جاری رہیں گی-مہم سے جڑے ایک سینئر افسر نے کہا کہ جیسے جیسے وقت گزرتا جائے گایہ رابطہ بحال کرنا مشکل ہوگا-ایک افسر نے کہا کہ حالانکہ صحیح ماحول ملنے پر یہ اب بھی توانائی پیدا کر سکتا ہے اور سولار پینل کے ذریعہ بیٹریوں کو ری چارج کر سکتا ہے-

ایک نظر اس پر بھی

سولیا: پہاڑی مہم جو ٹیم کا ایک رکن ہوگیا لاپتہ۔قریبی جنگلات میں جاری ہے تلاشی مہم 

بنگلورو کی ایک کمپنی کے ملازمین کی ٹیم سبرامنیا میں واقع پہاڑی ’کمارا پروتا‘ کو سر کرنے کی مہم پر نکلی تھی۔ لیکن واپسی کے وقت ٹیم کا ایک رکن جنگلات میں اچانک لاپتہ ہوگیا ہے، جس کی شناخت سنتوش (25سال) کے طور پر کی گئی ہے۔

سیلاب متاثرین سے وزیر اعظم کو کوئی ہمدردی نہیں منڈیا میں منعقدہ پرتیبھا پرسکار کے جلسہ سے سابق وزیر اعلیٰ سدارامیا کا خطاب

ملک کے وزیر اعظم کو سیلاب متاثرین سے کوئی ہمدردی نہیں ہے۔ پچھلے ایک سو سال سے کبھی نہ دیکھا گیا سیلاب ریاست میں آیا ہے اور ہزاروں افراد کی زندگی تباہ ہوچکی ہے۔

آئی ایم اے فراڈ کیس کا ایک نیا موڑ، قدآور شخصیات راڈر پر، منصور خان نے سابق وزیر دیش پانڈے پر 5/کروڑ روپئے طلب کرنے کا الزام لگایا 

آئی ایم اے فراڈ کیس دن بدن نیا زاویہ اختیار کرتا جارہا ہے، اس کیس کے کلیدی ملزم اور آئی ایم اے کے سربراہ منصور خان نے دعویٰ کیا ہے کہ سابق ریاستی وزیر اور سینئر کانگریس لیڈر آر وی دیش پانڈے نے آئی ایم اے کو 600کروڑ روپئے کا قرضہ حاصل کرنے کے لئے نو آبجیکشن سرٹی فکیٹ (این او سی) جاری ...

دہلی میں جماعت اسلامی ہند کا یک روزہ ورکشاپ۔ امیر جماعت نے کہا؛ ہر زمانے میں سخت اور چیلنجنگ حالات میں ہی دعوت دین کا کام انجام دیا گیا ہے

 جماعت اسلامی ہند حلقہ دہلی کا یک روزہ ورکشاپ برائے ذمہ دران حلقہ،انڈین انسٹی ٹیوٹ آف اسلامی اسٹڈیز ابو الفضل انکلیو، اوکھلا میں منعقد ہوا۔ ورکشاپ میں نئی میقات 2019تا2023کی پالیسی پروگرام کی تفہیم کرائی گئی۔ صبح 10  بجے  سے شام تک چلے اس ورکشاپ میں جماعت اسلامی ہند دہلی کے ...

ایک قوم‘ایک زبان معاملہ: سیاسی قائدین کی جانب سے شدید رد عمل کا اظہار

اداکار سے سیاست داں بنے جنوبی ہند چینائی کے کمل ہاسن نے ایک قوم ایک زبان کے معاملہ میں بی جے پی قومی صدر امیت شاہ پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان 1950ء میں کثرت وحدت کے وعدے کے ساتھ جمہوریہ بناتھا اور اب کوئی شاہ یا سلطان اس سے انکار نہیں کرسکتا ہے۔

بی جے پی حکومت کی اُلٹی گنتی شروع: کماری شیلجہ

ہریانہ کانگریس کی ریاستی صدر اور رکن پارلیمنٹ کماری شیلجہ نے آج دعوی کیا کہ ریاست کی بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جےپی) حکومت کی الٹی گنتی شروع ہوگئی ہے کیونکہ عوام اس حکومت کی بدنظمی سے تنگ آچکے ہیں۔

جموں و کشمیر کے سابق سی ایم فاروق عبداللہ کو پی ایس اے کے تحت حراست میں لیا گیا

جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ فاروق عبداللہ کی حراست لیا گیا ہے۔ان کے حراست کو لے کر سپریم کورٹ میں داخل عرضی پر سماعت کے دوران عدالت نے مرکزی حکومت کو ایک ہفتے کا نوٹس دے کر جواب دینے کے لئے کہا گیا ہے۔