مرکزی حکومت کو عوام کی شہریت کا فیصلہ کرنے کا حق حاصل  نہیں ہے: کنّن گوپی ناتھن

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 2nd December 2019, 9:10 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

بنگلورو:02؍دسمبر(ایس اؤ نیوز)صرف دستایزات کی بنیاد پر ملک کے عوام کی  شہریت کا فیصلہ لینے کا مرکزی حکومت کو حق نہیں ہے۔ سابق آئی اے ایس آفیسر کنّن گوپی ناتھن نے ان خیالات کااظہارکیا۔

وہ یہاں پی یو سی ایل ، کے وی ایس ، سوراج انڈیا سمیت عوامی اداراتی  محاذ کے زیراہتمام ’’موجودہ جمہوریت کو درپیش چیلنجس ‘‘ کے عنوان پر شہر میں منعقدہ پروگرام میں وہ خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہاکہ مرکزی حکومت  این آر سی اور شہریت ترمیمی  بل کو  زبردستی تھوپ کر  ملک کے عوام کو بے وجہ پریشان کرنا شروع کیا ہے، جس کوہر ایک شہری  مخالفت کرنے کی اپیل کی ۔

انہوں نے زمینی حقائق کو پیش کرتے ہوئے کہاکہ آج بھی ملک میں رہنے والے دلتوں ، پچھڑی ذات کے آدی باسیوں، اقلیتوں اور ان کی عورتوں کے پاس اپنی شہریت ثابت کرنے کے لئے دستاویزات نہیں ہیں، انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیا صرف اسی وجہ  یہ سب درانداز کہلائیں گے ؟۔حکومت اپنے فرائض کو ٹھیک طرح سے انجام دئیے گئے بغیر ملک کے تمام مسائل کو عوام پر ڈالنا کتنا صحیح ہے سوال کیا۔

مرکزی حکومت کی طرف سے  ریاست آسام میں این آر سی نفاذ کے لئے تقریبا ً 50ہزار عملہ مسلسل 6برسوں کو کام کرنے کے باوجود ریاست کے تمام لوگوں کا صحیح طورپر اندراج کرنا تک ممکن نہیں ہواہےلیکن اس کے لئے 16ہزار کروڑ روپئے خرچ کئے گئے۔ عوام بھی اپنی دستاویزات تیار کرنے کے لئے قریب 8ہزار کروڑ روپئے خرچ کئے ہیں۔ اس کے باوجود وہاں 12لاکھ ہندوؤں اور 7لاکھ مسلمانوں کو دستاویزات نہیں ملے۔ اب اس کو ملک پر تھوپتے ہوئے ملک کے عام عوا م کو خوف زدہ کرنے کا مقصد ہونے کی بات کہی۔ مرکزی حکومت کو  نوٹ بندی کے بعد کیا کرنا ہے واضح منصوبہ بندی نہیں تھی ، اسی طرح جی ایس ٹی کے بعد بھی کیا کرنا پتہ نہیں تھا، اب آسام میں این آر سی جاری کیا، جہاں جن عوام کے پاس صحیح دستاویزات نہیں ہیں ان کے تعلق سے کیا کرنا کوئی وضاحت نہیں ہے۔ اس طرح عوام کو ہمیشہ پیچیدگی کا شکار بنا کر اپنے مفاد کو حاصل کرنا ہی اہم مقصد ہونے کا الزام لگایا۔

کمشیر ہی ایک جیل ہے: مرکزی حکومت نے کشمیر کو دئیے گئے خصوصی درجہ کو رد کرتےہوئے پورے کشمیر کو جیل میں منتقل کردیا ہے۔ عوامی نمائندوں سمیت ہزاروں لوگوں کو بغیر کسی وجہ کے ان کی گرفتاری کی گئی ہے۔ یہ سب اپنی آنکھوں سے دیکھتے ہوئے خاموش رہنا میرے لئے ممکن نہیں تھااسی لئے آئی اے ایس عہدے سے استعفیٰ دینے کی بات کہی۔ میرے استعفیٰ کے بعد ششی کانت سینتھل نے بھی استعفیٰ دیا تو میری اخلاقی قوت میں اضافہ ہوا۔ اور اس بات سے بھی خوشی محسوس ہوئی کہ  ہماری طرح  فکر رکھنے والے بے شمار افسران ہیں۔اب ملک بھر کا دورہ کرتے ہوئے مرکزی حکومت کی عوام مخالف پالیسی کے خلاف رائے عامہ ہموار کرنے کا سابق آئی اے ایس آفیسر کنن گوپی ناتھن نے  خیال ظاہرکیا۔

ایک نظر اس پر بھی

ڈپٹی کمشنر کا بھٹکل دورہ؛ کورونا پر قابو پانے ڈی سی نے مختلف سماج کے لیڈران سے کی گفتگو؛ پوچھا ، وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لئے مزید کیا اقدامات کئے جائیں ؟

  کوویڈ کے بڑھتے معاملات اور شہروں کے اسپتالوں میں   بیڈ اور اکسیجن کی قلت  کو مدنظر رکھتے ہوئے  اُترکنڑا کے ڈپٹی کمشنر ملئے مگھیلن نے آج سنیچر کو  بھٹکل کا دورہ کیا اور مختلف  سماج او ر اداروں کے ذمہ داران سے ملاقات کرتے ہوئے اُن سے مشورے طلب کئے کہ  بھٹکل میں کوویڈ پر قابو ...

بھٹکل: حنیف آباد میں پنچایت کی طرف سے کچرا ٹھکانے لگانے کی کوشش پر مقامی لوگوں نے جتایا اعتراض

بھٹکل تعلقہ ہیبلے گرام پنچایت کے حنیف آباد میں جنگلاتی زمین پر پنچایت کی طرف سے کچرا ٹھکانے لگانے کی کوشش پر مقامی لوگوں نے سخت مخالفت کی جس کے بعد پنچایت کے اراکین نے اس سلسلے میں کیا جارہا کام روک دیا۔ ...

