بھٹکل میں اندرونی نالیوں کے ابترحالات ؛ حل کے منتظر عوام :پریشان عوام کا وزیرا علیٰ سے سوال،  کیا ہوا تیرا وعدہ  ؟؟

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 11th January 2017, 12:41 AM | ساحلی خبریں | اداریہ |

بھٹکل:10/جنوری  (ایس او نیوز) یہاں کے عوام کے سامنے چاند اورسورج لانے کے وعدے کرنےکے باوجود عوام کے بنیادی سہولیات کی حالت دگرگوں اور قابل تشویش  کی حد تک جاری ہے، جو بھٹکلی عوام کے لئے کسی سانحہ سے کم نہیں ہے، خاص کر بھٹکل شہر میں اندرونی نالیوں کا نظام عوام کو ہر طرح سے پریشان کررکھاہے۔

یہ کیسا سانحہ دیکھئے ! ضلع میں سب سے زیادہ تیز رفتاری سے ترقی کی طرف گامزن شہر بھٹکل میں گندے پانی کی نکاسی کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ یہ پانی جہاں تہاں جمع ہوکر گھروں اور کمپائونڈوں کے اندر پہنچ کرگھروں کو آلودہ کررہا ہے۔ شہر کے کنوؤں کی کہانی کہنے کے لائق ہے ہی نہیں، اسی طرح ایسے واقعات بھی ہوئے ہیں جہاں گھر کے صحن میں فضلات سے آلودہ پانی میں کیڑوں ، جراثیموں کی بھر مار کی وجہ سے تکالیف کا سامنا کرتے عوام بلدیہ کے خلاف پولس تھانے  تک پہنچ گئے تھے ۔ایسا لگتاہے کہ  مچھروں کی پیدائش کے لئے شہر بھٹکل بالکل موزوں اور مناسب مقام ہے، بیماری کے خوف کا ازالہ کبھی ہوگا بھی یا نہیں، اس بات کا کسی کے پاس جواب نہیں ہے۔ راہ گیروں کے لئے تو بارش کے موسم میں اس بات کا پتہ لگانا مشکل ہوجاتا ہے کہ بارش کا پانی کونسا ہے اور گندہ اور آلودہ پانی کونساہے۔ پانی بہنے کے لئے جگہ نہ ہونے کی وجہ سے قلب شہر شمس الدین سرکل بارش کے موسم میں اکثر تالاب کی شکل اختیار کرجاتا ہے۔ ریاست میں جب  ایس ایم کرشنا کی قیادت میں کانگریس کی حکومت تھی تو شہر بھٹکل میں اندرونی نالیوں کے زون 2اور زون 3کا کام مکمل ہوا تھا مگر زون 1 کا کام باقی رکھا گیا تھا۔  اب دو زون پر ہوئے کام پر دس سال سے زائد کا عرصہ گذرچکا ہے۔ نوائط کالونی، آزاد نگر، بندرروڈ اور اطراف کے علاقوں میں باپ دادا کے زمانے کی نالیاں بھر کر خشک ہوجاتی ہیں، جس کا نتیجہ یہ نکل رہاہے کہ شہر بھٹکل میں اندرونی نالیوں کا بہترین انتظام نہ ہونےکی وجہ سے پورا شہر آلودگی سے بھرا نظر آتاہے۔ بھٹکل بلدیہ اب حکومت کو عرضیاں دے دے کر سست ہوچکی ہے، لیکن ابھی تک کوئی حل نہیں نکل آیاہے۔

2014 میں مجلس اصلاح وتنظیم کے صد سالہ جشن میں شرکت کرنے والے  وزیر اعلیٰ سدرامیا  کے سامنے ذمہ داران نے جب اندرونی نالیوں کے ابتر حالات کی تفصیل پیش کی تھی تو کھڑے پاؤں وہیں پر وزیرا علیٰ نے اس کو منظوری دی تھی ۔ اسی ڈائس پر رکن اسمبلی منکال وئیدیا بھی موجود تھے۔ افسوس یہ ہے کہ وزیرا علیٰ نے جیسے ہی ہیلی کاپٹر پر سوارہوکر بنگلورو کی طرف پروازکیا ادھر اندرونی نالیوں کا کام ہوا میں اڑ گیا۔ یہ مسئلہ اب نہ وزیر اعلیٰ کو یا دہے نہ رکن اسمبلی اس کا تذکرہ کرتے ہیں۔اس تعلق سے جب میونسپل صدر محمد صادق مٹا سے سوال کیا گیا تو انہوں نے بتایا کہ ڈرینیج سسٹم کے نئے فیس کے لئے قریب 250 کروڑ روپیوں کی ضرورت ہے، سننے میں آیا ہے کہ حکومت 240 کروڑ روپئے کی منظوری دینے والی ہے، مگر اس رقم کو حاصل کرنے کے لئے رکن اسمبلی کے  ذریعے بھاگ دوڑ کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر حکومت یہ رقم منظور کرتی ہے تو کام شروع کیاجاسکتا ہے۔

