مرڈیشورمیں 20جنوری کو منعقد ہونےو الے ماتھو بار رتھ اتسوا کو سادگی سےمنانے اے سی نے دی اجازت

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 12th January 2022, 7:57 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل:12؍ جنوری (ایس اؤ نیوز) بھٹکل  اسسٹنٹ کمشنر ممتادیوی نے  20جنوری کوہونے والے  مرڈیشور ماتھوبار رتھ اتسوا کو کووڈ گائیڈ لائنس پر مکمل عمل آوری کرتےہوئے سادگی اور محدود لوگوں کے ساتھ منانے کی اجازت دی ہے۔

اس سلسلے میں پریس ریلیز جاری کرتےہوئے اے سی نے کہا کہ ریاست میں کووڈ-19کامتبادل وائرس اومیکرون بڑی تیزی سےپھیل رہاہے۔ اس سلسلےمیں  4جنوری کو سرکلر جاری کرتےہوئے حکومت نےکہاکہ پیشگی احتیاطی تدابیر اختیار کئے جائیں اور ان پر سختی کے ساتھ عمل ہو۔ جیساکہ 10جنوری کو منعقدہ عوامی میٹنگ میں فیصلہ لیاگیا ہے کہ مرڈیشور کا رتھ اتسوا مذہبی پوجاپاٹ تک محدود ہوگا۔ میلے کے دوران ہر دن صرف 100لوگوں کو ہی مندر میں داخل ہونے دیاجائےگا۔

خیال رہے کہ انہی لوگوں کو داخلہ دیا جائے گا جو کووڈ کے دونوں ٹیکے لئے ہوں ، دستاویزات کا معائنہ کرنے کے بعد ہی آگے بڑھایا جائے گا۔ مندرمیں داخلے کے لئے لازمی ہوگا کہ ماسک لگائیں ، سماجی فاصلہ قائم رکھیں۔ اس سلسلےمیں تعلقہ پنچایت ، پنچایت ترقی افسران نگرانی کریں گے۔ 20جنوری کو رتھ اتسوا شام 4بجے سے 6بجے تک عوام کو دیکھنے کا موقع دیاجائے گا۔قطار میں کھڑے ہوکر صرف 200لوگوں کو دیکھنے دیاجائےگا پولس محکمہ اس کی نگرانی کرے گا۔ میلے کے موقع پر نئے دکانوں کے لئے موقع نہیں رہےگا۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: دانتوں میں درد اور سردرد جیسی عام بیماریوں پر اسپتال نہ جائیں ،شدید بیمار پڑنے یا ایمرجنسی کی صورت میں ہی اسپتال کا رخ کریں: کاروار اور ہوناور میں پانچ دنوں تک اسکول بند

شدید بیمار پڑنے اور ایمرجنسی ہونے پر ہی سرکاری، پرائیویٹ  اسپتال یا سوپر اسپیشالٹی اسپتال کا رُخ کریں اور معمولی بیمار مثلاً دانتوں کا درد، سر میں درد وغیرہ پر  اسپتالوں کا رُخ نہ کیا جائے، ایسی عام بیماریوں کے لئے مقامی ڈاکٹروں کے ذریعے علاج کراسکتے ہیں۔ اس طرح  کا حکم حکومت ...

جامعہ اسلامیہ بھٹکل کے ہونہار فرزند کابڑا کارنامہ ۔ انٹرنیشنل سطح پر روشن کیا بھٹکل کانام

کہتے ہیں کہ درخت اپنے پھل سے پہچانا جاتا ہے اور تعلیمی ادارے اپنے فارغین کی لیاقت اور صلاحیت سے پہچانے جاتے ہیں، ہندوستان میں بڑے تعلیمی اداروں کا نام کچھ شخصیات نے ہی روشن کیا ہے ،  الحمد للہ بھٹکل کے دینی و عصری تعلیم گاہوں کے طلبہ و طالبات بھی بڑی حد تک اپنی مادر علمی کی نیک  ...