بھٹکل اور اطراف میں برسات کے ساتھ ساتھ چل رہا ہے مچھروں کا عذاب؛ کیا ذمہ داران مچھروں پر قابو پانے کے لئے اقدامات کریں گے ؟

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 4th September 2019, 8:37 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل 4/ستمبر (ایس او نیوز) اگست کے مہینے سے مسلسل برس رہی موسلادھار بارش نے جہاں ایک طرف عام زندگی کو بری طرح متاثر کیا ہے، وہیں پر جگہ جگہ پائے جانے والے گڈھوں، تالابوں اور نالوں میں پانی جمع ہونے کی وجہ سے مچھروں کی افزائش میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ اور مچھروں کے کاٹنے  سے پھیلنے والی بیماریوں نے لوگوں کے لئے عذاب کھڑا کردیا ہے۔

بھٹکل تعلقہ کے مختلف مقامات سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق مچھروں کی افزائش میں بہت زیادہ اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ صبح کے وقت اور شام سورج ڈھلنے کے بعد گھروں اور دکانوں میں مچھروں کے غول کے غول ہوا میں اڑتے اور لوگوں کو کاٹتے دکھائی دیتے ہیں۔لوگ اس بات سے پریشان ہوگئے ہیں کہ کسی بھی مقام پر بیٹھنے یا کھڑے ہونے  کی صورت  میں مچھر حملہ آور ہوجاتے ہیں، اور جس طرف چلے جاؤ پیچھا کرتے ہوئے پائے جاتے ہیں۔اس کے علاوہ کھانے پینے کی چیزوں پر بھی مچھر منڈلاتے نظر آتے ہیں۔ننھے منے بچے ان مچھروں کے حملوں کا سب سے زیادہ شکار ہورہے ہیں۔

مچھر اور ہلاکت خیز بیماریاں: برسات کے موسم کی وجہ سے پلنے بڑھنے والے یہ مچھر اب پنکھوں کی ہوا، مچھر مار اگربتی اور دیگر چیزوں سے بھی قابو میں نہیں آ رہے ہیں۔مچھروں کے کاٹنے سے پریشان لوگ ڈینگی، ملیریا، فائلیریاچکن گنیا جیسے امراض لاحق ہونے کے خدشات میں مبتلا ہوگئے ہیں۔اصل میں انسانوں کو کاٹنے والے مادہ مچھر سے مختلف بیماریاں پھیلتی ہیں۔ایک ہی مقام پر بڑے وقفے تک جمع رہنے والا پانی مچھروں کی پیدائش اور افزائش کا سبب بنتا ہے۔ اور بھٹکل کی موجودہ حالت یہ ہے کہ برساتی پانی کی نکاسی صحیح ڈھنگ سے نہ ہونے کی وجہ سے ہر جگہ پانی اور کیچڑ نظر آتا ہے، جو مچھروں کے لئے بہت ہی عمدہ ماحول فراہم کرتا ہے۔  یہ مچھر جو انسانوں اور جانوروں کا کاٹنے اور ان کا خون چوسنے کاکام کرتے ہیں ان کی تقریباً 3500 نسل  پائی جاتی ہیں۔ان میں سے تقریباً100نسل  کے مچھر  ایسے ہوتے ہیں جو انسانوں کے لئے ہلاکت خیز بیماریوں کا سبب بنتے ہیں۔

 گندگی اورمچھروں کی افزائش:  بھٹکل تعلقہ میں صرف گڈھوں میں جمع برساتی پانی ہی مسئلہ نہیں ہے، بلکہ یہاں پر گندے پانی کے نکاسی والے کھلے نالے بھی مچھروں کی آبادی بڑھانے کا باعث ہوگئے ہیں۔ شہری علاقے میں یہ نالے ایک غلاظت بھرا منظر پیش کرتے ہیں۔ لیکن کسی کو بھی ا س کی پرو ا نہیں ہے۔صفائی ستھرائی سے متعلق چاہے جتنی بھی پبلسٹی کی جاتی ہو، اور چاہے کتنے ہی سوچتا ابھیان چلائے جائیں، جب تک عوامی رویہ نہیں بدلے گا تب ماحول صاف ستھرا نہیں ہوسکتا۔ ملیریا، ڈینگی جیسی بیماریوں کی روک تھام کے لئے جو ڈی ڈی ٹی نامی مچھر مار دوا استعمال کی جاتی تھی اب بلدی اداروں کے پاس وہ دوا موجود ہی نہیں ہے۔اس کے علاوہ مچھروں کو مارنے کے لئے دوا ملے ہوئے دھویں کے بادل(فوگنگ) کا استعمال بھی نہیں کیا جارہا ہے۔اس طرح مچھروں کی آبادی میں روز بروز اضافہ ہوتا جارہا ہے۔

