کووِڈسے فوت لاشوں کی بے حرمتی اورتوہین آمیز تدفین سے دلی تکلیف ہوئی ہے: وزیراعلیٰ ایڈی یورپا

Source: S.O. News Service | Published on 2nd July 2020, 11:23 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،2؍جولائی(ایس او نیوز) منگل کے روزبلاری میں کوروناسے فوت شدہ 8لاشوں کی آخری رسومات نہایت توہین آمیز طریقہ سے انجام دی گئی تھیں، غیر سنجیدہ تدفین کی ویڈیو وائرل ہوگئی۔ حیرت انگیز طور پر یہ واقعہ وزیر صحت بی سری راملو کے آبائی ضلع بلاری میں پیش آیا۔لاشوں کی بے حرمتی پرعوامی اعتراض کے بعد بلاری ضلع انتظامیہ نے جاں بحق افراد کے اہل خانہ سے معافی مانگی۔

آج وزیراعلیٰ ایڈی یورپا نے پریس کانفرنس کے دوران اس غیرانسانی حرکت پر سخت برہمی ظاہرکرتے ہوئے کہا کہ اس واقعہ سے مجھے دلی تکلیف ہوئی ہے، اس طرح توہین آمیزطریقہ سے لاشوں کی تدفین بالکل درست نہیں ہے۔کووِڈاسٹاف کے 6 اہلکاروں کومعطل کیاگیاہے۔خیال رہے کہ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک حیران کن ویڈیو میں باڈی سوٹ میں لپٹے سفیدنقاب پوش افراد کو ایک ایک کر کے ایک ویران وین سے باڈی بیگ میں لاشیں لاتے ہوئے اور اس گڑھے میں پھینکتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے۔ ویڈیو میں لاشوں کو ایک ہی گڑھے میں پھینک دیا گیا۔

بلاری ڈی سی ایس ایس نکول نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ویڈیو میں دکھائے جانے والے مقام پر مجموعی طور پر آٹھ افراد کو دفن کیا گیا ہے۔ضلع میں پیر کو 12 کووِڈ 19 کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔ منگل کے روز مزید پانچ افراد نے دم توڑ دیا، جس سے کُل اموات 29 ہوگئیں۔ اسی طرح کے ایک واقعہ میں 44 سالہ کووِڈ19 مریض کی لاش کو رواں ماہ کے شروع میں پڈوچیری میں گڑھے میں پھینک دیا گیا تھا جس کے بعد چند صحت کارکنوں کو معطل کردیا گیا تھا۔

ایس ایس نکول نے اپنے بیان میں مزید کہا ویڈیو میں بتایا گیا ہے کہ تدفین کاکام کرنے والوں نے پروٹوکول کی سختی سے پیروی کی ہے۔ ضلع انتظامیہ نے فیلڈ اسٹاف کے ذریعہ لاشوں کی بے حرمتی سے نمٹنے پرمعذرت کی ہے۔ اس میں شامل پوری فیلڈ ٹیم کو معطل کردیا گیا ہے اور ان کی جگہ ایچ او ڈی، فرانزک، وی آئی ایم ایس کے ذریعہ تربیت یافتہ ایک نئی ٹیم کوشامل کیاگیاہے۔

ضلع انتظامیہ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ اس واقعہ پر افسوس ہے اور اس طرح خاص طور پر فوت شدہ اہل خانہ اور بالعموم بلاری کے لوگوں سے غیر مشروط طور پر اس واقعہ پر معذرت خواں ہیں۔مرکزی وزارت صحت کی جانب سے کووِڈڈائڈمریضوں کی تدفین کے لئے مرتب کردہ پروٹوکول کے مطابق مریضوں کے ناک، منہ اور کان کو سیل کرنا پڑتا ہے اور جسم کو ذاتی حفاظتی سامان (پی پی ای) کی تین پرتوں میں لپیٹنا پڑتا ہے۔ اس کے بعد اسے باڈی بیگ میں رکھنا چاہئے۔ کنبے کے افراد کو وین میں فوت شدہ کے ساتھ جانے کی اجازت نہیں۔ کووِڈ 19 لاشوں کی تدفین گہرائی میں ہونی چاہئے۔قبر کم از کم 10 فٹ گہری ہونی چاہئے۔ قبر کو بلیچنگ پاؤڈر سے سینی ٹائزکرنا چاہئے اور علاقے کو گھیرے میں لینا چاہئے، تاکہ عام لوگ آس پاس میں نہ ہوں۔ کووِڈ 19 کے مریض کی لاش کو منتقل کرنے کے لئے استعمال ہونے والی گاڑی ایمبولینس کودوبارہ استعمال کرنے سے 16 گھنٹے پہلے جراثیم کش ادویہ سے اسپرے کیا جاناہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کیرالہ میں پیش آیا چٹان کھسکنے کا خطرناک حادثہ۔ 15ہلاک اور60سے زائدافراد ہوگئے لاپتہ۔ ملبے میں دب گئیں 30جیپ گاڑیاں 

کیرالہ کے مشہور تفریحی مقام ’مونار‘ سے قریب ’ایڈوکی‘ میں چٹان کھسکنے کا ایک خطرناک حادثہ پیش آیا جس میں تاحال 15افراد ہلاک ہونے اور 60سے زیادہ لوگ لاپتہ ہونے کے علاوہ 30جیپ گاڑیاں چٹان کے ملبے میں دب کر رہ جانے کی خبر ہے۔

کورونا کی وبا اور دعوت رجوع الی اللہ، اس عنوان کے تحت جماعت اسلامی ہند، کرناٹک کی 15 روزہ مہم کا آغاز

  کورونا کی وبا سے اس وقت پوری انسانیت پریشان ہے۔ اس مرض کا مقابلہ کرنے کیلئے حفاظتی اور احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے لوگ اپنے رب سے رجوع ہوں۔ کورونا جیسی بیماریوں پر قابو پانے کیلئے طبی علاج کے ساتھ روحانی اور اخلاقی طاقت کا ہونا بھی ضروری ہے۔

کرناٹک سے 40 امیدوار سیول سرویسز امتحان میں کامیاب

کرناٹک سے زائداز 40 امیدواروں نے 2019 کے یونین پبلک سرویس کمیشن (یو پی ایس سی ) سیول سرویس امتحان میں کامیابی حاصل کی اور اب آئی اے ایس ، آئی ایف ایس اور آئی پی ایس اور دیگر میں ملازمت حاصل کریں گے۔