کنڑاساہتیہ پریشد بنگلورودیہی ضلع کیلئے بی این کرشنپا صدر منتخب

Source: S.O. News Service | Published on 24th November 2021, 11:07 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،24؍ نومبر (ایس او نیوز) یہاں سرکاری جونیئر کالج میں کنڑا ساہتیہ پریشد بنگلورو دیہی ضلع صدر اور ریاستی صدر کے انتخابات کے لئے 2 بوتھ مقرر کئے گئے تھے،جہاں صبح 8 بجے سے 4بجے تک ووٹنگ کی گئی۔ریاستی صدر کیلئے جملہ 21/ امیدواروں نے حصہ لیا تھا جن میں سے مہیش جوشی کو کامیابی ملی ہے اور بنگلور دیہی ضلع کیلئے بی این کرشنپا،کے مہا لنگیا، لکشمی سرینواس،چی ما سدھاکر جملہ 4/ امیدوار حصہ لئے تھے جن میں سے بی این کرشنپاکو کامیابی حاصل ہوئی۔انتخابات کے بعد نومنتخب صدر نے اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہاکہ ساہتیہ پریشدکے جوبھی اب تک کئے گئے کام نا مکمل ہیں ان کو اراکین کی رائے مشورے سے پوری کرنے کی ہر ممکن کوشش کی جائے گی۔جوبھی کامیابی حاصل ہونے پر انہوں نے ووٹرس کا شکریہ ادا کیا۔ اس موقع پر وارڈ کونسلر اے آر حنیف اللہ،جے ڈی ایس تعلقہ اقلیتی صدر آصف پاشاہ،پورا کرشنا،مہیش، کناکا راجو، بوجیندرا،باباجان اور دیگر موجود رہے۔

ایک نظر اس پر بھی

جے ڈی ایس امیدواروں کی جیت کے ذریعے پارٹی کارکن اپنی طاقت کا مظاہرہ کریں: انیتاکمارسوامی

بنگلورو دیہی لوکل باڈیز حلقے سے ریاستی قانون ساز کونسل کیلئے ہورہے انتخابات کو جے ڈی ایس پارٹی نے سنجیدگی سے لیاہے اور اس انتخابات میں پارٹی امیدواروں کوکامیاب کرکے پارٹی کارکنوں کو اپنی طاقت کا مظاہرہ کرناہوگا۔یہ بات رکن اسمبلی انیتاکمار سوامی نے کہی۔

منگلورو : طلبہ کے درمیان گروہی تصادم - کئی طلبہ ہوئے زخمی -  پولیس نے مارا ہاسٹل پر چھاپہ - 6 طالب علم گرفتار ۔ مقامی لوگوں کا احتجاج ۔ ہاسٹل خالی کروانے کا مطالبہ  

شہر کے ایک ڈگری کالج میں زیر تعلیم اور گوجرکیرے علاقے میں واقع ہاسٹل میں قیام پزیر طلبہ کے دو گروہ آپس میں لڑ پڑے جس کے نتیجے میں بعض طلبہ زخمی بھی ہوگئے ۔ مار پیٹ اور تصادم کی اطلاع ملنے پر پولیس نے دیر رات ہاسٹل پر چھاپہ مار کر کئی طالب علموں کو گرفتار کر لیا ۔

چامنڈی پہاڑ پر زمین کھسکنے کے واقعات: نندی مجسمے کے راستے کو پیدل چلنے والے راستہ میں تبدیل کرنے اپیل

گزشتہ چند دنوں سے میسورو ضلع میں مسلسل بارشوں کی وجہ سے میسور کے قریب واقع چامنڈی پہاڑ پر زمین کھسکنے کے واقعات پیش آرہے ہیں جس کی وجہ سے پہاڑ پر واقع چامنڈیشوری دیوی کے درشن کو پہنچنے والے زائرین کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