محکمہ صحت کے اعدادو شمار کے مطابق بھٹکل تعلقہ میں سال 2019کے دوران ڈینگی کے 17اور ملیریا کا ایک معاملہ سامنے آیا ہے۔ اس میں سے 13 معاملے ایسے ہیں، جن میں بھٹکل کے لوگ دوسرے شہروں میں رہتے ہوئے بیمار ہوکر شہر میں لوٹے تھے۔تعلقہ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر مورتی بھٹ کا کہنا ہے کہ وبائی امراض پر قابو پانے کا مؤثر طریقہ یہی ہے کہ مچھروں کی آبادی کو بڑھنے سے روکا جائے۔ اس کے لئے عوام کے اندر بیداری آنی چاہیے اور اجتماعی طور پر اس کے لئے اقدامات کرنے ہونگے۔

کیا میونسپالٹی اور پنچایت توجہ دیں گے :  مچھروں کی افزائش پر قابو پانے کے تعلق سے  جب بھٹکل اسسٹنٹ  کمشنر مسٹر ساجدمُلا سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے بتایا کہ وہ اس تعلق سے میونسپالٹی اورپنچایت حکام  کی توجہ مبذول کرائیں گے اور  مختلف علاقوں میں مچھر مار دواوں اور فوگنگ کرنے کے احکامات جاری کریں گے۔ اس تعلق سے ایک میونسپل کونسلر نے  بتایا کہ عوام کی جانب سے  خاموشی کو دیکھتے ہوئے  فوگنگ اور مچھر مار دواوں کا چھڑکاو بند کیا گیا ہے، اگرعوام میونسپالٹی پر زور ڈالتے ہیں تو یہ کام دوبارہ شروع ہوسکتا ہے، اسی طرح جالی پٹن پنچایت کے  ایک سرگرم رکن  نے بتایا کہ پنچایت میں فوگنگ کرنے کے تمام ساز و سامان موجود ہیں، عوام کی طرف سے دباو ڈالا جاتا ہے تو   فوگنگ کرائی جاسکتی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: مسلسل بارش کی وجہ سے کدرا ڈیم میں پانی کی سطح بڑھ گئی ۔ اضافی پانی چھوڑنے پر نشیبی علاقوں میں خطرہ ۔ اسسٹنٹ کمشنر اور دیگر افسران نے لیا جائزہ

ملاپور میں واقع کدرا ڈیم کے کیاچمینٹ ایریا میں پچھلے کچھ دنوں سے جو مسلسل بارش ہورہی ہے اس کے نتیجہ میں ڈیم کے اندر پانی کا ذخیرہ اپنی حد کے  نشان کو چھونے کے قریب پہنچ گیا ہے۔ اس صورت حال کو قابو میں رکھنے کے لئے کہ ڈیم کے تین کرسٹ گیٹس کو کھول کر پانی باہر چھوڑ دیا گیا ہے۔

بھٹکل میں موسلادھار بارش کا سلسلہ جاری؛ چھ مکانوں کو نقصان؛ بعض راستوں کی حالت بد سے بدترہونے پر عوام سخت پریشان

بھٹکل سمیت ساحلی علاقوں اور ملناڈ وغیرہ  میں گذشتہ ایک ہفتہ سے  موسلادھار بارش کا سلسلہ جاری ہے، بھٹکل میں ویسے تو  تھوڑے تھوڑے وقفے کے بعد  زوردار بارش ہورہی ہے تو وہیں  ملناڈ اور پڑوسی   علاقوں میں زبردست بارش ہونے کی اطلاعات موصول ہورہی ہیں جس کے نتیجے میں ہوناور  کے ...

