سرکاری پی یو کالجوں میں اساتذہ کی بایو میٹرک حاضری لگانا لازمی۔مضافاتی علاقوں میں ٹالنے کے لئے بنائے جارہے ہیں بہانے

Source: S.O. News Service | Published on 11th July 2019, 7:57 PM | ساحلی خبریں |

کاروار،11/جولائی (ایس او نیوز)سرکاری پی یو کالجوں میں پڑھانے والے لیکچررس کے لئے بائیو میٹرک طریقے سے حاضری لگانا ضروری قراردیا گیا ہے۔ مگر مضافاتی علاقوں میں واقع سرکاری کالجوں میں اسے ٹالنے کے لئے بہانے بنائے جانے کی بات سامنے آئی ہے۔

لیکن ضلع شمالی کینرا میں 37سرکاری پی یو کالج موجود ہیں ان میں سے بہت سارے کالجوں میں بایو میٹرک حاضری سسٹم کو لاگو کیا گیا ہے، مگر 7 سرکاری پی یوکالج ایسے ہیں جن میں اکثر و بیشترغیر حاضر رہنے والے اساتذہ کے اندر اس سے خوف پید اہوگیا ہے اور ان کالجوں میں ٹیکنیکل وجوہات بتاکر بایو میٹرک حاضری نظام کو لاگو کرنے سے تاحال بچنے کی کوشش کی ہے۔بتایاجاتا ہے کچھ کالجوں میں پڑھانے والے اساتذہ کالج میں کلاس لینے کے بجائے پرائیویٹ ٹیوشن کلاسس چلانے میں مصروف رہتے ہیں۔ بایو میٹرک طریقے پر حاضری کی صورت میں کالج سے غیر حاضر رہنے کے باوجود حاضری دکھا کر طلبہ اور محکمہ تعلیم کو چکمہ دینا ان کے لئے ممکن نہیں رہے گا۔ پی یو کالج کے اساتذہ کی اسی روش پر لگام لگانے کے لئے پی یو بورڈ نے بایومیٹرک حاضری سسٹم کالجوں میں جاری کرنا لازمی قرار دیا ہے۔پرائیویٹ اور سرکاری امدادی کالجوں میں اس نظام کو گزشتہ چال پانچ سال پہلے ہی سے لاگو کیا گیا تھا، مگر سرکاری کالجوں میں گزشتہ سال ہی اسے لازمی کیا گیا۔ 

حاضری کے بایومیٹرک سسٹم کی خصوصیت یہ ہے کہ کالج کے لئے سرکاری طور پر مقرر کردہ اوقات کے بعد آنے والے عملے کی پہچان کرنا اور حاضری لگانا بند کردیتا ہے۔سرکاری طورپرکالج کے صبح 9.30بجے سے دوپہر 4بجے تک ہیں۔ مگربعض مقامات پر لیکچررس اور پرنسپالوں کی ملی بھگت سے ان اوقات میں تبدیلی کرکے صبح 7.30بجے سے 3.30بجے تک کالج کی کلاسس چلائی جاتی ہیں۔تاکہ شام میں پرائیویٹ ٹیوشن کلاسس چلانے میں آسانی ہوجائے۔اب اگر بایومیٹرک سسٹم لاگو کیا جائے گا تو پھر مقررہ اوقات پر کالج میں دیر سے پہنچنے پر ہی غیر حاضری درج ہوجائے گی۔اس کے علاوہ من مانی طریقے سے لیکچرر یا عملے کو کالج میں اپنی سہولت کے مطابق آنے جانے کی آزادی ختم ہوجائے گی۔اس لیے اس سسٹم سے بچنے کے لئے یہ بہانے کیے جارہے ہیں کہ مضافات میں انٹرنیٹ کی سہولت باقاعدگی سے نہیں ملتی۔ اس کے علاوہ باربار بجلی کاٹی جاتی ہے اس لئے اس سسٹم کو لاگو کرنے میں رکاوٹ مشکل پیش آرہی ہے۔

