بریکنگ نیوز

’بھارت جوڑو یاترا‘ نے کئی معنوں میں لمبا راستہ طے کیا ہے

Source: S.O. News Service | Published on 20th November 2022, 11:18 PM | ملکی خبریں |

ممبئی،20؍نومبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) جب ہم نے 7 ستمبر کو یاترا شروع کی تو مختلف سوالات تھے، کیا روزانہ 25 کلومیٹر کا سفر کرنا ممکن ہے؟ کون ساتھ آنا پسند کرے گا؟ کیا لوگ ساتھ آنا پسند کریں گے؟ آج 60 دن کے سفر کے بعد، مجھے یہ بتاتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے کہ وہ سوالات پیچھے رہ گئے ہیں۔ جیسا کہ ہمیں اسکول کے دنوں میں سکھایا جاتا تھا کہ جب آپ آگے بڑھتے ہیں تو صرف پاؤں ہی نہیں آگے بڑھتے بلکہ آپ کا دل، آپ کی ہمت، آپ کے ساتھ چلنے والے لوگ بھی آگے بڑھتے ہیں۔ ’بھارت جوڑو یاترا‘ کی کامیابی سے توقعات بڑھ گئی ہیں اور اس کہاوت کا صحیح مطلب ہم تک پہنچ رہا ہے۔

اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ یہ سب آسان تھا۔ پچھلے 60 دن جسمانی طور پر تھکا دینے والے تھے لیکن ہم اس سے ابر گئے اور اس بات سے حیران ہیں کہ یہ دن کتنی جلدی گزر گئے۔ اس دوران میں نے ساتھی مسافروں سے بہت سی دوسری چیزیں سیکھی ہیں۔ یہ انسانی طرز عمل کے معاملہ میں ایک قسم کا کریش کورس رہا ہے۔

یاترا میں دو طرح کے لوگ ہیں ایک وہ جو براہ راست کانگریس پارٹی سے وابستہ ہیں اور دوسرے وہ جو براہ راست جڑے نہیں ہیں لیکن ہمارے ساتھ آئے ہیں۔ چھتوں پر کھڑے لوگ، دکانوں کے سامنے کھڑے لوگ، گاؤں کے داخلی راستوں پر کھڑے لوگ، اپنے موبائل پر ویڈیو بنا رہے لوگ- ان کی آنکھیں اور ان کے چہرے ہمیں محسوس کراتے ہیں کہ یہ سفر کتنا اہمیت کا حامل ہے۔ ہم ان چہروں کو پڑھتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ ہمیں کتنے چیلنجوں پر قابو پانا ہے۔ ہم ایک نئی امید کے آثار دیکھ رہے ہیں۔

مثال کے طور پر ہمارے ساتھ آنے والی خواتین یاتریوں نے (یاد رکھیں وہ پارٹی کارکن نہیں ہیں) مہنگائی اور خاندان چلانے کے بڑھتے ہوئے اخراجات کے بارے میں بات کی۔ نوجوانوں نے کم ہوتی ہوئی ملازمتوں اور روزگار میں بڑھتے ہوئے عدم تحفظ کی بات کی۔ فوج میں بھرتی کی تیاری کرنے والوں نے بھی بے روزگاری پر اپنے خدشات کا اظہار کیا۔ یاترا جہاں سے بھی گزری مختلف مقامات پر کپاس، سویابین یا گنا اگانے والے کسانوں نے اپنی مختلف مشکلات بیان کیں۔ خواتین کی حفاظت، کسانوں کی بڑھتی ہوئی لاگت اور انہیں ملنے والی کم قیمت، مزدوروں کے لیے مناسب اجرت، نوجوانوں کے لیے روزگار اور مہنگائی- یہ تمام مسائل یاترا کے دوران ہمارے سامنے آئے۔

