فلسطینی اتھارٹی کی امداد روکنے کے لیے امریکی قانون سازی

Source: S.O. News Service | Published on 5th August 2017, 11:05 PM | عالمی خبریں | قانونی صلاح |

نیویارک،5اگست(ایس اونیوز/آئی این ایس انڈیا)امریکی کانگریس کی خارجہ کمیٹی نے ایک نئے مسودہ قانون کی منظوری دی ہے جس میں فلسطینی اتھارٹی کو دی جانے والی مالی امداد مشروط کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔ذرائع ابلاغ کے مطابق فلسطینی اتھارٹی کی امداد روکے جانے سے متعلق بل پر گذشتہ روز رائے شماری کی گئی۔ خارجہ کمیٹی کے 17ارکان نے بل کی حمایت اور چار نے مخالفت کی۔کمیٹی میں بل کی حمایت میں کی گئی رائے شماری کے دوران کثرت رائے سے بل منظور کیا گیا۔ اگلے مرحلے میں اس بل کو رائے شماری کے لیے ایوان نمائندگان میں پیش کیا جائے گا۔
ادھر امریکا میں اسرائیلی اور یہودی لابی کی نمائندہ تنظیم ایپک نے کانگریس میں فلسطینی اتھارٹی کی امداد کو مشروط کرنے کے بل کا خیر مقدم کیا ہے۔ ایک بیان میں صہیونی لابی کی نمائندگی کرنے والے گروپ ایپک نے کہا ہے کہ فلسطینی اتھارٹی کی امداد روکے جانے کی سفارشات پرمبنی اس بل پر جلد از جلد عمل درآمد کیا جانا چاہیے۔امکان ہے کہ کانگریس میں اس بل پر مزید غور سالانہ تعطیلات کے بعد کیا جائے گا، کیونکہ اگست سے کانگریس کی سالانہ تعطیلات بھی شروع ہو رہی ہیں۔ڈیموکریٹک رکن کانگریس ٹوم اوڈال نے خبردار کیا ہے کہ فلسطینی اتھارٹی کی امداد بند کرنے سے فلسطین میں تشدد میں مزید اضافہ ہو سکتا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا وائرس: مہلوکین کی تعداد بڑھ کر ہوئی 2345

  چین میں کورونا وائرس سے جمعہ کو109 مزید افراد کی موت کے ساتھ ہی اس جان لیواوبا سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 2345 ہو گئی ہے جبکہ 397 نئے کیس آنے کے ساتھ ہی اب تک کل 76،288 مریضوں میں اس وائرس کے اثرات پائے گئے ہیں۔

تیونس میں النھضہ پرمشتمل مخلوط حکومت کا قیام

عرب ملک تیونس میں نامزد وزیراعظم الیاس الفخفاح مسلسل ایک ماہ تک مختلف سیاسی جماعتوں کے ساتھ مشاورت اور مذاکرات کے بعد حکومت کی تشکیل میں کامیاب ہوگئے ہیں۔ تیونس کی نئی حکومت میں مذہبی سیاسی جماعت 'تحریک النہضہ' کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

ابوظہبی کی فیمیلی کوسوشیل میڈیا پر تصاویر پوسٹ کرنا مہنگا پڑگیا؛ چوروں نے کیا پورے گھر پر ہاتھ صاف

عام طور پر لوگ سیر و سیا حت کے لئے اس لئے جاتے ہیں کہ وہ بے فکر ہو کر زندگی کے کچھ لمحات گزاریں اور ذہنی و جسمانی سکون حاصل کریں۔ لیکن عرب امارات کی ایک فیمیلی کو یوروپ کی سیر و سیاحت کے لئے جانے کے بعد وہاں سے اپنے خوش گوار لمحات کی تصاویر سوشیل میڈیا پرپوسٹ کرنا بہت مہنگا پڑا ...