اُدھر غوثیہ اسٹریٹ کے مکینوں کا کہنا ہے کہ ڈرینیج سسٹم سے سب سے زیادہ اُن کا علاقہ متاثر ہوا ہے، ڈرینیج سسٹم مکمل طور پر فیل ہوجانے سے پورے شہر کی گندگی غوثیہ اسٹریٹ میں واقع پمپنگ اسٹیشن پر جمع ہوتی ہے اور نکاسی نہ ہونے پر گندے پانی کو قریبی ندی میں چھوڑ دیا جاتا ہے، جس کے نتیجے میں پورے علاقے کے کنویں خراب ہوگئے ہیں، صرف اتنا ہی نہیں ندی آلودہ ہوجانے سے بیماریاں بھی پھیل رہی ہیں۔

دیکھا جائے تو ذمہ داران اس معاملے کو لے کرآ ج اور کل پر ٹال رہے ہیں۔ اندرونی نالیوں کافائل محکمہ آب رسانی کے میز پر دھول کھارہی ہے۔ جس کی طرف شاید ہی کوئی دیکھتا ہوگا ،انہی گومگوں کی کیفیت میں اندروںی نالیوں کے زون دو اور زون تین کا کام مکمل ہوکر 10سال بیت چکے ہیں، سال گزرنےکے ساتھ ساتھ منصوبے کی لاگت رقم میں بھی کئی گنا اضافہ ہوچکا ہے، اب ریاستی حکومت کی میعاد بھی صرف ایک سال کی باقی رہ گئی ہے۔ ایسے میں اگر وزیراعلیٰ اس طرف نظر دوڑاتے ہیں تو کسی کرشمہ سے کم نہیں ہوگا۔ وعدوں، ارادوں کے درمیان حیران پریشان بھٹکلی عوام کا یہ مسئلہ آخر کب حل ہوگا، حل ہوگا بھی یا نہیں۔۔ اس کا جواب ذمہ داران بھی ٹھیک طور پر نہیں دے پارہے ہیں۔ 

ایک نظر اس پر بھی

کیا شمالی کینرا سے شیورام ہیبار کے لئے وزارت کا قلمدان محفوظ رکھا گیا ہے؟

کرناٹکاکے وزیراعلیٰ  ایڈی یورپا نے دو دن پہلے اپنی کابینہ کی جو تشکیل کی ہے اس میں ریاست کے 13اضلاع کو اہمیت دیتے ہوئے وہاں کے نمائندوں کو وزارتی قلمدان سے نوازا گیا ہے۔اور بقیہ 17اضلاع کو ابھی کابینہ میں نمائندگی نہیں دی گئی ہے۔

ساگر مالا منصوبہ: انکولہ سے بیلے کیری تک ریلوے لائن بچھانے کے لئے خاموشی کے ساتھ کیاجارہا ہے سروے۔ سیکڑوں لوگوں کی زمینیں منصوبے کی زد میں آنے کا خدشہ 

انکولہ کونکن ریلوے اسٹیشن سے بیلے کیری بندرگاہ تک ’ساگر مالا‘ منصوبے کے تحت ریلوے رابطے کے لئے لائن بچھانے کا پلان بنایا گیا اور خاموشی کے ساتھ اس علاقے کا سروے کیا جارہا ہے۔

ماڈرن زندگی کا المیہ: انسانوں میں خودکشی کا بڑھتا ہوا رجحان۔ ضلع شمالی کینرا میں درج ہوئے ڈھائی سال میں 641معاملات!

جدید تہذیب اور مادی ترقی نے جہاں انسانوں کو بہت ساری سہولتیں اور آسانیاں فراہم کی ہیں، وہیں پر زندگی جینا بھی اتنا ہی مشکل کردیا ہے۔ جس کے نتیجے میں عام لوگوں اور خاص کرکے نوجوانوں میں خودکشی کا رجحان بڑھتا جارہا ہے۔

منگلورو پولیس نے ایک اور مشکوک کار کو پکڑا؛ پنجاب نمبر پلیٹ والی کار کے تعلق سے پولس کو شکوک و شبہات

دو دن دن پہلے لٹیروں اور جعلسازوں کی ایک ٹولی کے قبضے سے منگلورو پولیس نے ایسی کار ضبط کی تھی جس پر نیشنل کرائم انویسٹی گیشن بیوریو، گورنمنٹ آف انڈیا لکھا ہوا تھا۔اب مزید ایک مشکوک کار کو پولیس نے اپنے قبضے میں لیا ہے۔ جس پر بھی گورنمینٹ آف انڈیا لکھا ہوا ہے۔