مین اسٹریم میڈیا میں یاترا کی خبروں کی کمی کے پیش نظر یہ خاص طور پر اہم ہے۔ ہم نے اس کا پہلا مرحلہ مکمل کر لیا ہے اور ہم میں سے ہر ایک اپنے گھر جیسا محسوس کر رہا ہے، یہ کہنے کی ضرورت نہیں کہ ملک نے سفر کے جذبے کو کتنی اچھی طرح سے سمجھا ہے۔ رپورٹنگ کی کمی نے اس کے اثرات کو متاثر نہیں کیا ہے اور اس بارے میں شکایت کرنے کا کوئی فائدہ نہیں۔ اس وقت کے بارے میں سوچیں جب ہمارے پاس ایک دوسرے سے بات چیت کرنے کے لیے موبائل فون یا سوشل میڈیا نہیں تھا۔ ہم نے اپنا پیغام عام کرنے کے لئے اس وقت بھی طریقہ نکالا تھا اور حیرت انگیز طور پر اس سفر کے ساتھ بھی ویسا ہی ہوا۔ اب ہر کوئی اس کے بارے میں کسی نہ کسی طریقے سے جانتا ہے۔

اس کا مطلب یہ ہے کہ واٹس ایپ فارورڈز اور اس سے آگے جو ٹی وی چینلز اور اخبارات دکھاتے یا پرنٹ کرتے ہیں، اس سے آگے ہمارا اندرونی مواصلاتی نظام اب بھی موجود ہے۔ جھونپڑیوں یا ٹاٹ پٹی والی چائے کی دکانوں، بسوں اور ٹرینوں میں، کھیتوں میں، دفاتر میں- ہر جگہ، کسی نہ کسی شکل میں، کسی نہ کسی دن، صبح یا شام، یہ بحث جاری ہے کہ بھارت جوڑو یاترا جاری ہے۔

اس کے اثرات پر ایک صحافی دوست نے مجھے فون کیا اور پوچھا کہ ہم نے ہندوستان کو کتنا متحد کیا ہے۔ میں نے ان سے کہا کہ ہم کوئی درزی کی دکان نہیں چلا رہے، ہم یہ پیمائش کریں کہ دو میٹر کا اضافہ کیا ہے یا تین میٹر! پہلے اپنے آپ سے پوچھیں کہ ہم کتنے منقسم ہیں تبھی آپ سمجھیں گے کہ ہم کتنے قریب آئے ہیں۔ جب تک آپ یہ نہیں سمجھیں گے کہ ہم کتنے علیحدہ ہو گئے ہیں، آپ کو معلوم نہیں ہوگا کہ یہ یاترا کس طرح لوگوں کو یکجا کر رہی ہے۔ یاترا کو پارٹی سیاست کے لحاظ سے دیکھنا بہت معمولی بات ہے۔ یقیناً یاترا کا مقصد سیاسی بھی ہے لیکن یہ محض سیاسی نہیں ہے۔

ایک ایسے نوجوان کے بارے میں سوچیں جو سرکاری نوکری کی تیاری کر رہا ہے۔ اس کی امیدوں پر اس وقت پانی پھر جاتا ہے جب بھرتی کا عمل شروع نہیں ہوتا یا سوالیہ پرچہ لیک ہو جاتا ہے۔ اس بھارت جوڑو یاترا کا مقصد ایسے نوجوانوں میں امید پیدا کرنا ہے۔ اس کا مقصد ان خواتین کو امید، طاقت اور اخلاقی مدد فراہم کرنا بھی ہے جن کی عصمت دری کرنے والوں کو حکومتی احکامات پر رہا کیا جاتا ہے اور جن کی رہائی کا بہت سے لوگ جشن مناتے ہیں۔ ایسے اہم مسائل کو اجاگر کرنے میں کئی کامیابیوں کے ذریعے، آگے بڑھتے ہوئے، بھارت جوڑو یاترا اس بات کو یقینی بنائے گی کہ حکومت کو جوابدہ بنایا جائے۔