ہاسن نیشنل ہائی وے پر تیز رفتار کار کی پیچھے سے لاری کو ٹکر؛ تین ہلاک ایک شدید زخمی

شہر سے قریب 70 کلو میٹر دور بیلتنگڈی سے تعلق رکھنے والے  تین لوگ اُس وقت ہلاک ہوگئے جب اُن کی کار ہاسن نیشنل ہائی وے 75 پر تیز رفتاری  کے ساتھ   ایک ٹرک سے ٹکراگئی۔ حادثہ سنیچر رات قریب  آٹھ بجے پیش آیا۔

بھٹکل : شمالی کینرا کے اراکین اسمبلی نے کی کرناٹک کے وزیراعلیٰ ایڈی یورپا کے ساتھ صف بندی

ریاستی حکومت کے بی جے پی کیمپ میں اس وقت وزیر اعلیٰ ایڈی یورپا کے خلاف بغاوت کے سُر تیز ہوتے جارہے ہیں۔  ایم ایل سی وشوا ناتھ اور دیگر دو ایک اراکین اسمبلی نے یکے بعد دیگرے مختلف زاویوں سے وزیر اعلیٰ پر زبانی حملوں کا محاذ کھول رکھا ہے۔ اس پس منظر میں دونوں خیموں کی لام بندی بھی ...

کرونا ویکسین اور افواہوں کا بازار ؛ افسوسناک بات یہ ہے کہ بے بنیاد افواہیں مسلم حلقوں میں زیادہ اڑائی جا رہی ہیں ۔ ۔۔۔ آز: سہیل انجم

مئی کا مہینہ ہندوستان کے لیے انتہائی خطرناک ثابت ہوا۔ اس مہینے میں کرونا کی دوسری لہر نے ایسی تباہی مچائی کہ ہر شخص آہ و بکا کرنے پر مجبور ہو گیا۔ اپریل اور مئی کے مہینے میں کرونا سے ایک لاکھ ساٹھ ہزار افراد ہلاک ہوئے۔ نہ تو شمشانوں میں چتا جلانے کی جگہ تھی اور نہ ہی قبرستانوں ...

رکن اسمبلی نے اپنے ترقیاتی فنڈ سے بھٹکل اور ہوناور سرکاری اسپتال کے لئے کیا آکسیجن سہولت والی دو ایمبولنس کا انتظام

بھٹکل ۔ہوناور اسمبلی حلقہ کے  ایم ایل اے سنیل نائک نے اپنے  حلقہ کے دو تعلقہ اسپتالوں کے لئے آکسیجن والی سہولت کا انتظام کیا  جس سے کووڈ کے اس وبائی دور میں   عوام کو فوری طور پر  ایمبولنس  کی مدد سے اسپتال پہنچنے میں آسانی ہوگی۔

ملت کے کروڑ وں کے اثاثے ہیں مگر،غریب مسلمان گزربسر کیلئے ز یورات گروی رکھنے پر مجبور۔ مسلمانوں کی اکثریت آمدنی سے بالکل محروم۔بلا سودی قرض کی فراہمی کے ذریعہ پریشان حال ملت کی مدد ممکن

 کورونا وائرس اور لاک ڈاؤن نے سارے ملک میں معاشی بدحالی پیدا کردی ہے۔ ملک کے تمام ہی طبقات معاشی پریشانیوں اور مسائل کا شکار ہیں۔ خاص طور پر مسلمان اس لاک ڈاؤن میں بری طرح سے متاثر ہوئے ہیں۔ ان کی معیشت تباہ ہوچکی ہے۔

ثانی نہیں ہے تیرا.......بابائے تعلیم ڈاکٹر ممتاز احمد خان رحمۃ اللہ علیہ۔۔۔۔از:  حافظؔ کرناٹکی

    بابائے تعلیم ڈاکٹر ممتاز احمد خانؒ کے انتقال پر ملال سے نہ صرف یہ کہ ان کی حقیقی اولاد شفقت پدری سے محروم ہوئی ہے، اور یتیمی کا داغ برداشت کر رہی ہے بلکہ سچ پوچھیے تو الامین سے تعلق رکھنے والے سارے لوگ آج اپنے آپ کو شفقت پدری سے محروم محسوس کررہے ہیں اور یتیمی کادرد برداشت ...

  آزاد کشمیر کے انتخابات اور جماعت اسلامی ۔۔۔۔ از: میر افسر امان            

گلگت بلتستان کے بعد اب آزاد کشمیر کے انتخابات کی باری ہے۔ عام طور پر دیکھا گیا ہے کہ گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر کے انتخابات میں عوام اسی پارٹی کو ووٹ دیتے ہیں جس پارٹی کی حکومت مرکز میں ہوتی ہے۔گلگت بلتستان کے انتخابات کے انتخابات میں بھی ایسا ہی ہوا۔ باوجود کہ مریم صفدر اور ...