بی جے پی کو ’سی اے اے‘ کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا: یشونت سنہا

Source: S.O. News Service | Published on 24th January 2020, 11:22 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،24/جنوری(ایس او نیوز/ایجنسی) بی جے پی کے سابق سینئر رہنما یشونت سنہا نے شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) کے حوالہ سے ’بھگوا پارٹی‘ پر حملہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ بی جے پی نے اس قانون کو بلا ضرورت ملک پر مسلط کرنے کی کوشش کی ہے اور اس کا اس کا خمیازہ اسے جلد بدیر بھگتنا پڑے گا۔

قابل ذکر ہے کہ یشونت سنہا سی اے اے اور این پی آر کے خلاف 9 جنوری کو ممبئی سے شروع ہونے والی }گاندھی شانتی یاترا -2020‘ کی قیادت کر رہے ہیں۔ تمام ریاستوں سے گزرنے والی یہ یاترا سنیچر کے روز اتر پردیش میں داخل ہو جائے گی۔ یوپی میں سب سے پہلے یاترا آگرہ پہنچے گی اور پھر لکھنؤ جائے گی۔ یاترا 30 جنوری 2020 کو دہلی کے راج گھاٹ پر اختتام پذیر ہوگی۔

یشونت سنہا نے جمعہ کے روز خبررساں ایجنسی ’آئی این ایس‘ کے ساتھ فون پر گفتگو کرتے ہوئے کہا، ’’بھارتیہ جنتا پارٹی نے ملک پر سی اے اے کو مسلط کیا ہے۔ آج نہیں تو کل حقیقت سامنے آئے گی اور ملک کے عوام کے خلاف اٹھائے گئے اس بیجا قدم کا خمیازہ بی جے پی کو بھگتنا پڑے گا۔

یشونت سنہا نے ممبئی کے گیٹوے آف انڈیا سے یاترا کا آغاز کیا تھا۔ انہوں نے یاترا کو پُر امن بتایا، جوکہ مہاراشٹر، گجرات اور راجستھان کا سفر طے کرنے کے بعد راجستھان پہنچی ہے۔

ایک زمانے میں بی جے پی کے اہم حکمت عملی ساز رہے ملک کے سابق وزیر خزانہ یشونت سنہا اب وہ بی جے پی کی پالیسیوں کے خلاف کیوں کھڑے ہو گئے ہیں؟ اس سوال کے جواب میں انہوں نے کہا، ’’میں پالیسی سے تئیں سرشار شخص ہوں۔ میں اب تک کی اپنی کئی دہائیوں کی سیاسی زندگی میں کبھی بھی غیر ضروری لڑائی میں نہیں اترا۔ جب تک بی جے پی نے ملکی مفاد کی بات کی، میں اس کے ساتھ کھڑا رہا۔ یہ سب نظریات کے ملنے اور نہ ملنے پر منحصر ہے۔ پالیسیاں بنتی بگڑتی ہیں لیکن خیالات انسان کے اپنے ہوتے ہیں۔‘‘

سی اے اے کے خلاف نکالی جا رہی اس ’گاندھی شانتی یاترا‘ میں یشونت سنہا کے ساتھ ممبئی سے ہی چل رہے سماجوادی پارٹی کے قومی ترجمان آئی پی سنگھ کہا، ، ’’بی جے پی وسط میں ہی اس شانتی یاترا کو ختم کرنے کی حکمت عملی بناتی رہ گئی۔ ہم لوگ تب تک کئی ریاستوں کو عبور کر چکے تھے۔ قول اور فعل میں تضاد نہ ہو تو بہتر کاموں کو کرنے میں دیر نہیں لگتی اور نہ ہی کوئی رکاوٹ راستہ روک سکتی۔‘‘