آپ ملک کے تمام لوگوں سے ٹیکس وصول کر رہے ہیں اور صرف اپنے دوستوں کی مدد کر رہے ہیں، یہ کام نہیں چلے گا۔ ملک کے لیے نعرے لگانے سے لیکن صرف اپنے دوستوں کی تجوریاں بھرنے سے نہیں چلے گا۔ ہم اس طرف بڑے پیمانے پر توجہ مبذول کرانا چاہتے ہیں جس کے لیے روزگار کی پالیسی میں تبدیلی لانی چاہیے۔ جہاں تک مہنگائی کا تعلق ہے، اگر حکومت اپنا کردار ادا نہ کرے اور سب کچھ بازار پر چھوڑ دے تو یہ کیسے چلے گی۔ اگر حکومت عوام کی ذمہ داری نہیں لیتی تو عوام حکومت کی ذمہ داری کیوں لیں؟

میڈیا کے ایک اور ساتھی نے پوچھا کہ کیا اس یاترا سے راہل جی کی شبیہ بہتر ہوگی؟ سوال خود ہی غلط ہے۔ اس یاترا نے ان کی شبیہ کو 'بہتر' نہیں کیا ہے، انہوں نے لوگوں کو سامنے حقیقی راہل گاندھی کو ظاہر کیا ہے- ایک حساس، خیال رکھنے والا، ذہین لیڈر جو لوگوں سے فوری اور آسانی سے جڑ جاتا ہے۔ وہ سب کو آرام دہ بناتا ہے، خواہ وہ عورت ہو یا بچہ یا بوڑھا، پڑھا لکھا ہو یا ناخواندہ۔

ایک نظر اس پر بھی

گھرسے ماں اور  اس کے دوبچوں کی جلی ہوئی نعشیں برآمد : بیوی ، بیٹا اور بیٹی ہلاک

ریاست تمل ناڈو کے کُنّم کولم کے پنّیتا ڈمنلی میں ماں اور اس کے دو بچوں کی  گھر میں نعشیں پائی گئیں ۔ صبح سویرے  نعشیں جلی ہوئی  حالت میں پتہ چلیں۔ مہلوکین کی شناخت حارث کی بیوی شفینہ ، تین سالہ اجوہ اور ڈیڑھ سالہ امن کے طورپر کی گئی ہے۔ واقعے کے وقت گھر میں صرف حارث کی ماں ہونے کی ...

دہلی میں بی بی سی دفتر کے سامنے ہندو سینا کا احتجاج

ہندوسینا کارکنوں نے نئی دہلی میں کستورباگاندھی مارگ پر واقع بی بی سی دفتر کے سامنے پلے کارڈس رکھے۔ وہ 2002ء کے گجرات فسادات پر بی بی سی سیریز کے خلاف احتجاج کررہے تھے۔بی بی سی کا صدر دفتر برطانیہ میں ہے۔

بینک ملازمین کی 30 اور 31 جنوری کی ہڑتال ملتوی

 یونائیٹڈ فورم آف بینک یونینز (یو ایف بی یو) نے ممبئی میں ہونے والی مفاہمت کی میٹنگ میں طے پانے والے معاہدے کے بعد 30 اور31 جنوری کو ہونے والی دو روزہ ملک گیر بینک ہڑتال کو ملتوی کر دیا ہے۔

کانگریس کے سینئر رہنما  رندیپ سنگھ سرجے والا کا بی جے پی پر حملہ، کہا؛ ملک میں نہ نفرت چلے گی نہ تقسیم

کانگریس کے سینئر رہنما  رندیپ سنگھ سرجے والا نے کہا کہ وزیر اعظم مودی اپنے دل  کے چور کو دیکھیں، تب انہیں پتہ چلے گا کہ ملک میں نفرت کون پھیلا رہا ہے اور  ملک کو تقسیم کون کر رہا ہے۔

بھارت جوڑو یاترا اپنے آخری پڑاؤ پر،پلوامہ پہنچ گئی

بھارت جوڑو یاترا  جو کشمیر میں اپنے آخری پڑائو میں پلوامہ پہنچ گئی ہے سنیچر کو دوبارہ شروع ہوئی۔ کانگریس کے رکن پارلیمنٹ راہل گاندھی نے اونتی پورہ سے  یاترا کا آغاز کیا۔ اس دوران پی ڈی پی سربراہ محبوبہ مفتی  اور پرینکا گاندھی بھی یاترا میں شامل  ہوئیں۔ یاترا کے دوران راہل ...