کرناٹک ہائی کورٹ کا عجیب و غریب فیصلہ، نفرت آمیز تقاریر پر روک لگانا ممکن نہیں

Source: S.O. News Service | Published on 2nd June 2020, 12:07 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،2؍جون(ایس او  نیوز) کرناٹک ہائی کورٹ نے اشتعال انگیز اور نفرت کوہوا دینے والی تقاریر کرنے والوں اور اس کو نشر کرنے والے میڈیا گھرانوں کے خلاف کارروائی کے لئے متعلقہ سرکاری اداروں کو ہدایت دینے کی درخواست کرتے ہوئے دائر کی گئی ایک مفاد عامہ عرضی خارج کردی ہے۔نفرت کو ہوا دینے والی تقاریر کے خلاف جاری مہم”کیمپین اگینسٹ ہیٹ اسپیچ“ نامی ادارے کی اے آر واسوی اور سواتی شیشادری کی طرف سے ہائی کورٹ میں یہ عرضی دائر کی گئی تھی کہ جن چینلوں پر نفرت کو بڑھاوا دینے والی تقاریر نشر ہو رہی ہیں ان کے خلاف کارروائی کے لئے ہائی کورٹ متعلقہ سرکاری اداروں کو ہدایت جاری کرے۔

عرضی میں بتایا گیا کہ عرضی گزاروں نے جو ادارہ قائم کیا ہے وہ سماج میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے لئے کام کرنے والے ممتاز وکلاء، دانشوروں،ماہرین تعلیمات اور دیگر ہم خیال لوگوں کی طرف سے قائم ہوا ہے اور وہ باضابطہ رجسٹرڈ ادارہ ہے اس عرضی میں مرکزی اور ریاستی حکومت کے علاوہ محکمہ داخلہ، محکمہ اطلاعات و نشریات، قومی اور صوبائی انسانی حقوق کمیشن اور اقلیتی کمیشن کو فریق بنایا گیا تھا۔ عرضی میں کہا گیا تھا کہ قانون شکنی کرتے ہوئے سماج میں نفرت پھیلانے کے ارادے سے جو تقاریر کی جاتی ہیں ان کے خلاق قانون کے مطابق کارروائی کرنے کے لئے حکومتوں اور اس سے جڑے ادراوں کو ہدایت دی جائے اسی طرح نفرت کو ہوا دینے والی ان تقاریر کو عوام کے سامنے پیش کرنے والے میڈیا چینلوں کے خلاف بھی سخت کارروائی کے لئے مرکزی اور ریاستی حکومت کے متعلقہ اداروں کو ہدایت دی جائے۔

اس عرضی کو ہائی کورٹ کے ججوں جسٹس بی وی ناگرتنا اور جسٹس ایم جی اوما پر مشتمل بینچ کے سامنے لایا گیا۔ اس سلسلہ میں فریقوں کو سننے کے بعد بنچ نے تبصرہ کیا کہ فی الوقت ملک کے آئین یا کسی قانون میں نفرت کو ہوادینے والی تقریر کے بارے میں کوئی تشریح نہیں ہے۔ اس سلسلہ میں اب تک مرکزی حکومت کی طر ف سے کوئی قانو ن بھی وضع نہیں ہو سکا ہے اس لئے جب تک نفرت پھیلنے کے متعلق قانو ن میں کسی طرح کی تشریح نہ ہو اس وقت تک اس معاملہ میں آئین کی دفعہ 226کے تحت کسی ادارے کو ہدایت دینا ممکن نہیں ہے۔ وہ اس لئے کہ آئین کی مذکورہ دفعہ میں کہا گیا ہے کہ اس سے کسی مخصوص فرقہ یا پورے سماج پر اثر پڑ سکتا ہے لیکن اس کی تشریح نہ ہونے کی بنیاد پر عدالت کے لئے فیصلہ لینا ممکن نہیں -اس معاملہ پر ریاستی مقننہ یا مرکزی حکومت کو بھی ہدایت دینا مناسب نہیں۔ اس کے ساتھ ہی عدالت نے اس عرضی کو خارج کردیا۔ ریاستی حکومت کی طرف سے معاون ایڈوکیٹ جنرل آر سبرمنیا اور ٹی ایل کرن نے معاملہ کی پیر وی کی۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا سے متاثر ہو کرمرنے والوں کی تدفین میں رکاوٹ درست نہیں، لاک ڈاؤن ہو یا نہ ہو اپنے آپ احتیاط برت کر وائرس سے بچنے کی کوشش کریں: ضمیر احمد خان

شہر بنگلورو میں کورونا وائرس کے کیسوں کی تعداد میں جس طرح کا بے تحاشہ اضافہ ہو رہا ہے اسی رفتار سے اس مہلک وباء کی زد میں آکر مرنے والوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہو تا جارہا ہے۔ اس وباء کا شکار ہو کر مرنے والے افراد کی تدفین اور دیگر آخری رسومات کے لئے عالمی صحت تنظیم کی طرف سے جو ...

کوروناکاقہر جاری،کرناٹک میں ایک ہی دن 21اموات، 24گھنٹوں کے دوران بنگلورومیں 994سمیت جملہ 1694کووڈکاشکار

ریاست میں آج ایک ہی دن کوروناوائرس کی زدمیں آکر21مریض ہلاک ہوگئے جبکہ 1694 کووڈمعاملات کا پتہ چلاہے۔ کرناٹک میں بھی کوروناوائر س کاخوفناک پھیلاؤ رکنے اورتھمنے کا نام نہیں لے رہاہے،ہرگزرتے لمحے اوردن کے ساتھ کوروناوائرس کے نئے معاملات میں اضافہ ہی ہوتاجارہاہے،