معلوم ہو اہے کہ حال ہی میں پی یو بورڈ کے ڈپٹی ڈائریکٹر ایم جی پول نے تمام سرکاری کالج کے پرنسپالوں کے ساتھ ایک نشست منعقد کی اور انہیں سختی کے ساتھ بایو میٹرک حاضری نظام کو لاگو کرنے کی ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ پی یو کالجوں میں پڑھانے والے تمام اساتذہ کی باقاعدگی لانے پر پوری توجہ دی جائے۔

ایک نظر اس پر بھی

انجمن ِ اسلام اور اترکنڑامسلم تنظیموں کی جانب سے ہبلی میں حج بھون تعمیرکا مطالبہ : میمورنڈم

ریاست کرناٹکا کے 9اضلاع پر مشتمل شمالی کرناٹکا کے لئے ہبلی میں حج بھون تعمیر کا مطالبہ لےکر دھارواڑ ضلع انجمن ِ اسلام کے ممبران سمیت دیگر مسلم تنظیموں کے عہدیداران نے اترکنڑا ضلع انتظامیہ کی جانب سے اترکنڑا ضلع اپر ڈپٹی کمشنر ناگراج سنگریر کو میمورنڈم سونپا۔

اُترکنڑا میں صبح سے زبردست بارش؛ سداپور میں چلتی بائک پر درخت گرنے سے فوریسٹ آفسر ہلاک؛ انکولہ میں ریلوے پٹری پر چٹان کھسکنے سے کچھ گھنٹوں کے لئے سروس متاثر

اُترکنڑا میں ضلعی انتظامیہ کی جانب سے ریڈ الرٹ جاری کرنے کے بعد آج منگل کو صبح چھ بجے سے صبح آٹھ بجے تک زبردست بارش ہوئی جس کے نتیجے میں بعض علاقوں سے نقصانات کی بھی خبریں آرہی ہیں۔  بارش  کے تیز تیور دیکھتے ہی   ڈپٹی کمشنر نے  صبح اسکول کھلنے سے قبل ہی تمام اسکولوں اور ...

منگلورو۔بنگلوروٹریک پرچٹان توڑنے کا کام مسلسل جاری۔ دن کے وقت چلنے والی ریل گاڑیاں 24جولائی تک کے لئے منسوخ

انی بندا کے قریب سبرامنیا سکلیشپور ریلوے ٹریک پر ایک بڑی چٹان لڑھکنے کا خطرہ پیدا ہوگیا تھا۔ اس حادثے کو روکنے کے لئے پہاڑی تودے کو دھماکے سے توڑنے کاکام پچھلے دو تین دن سے جاری ہے جس کے لئے ہیٹاچی مشین کے کامپریسر اور بارود کا استعمال کیا جارہا ہے۔ لیکن تیز برسات کی وجہ سے دن ...

منگلورومیں بارش کا قہر۔ چٹانیں کھسکنے، درخت اور بجلی کے کھمبے اکھڑنے سے مکانات اور موٹر گاڑیوں کو پہنچا نقصان۔ ضلع انتظامیہ نے جاری کیا ریڈ الرٹ

پچھلے چار پانچ دنوں سے ضلع شمالی کینرا میں جاری تیز بارش کی وجہ سے بھاری نقصانات کی خبریں مل رہی ہیں۔ چونکہ محکمہ موسمیات نے 27جولائی تک تیز بارش کا سلسلہ جاری رہنے کی پیشین گوئی کی ہے اس لئے ضلع انتظامیہ نے ریڈالرٹ جاری کیا ہے۔

ساحلی کرناٹکا میں موسلادھار بارش کا سلسلہ جاری؛ اُترکنڑا میں ریڈ الرٹ؛ ساگرروڈ پر غیر قانونی باکڑوں کو نہ ہٹانے کے پیچھے کیا راز ؟ مینگلور اور اُڈپی میں منگل کو اسکولوں اور کالجوں میں چھٹی

ساحلی کرناٹکا بشمول اُتر کنڑا، اُڈپی اور دکشن کنڑا میں  اتوار سے  جاری زوردار بارش کا سلسلہ آج پیر کو بھی جاری رہا جس سے  کئی علاقوں میں راستے تالاب میں تبدیل ہوگئے،  اس درمیان  محکمہ موسمیات کی جانب سے  بتایا گیا ہے کہ  کل اتوار کو بھٹکل میں جو زبردست بارش ہوئی، اُس کی ...