انہوں نے مزید کہا، ’’یہ گاندھی شانتی یاترا کسی ایک کی نہیں ہے، ہر ایک کی ہے۔ بی جے پی کے ذریعہ مسلط کردہ سی اے اے کی پرامن مخالفت کا اس سے بہتر طریقہ شاید یشونت سنہا جیسے سینئر اور تجربہ کار رہنما کی نظر میں کوئی دوسرا نہیں رہا ہوگا۔ لیکن اس ’گاندھی شانتی یاترا‘ کے پیچھے بھی مرکز کی بی جے پی اتر پردیش کی یوگی حکومت پڑی ہے۔ یاترا جب 25 جنوری بروز ہفتہ آگرہ میں داخل ہوگی کی سرکاری مشینری اس میں رخنہ اندازی کی سازش رچ رہی ہوگی۔ لیکن اس سے کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ کیونکہ یاترا کا مقصد ووٹ بٹورنا نہیں ہے بلکہ بی جے پی کی ملک مخالف پالیسیوں کی پرامن مخالفت کرنا ہے۔‘‘

یہ گاندھی شانتی یاترا اتوار 26 جنوری یعنی یوم جمہوریہ کو سماج وادی پارٹی کا مضبوط گڑھ سمجھے جانے والے اٹاوہ کے سیفئی میں پہنچے گی۔ سیفئی سے ایس پی صدر اور اتر پردیش کے سابق وزیر اعلی اکھلیش یادو بھی اس یاترا میں شامل ہوں گے۔ اس کے بعد یشونت سنہا اور اکھلیش یادو کی رہنمائی میں یاترا 27 جنوری یعنی پیر کے روز لکھنؤ پہنچے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

تبلیغی جماعت کا ’ٹائمز آف انڈیا‘ کو ہتک عزت کا نوٹس، بے بنیاد خبریں شائع کرنے کی پاداش میں معافی مانگنے اور ایک کروڑ ہر جانہ ادا کرنے کا مطالبہ 

تبلیغی جماعت سے منسلک ایک رکن نے آج ٹائمز آف انڈیا گروپ کو جماعت کے بارے میں اشتعال انگیز اور بے بنیاد خبریں شائع کرنے کی پاداش میں ہتک عزت کا قانونی نوٹس بھیج دیا ہے۔

کرونا سے لڑنے کے بہانے ملک پر ایک خاص مذہبی عقیدے کو تھوپنے کی کوشش: ڈاکٹر شکیل احمد، سابق مرکزی وزیر نے کہا “ملک کو اس وقت مستحکم طبی نظام کی ضرورت”

کرونا بلا شبہ ایک خطرناک مہلک مرض ہے جس کا مقابلہ کرنے کے لئے ہمیں جانچ اور علاج کے مستحکم انتظام کے ساتھ مضبوط منصوبہ بندی کی ضرورت ہے

کاسرگوڈ میں کورونا وائرس کا بڑھتا ہوا قہر۔ مزید 9افراد کی جانچ رپورٹ آئی پوزیٹیو۔ مریضوں کی تعداد ہوگئی 151

کیرالہ کے کاسرگوڈ میں کورونا وائرس کاقہر ابھی تھمتا نظر نہیں آرہا ہے۔ 6اپریل کی شام تک کی جو صورتحال ہے اس کے مطابق کورونا وائرس سے متاثر ہونے کے مزید9معاملات سامنے آئے ہیں جس کے ساتھ ضلع میں جملہ مریضوں کی تعداد 151ہوگئی ہے۔

اترپردیش: بی جے پی کی خاتون لیڈر نے کورونا کو مارنے کے لیے چلائی گولی، ایف آئی آر درج

وزیر اعظم نریندر مودی کی جانب سے اتوار کو رات 9 بجے 9 منٹ تک چراغاں کرنے کی اپیل کے دوران بعد اترپردیش کے ضلع بلرامپور میں 'دیا' جلانے کے بعد کورونا وائرس کو مارنے کے لئے ہوا میں فائرنگ کرنے والی بی جے پی کی سینئر خاتون لیڈر کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