مرڈیشور ساحل پر ماہی گیروں اور انتظامیہ افسران کے درمیان پارکنگ جگہ کو لےکر تنازعہ: ماہی گیروں کا احتجاج  

مرڈیشور میں مچھلی شکار پیشہ کے لئے جگہ مختص کرنے اور ماہی گیر کشتیوں کو  محفوظ رکھنے کےلئے جگہ متعین کرنے کے متعلق   ماہی گیروں اور مقامی انتظامیہ کے درمیان پھر ایک بار تنازعہ پیدا ہوگیا ہے۔

گاندھی سے گوڈسے کی طرف پھسلتے ہوئے انتخابی نتائج   ۔۔۔۔    اداریہ: کنڑاروزنامہ ’وارتا بھارتی‘  

لوک سبھا انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے  اور بی جے پی کو تاریخ سازکامیابی حاصل ہونے پر مینگلور اور بنگلور سے ایک ساتھ شائع ہونے والے کنڑا روزنامہ وارتھا بھارتی نے  بے باک  اداریہ لکھا ہے، جس کا اُردو ترجمہ بھٹکل کے معروف صحافی ڈاکٹر محمد حنیف شباب صاحب نے کیا ہے،  ساحل ا ٓن لائن ...

امن پسند ضلع شمالی کینرا میں بدامنی پھیلانے والوں کی تعداد میں اچانک اضافہ؛ الیکشن کے پس منظر میں 1119 معاملات درج

عام انتخابات کے دنوں میں محکمہ پولیس کی طرف سے امن و امان بنائے رکھنے کے مقصد سے شرپسندوں اور بد امنی پھیلانے والوں کے خلاف کارروائی ایک عام سی بات ہے۔ لیکن اکثر و بیشتر یہ دیکھنے میں آتا ہے کہ سماج میں مجرمانہ کردار رکھنے والے افراد کے علاوہ برسہابرس پہلے کسی جرم کا سامنا کرنے ...

غیر اعلان شدہ ایمرجنسی کا کالا سایہ .... ایڈیٹوریل :وارتا بھارتی ........... ترجمہ: ڈاکٹر محمد حنیف شباب

ہٹلرکے زمانے میں جرمنی کے جو دن تھے وہ بھارت میں لوٹ آئے ہیں۔ انسانی حقوق کے لئے جد وجہد کرنے والے، صحافیوں، شاعروں ادیبوں اور وکیلوں پر فاشسٹ حکومت کی ترچھی نظر پڑ گئی ہے۔ان لوگوں نے کسی کو بھی قتل نہیں کیا ہے۔کسی کی بھی جائداد نہیں لوٹی ہے۔ گائے کاگوشت کھانے کا الزام لگاکر بے ...

امن کے باغ میں تشدد کا کھیل کس لئے؟ خصوصی اداریہ

ضلع شمالی کینر اکو شاعرانہ زبان میں امن کا باغ کہا گیا ہے۔یہاں تشدد کے لئے کبھی پناہ نہیں ملی ہے۔تمام انسانیت ،مذاہب اور ذات کامائیکہ کہلانے والی اس سرزمین پر یہ کیسا تشددہے۔ ایک شخص کی موت اور اس کے پیچھے افواہوں کا جال۔پولیس کی لاٹھی۔ آمد ورفت میں رکاوٹیں۔ روزانہ کی کمائی سے ...

کیا ساحلی پٹری کی تاریکی دور ہوگی ؟ یہاں نہ ہواچلے ، نہ بارش برسے : مگر بجلی کے لئے عوام ضرورترسے

ساحلی علاقہ سمیت ملناڈ کا کچھ حصہ بظاہر اپنی قدرتی و فطری خوب صورتی اور حسین نظاروں کے لئے متعارف ہو، یہاں کے ساحلی نظاروں کی سیر و سیاحت کے لئے دنیا بھر کے لوگ آتے جاتے ہوں، لیکن یہاں رہنے والی عوام کے لئے یہ سب بے معنی ہیں۔ کیوں کہ ان کی داستان بڑی دکھ بھری ہے۔ کہنے کو سب کچھ ہے ...

ہندوتوا فاشزم کا ہتھکنڈا "بہو لاؤ،بیٹی بچاؤ" ملک کے کئی حصوں میں خفیہ طور پر جاری

آر ایس ایس کے ہندو فاشزم کے نظریے کو رو بہ عمل لانے کے لئے اس کی ذیلی تنظیمیں خاکے اور منصوبے بناتی رہتی ہیں جس میں سے ایک بڑا ایجنڈا اقلیتوں کو جسمانی، ذہنی اور اخلاقی طور پر ہراساں کرنا اور خوف و دہشت میں مبتلا رکھنا ہے۔ حال کے زمانے میں سنگھ پریوار کی تنازعات کھڑا کرنے کے لئے ...