کرناٹک میں10تا24مئی تک سخت لاک ڈائون کا اعلان ؛ لیکن سرکولر میں تقریبا پہلے والی ہی ہدایات

کرناٹک کے وزیراعلیٰ  یڈی یورپا نے جمعہ کی شام کو  ریاست بھر میں سخت لاک ڈاون نافذ کرنے کا اعلان کیا ، لیکن بعد میں سرکار کی طرف سے جو سرکیولر جاری ہوا ہے، اُس میں تقریباً وہی پرانی ہدایات ہیں جو پہلے سے ہی نافذ العمل ہے۔ بتایا گیا ہے کہ  نئے احکامات کو10 تا24 مئی تک نافذ کردیا گیا ...

بھٹکل انجمن ہائی اسکول کے سابق استاد محمد زُبیر چمپا انتقال کرگئے

ا  نجمن ہائی اسکول کے سابق استاد اور سب کے ہردل عزیز جناب محمد زبیر چمپا صاحب  جمعرات 6  مئی کو بھٹکل مدینہ کالونی میں واقع اپنی  قیام گاہ پر انتقال  کرگئے۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔  ان کی عمر 78 سال تھی۔ رات قریب گیارہ بجے نوائط کالونی قبرستان میں تدفین عمل میں آئی۔

کرناٹک میں10تا24مئی تک سخت لاک ڈائون کا اعلان ؛ لیکن سرکولر میں تقریبا پہلے والی ہی ہدایات

کرناٹک کے وزیراعلیٰ  یڈی یورپا نے جمعہ کی شام کو  ریاست بھر میں سخت لاک ڈاون نافذ کرنے کا اعلان کیا ، لیکن بعد میں سرکار کی طرف سے جو سرکیولر جاری ہوا ہے، اُس میں تقریباً وہی پرانی ہدایات ہیں جو پہلے سے ہی نافذ العمل ہے۔ بتایا گیا ہے کہ  نئے احکامات کو10 تا24 مئی تک نافذ کردیا گیا ...

بیڈ بکنگ میں ملوث عناصر پر سخت کارروائی کی جائے، اس کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی کوشش ناقابل برداشت: ضمیراحمد خان

سابق ریاست  وزیر  اور چامراج پیٹ کے رکن اسمبلی ضمیر احمد خان نے بنگلورو ساؤتھ کے رکن پارلیمان کی طرف سےبیڈ بکنگ  گھپلہ بے نقاب کرنے کی آڑ میں بی بی ایم پی کے مسلم ملازمین کا نام لے کر ایک مخصوص فرقہ کو بدنام کرنے کی کوشش پر سخت برہمی کا اظہار   کیا ہے  اور وارننگ دی ہے کہ ...

بیڈ بلاکنگ گھپلہ: اسپتال میں بستر کے عوض 1.20 لاکھ روپئے اینٹھنے والے 3 ملزم گرفتار

ایک طرف بی جے پی رکن پارلیمان تیجسوی سوریہ کی طرف سے بی بی ایم پی وار روم میں بیڈ بلاکنگ کا گھپلہ بے نقاب کرنے کا دعویٰ کرتے ہوئے اس سارے معاملہ کو فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کی گئی تو اس سے ہٹ کر بنگلورو سنٹرل ڈیویژن کی پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے بیڈ بلاکنگ کے ایک تازہ معاملہ ...

کرناٹک میں جنتا کرفیو میں توسیع یا مکمل لاک ڈاؤن ؟ آج شام وزیر اعلیٰ ایڈی یورپا کی طرف سے اعلان ممکن

کرناٹک بھر میں کورونا وائرس کی بگڑتی  صورتحال کو قابو میں کرنے کیلئے ریاست میں نافذ 14 روزہ جنتا  کرفیو کے دوران کورونا وائرس کو قابو میں کرنے کی کوششوں میں متوقع کامیابی نہ مل پانے کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے حکومت نے 12 ؍ مئی کے بعد بھی سخت  پابندیوں کو برقرار رکھنے کا اراداہ ...

بنگلورو کے بیڈ بلاک گھپلے میں بی جے پی کے رکن اسمبلی ملوث : ایم پی تیجسوی سوریہ کے ساتھ وار روم پہنچے ایم ایل اے ستیش ریڈی  پر الزام

مسلمانوں کو نشانہ بنانے  اورمذہبی منافرت پھیلانے میں ماہر سمجھے جانے والے  بی جے پی کے  رکن پارلیمان تیجسوی سوریہ نے  بی بی ایم پی کے بیڈ بلاک دھندے کا پردہ فاش کرنے کا جس طمطراق کے ساتھ دعویٰ کیا تھا ،  اب اس گھپلے میں ان کے ساتھ موجود بی جے پی کے رکن اسمبلی ہی ملوث ہونے کا پتہ ...

جنوب کی ریاستوں میں بھی کورونا کی نئی لہر ہوئی خطرناک، بنگلورو میں دہلی جیسی کیفیت

ہندوستان میں جہاں ایک طرف کورونا کی تیسری لہر کے بارے میں بات شروع ہو گئی ہے، وہیں جنوبی ہند کی کچھ ریاستوں میں کورونا کی نئی لہر نے فکر میں اضافہ کر دیا ہے۔ موصولہ اعداد و شمار کے مطابق جنوبی ہند کی صرف چار ریاستوں میں ہی گزشتہ 24 گھنٹوں میں 1 لاکھ 37 ہزار 579 نئے کیسز سامنے آئے ...