ساری توجہ کورونا پر ہے تو کیا دیگر مریض مرجائیں۔۔۔ ؟؟ اسپتالوں میں علاج دستیاب نہ ہونے کے سبب غیر کورونا مریضوں کی اموات میں بے تحاشہ اضافہ

Source: S.O. News Service | Published on 6th July 2020, 12:56 PM | ریاستی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بنگلورو،6؍جولائی (ایس او نیوز) شہر بنگلورو میں کورونا وائرس جس تیزی سے پھیل رہا ہے اس کے ساتھ شہر میں صحت کا انفرسٹرکچر سرکاری سطح پر کس قدر ناقص ہے وہ سامنے آرہا ہے اس کے ساتھ ہی یہ بات بھی سامنے آرہی ہے کہ بڑے بڑے اسپتال کھول کر انسانیت کی خدمت کرنے کا دعویٰ کرنے والے تجاری اداروں کے دعوے کورونا وائرس کے اس آزمائشی دور میں کس قدر کھو کلے ہیں۔

جہاں تک کورونا وائرس سے متاثر مریضوں کے علاج کا تعلق ہے ان کے لئے اب بستروں کی کمی کھلنے لگی ہے اور سرکاری اور نجی اسپتالوں میں بستروں کے تعین کے باوجود بھی یہ خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ کورونا متاثرین کے علاج کے لئے یہ بستر کم پڑسکتے ہیں۔ سارے اسپتالوں میں علاج اور معالجے کی توجہات صرف کورونا وائرس کے مریضوں کی طرف مرکوز ہو کر رہ گئی ہے اور اس کا خمیازہ ان مریضوں کو بھگتنا پڑرہا ہے جو عام بیماریوں میں مبتلا ہیں ۔ کسی بھی علاج کے لئے اگر لوگ اسپتالوں سے رجوع ہورہے ہیں تو ان کا علاج کرنے کی بجائے انہیں  گھر لوٹا دیا جارہے ہے۔

اب صورتحال اور بھی سنگین اس طرح سے ہوگئی ہے کہ تقریباً تین مہینوں سے شہر کے بیشتر سرکاری اسپتال عوام کے لئے بند پڑے ہوئے ہیں اور ان اسپتالوں میں علاج سے محروم بیشتر افراد کی صحت میں بگاڑ پیدا ہوگیا اور کہا جارہا ہے کہ شہر میں کورونا وائرس سے ہٹ کر شرح اموات میں اضافہ کی یہ بھی ایک اہم وجہ ہے۔ جیسے ہی ذیابیطس ، قلبی امراض ، کینسر ، گردوں کے امراض کے مریضوں کی حالت میں غیر معمولی بگاڑ پیدا ہورہا ہے ان کو فوری طور پر علاج فراہم کرنے کے لئے ان کے اقرباء  کی طرف سے اسپتالوں کے چکر کاٹنے کا سلسلہ شروع ہوجاتا ہے اور اکثر علاج کی جستجو میں مریضوں کی موت بھی واقع ہورہی ہے یا پھر گھروں میں ہی مناسب علاج میسر نہ ہونے کے سبب لوگوں کی موت ہورہی ہے ۔ جن لوگوں کی گھروں میں حالت بگڑرہی ہے اور ان کو آخری لمحات میں بچانے کی امید کے ساتھ اسپتالوں سے رجوع کیا جارہا ہے ایسے مریضوں کو اسپتالوں میں یا تو داخلہ نہیں دیا جارہا ہے اور اگر اسی دوران اس مریض کی موت واقع ہو جائے تو مریض کو اسپتال میں مردہ قرار دے کر لوٹا دیا جارہا ہے ۔ گزشتہ 10-15 دنوں سے شہر میں اس طرح کے رجحان نے غیر معمولی شدت اختیار کر لی ہے جس کے نتیجے میں غیر کورونا وائرس اموات کی شرح میں اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔

اس سلسلہ میں جلوس محمد ی کمیٹی کے جنرل سکریٹری اور میسورو روڈ قبرستان کی مجلس منّظمہ کے کنوینر افسر بیگ قادری نے بتایا کہ مریضوں کو اسپتالوں میں بروقت علاج کی فراہمی میں لا پروائی کے نتیجے میں غیر کورونا وائرس اموات کی تعداد میں گزشتہ دو ہفتوں کے دوران زبردست اضافہ ہوچکا ہے ۔

ان کا کہنا ہے کہ  بنگلورو شہر کے وکٹوریہ ، بورنگ، کے سی جنرل تین بڑے اسپتال میں یہاں روزانہ علاج کے لئے ہزاروں مریض شہر بنگلورو ہی نہیں بلکہ ریاست کے کونے کونے سے آتے ہیں اگر ان تینوں اسپتالوں کو مکمل طور پر کووڈ اسپتال قرار دے دیا گیا تو حکومت کو چاہئے تھا کہ ان اسپتالوں میں علاج کے لئے رجوع ہونے والے مریضوں کے لئے متبادل انتظام کرتی لیکن ایسا کچھ نہیں کیا گیا ۔ اب حکومت اس کوشش میں ہے کہ شہر کے تقریباً 100 برائیویٹ اسپتالوں میں کووڈ کے علاج کی سہولت فراہم کرے۔ اگر ان اسپتالوں کو بھی کووڈ کے لئے مخصوص کردیا گیا تو عام مریض اپنے علاج کے لئے کہا ں جائیں گے؟ ۔

ان کا کہنا ہے کہ کووڈ متاثرین کے علاج کے ساتھ ساتھ حکومت کو دیگر امراض میں مبتلا لوگوں کے علاج کے لئے بھی انتظام کروانا چاہئے۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ کووڈ مریضوں کے علاج پر پوری توجہ مرکوز کر کے دیگر مریضوں کو مرنے کے لئے چھوڑ دیا جائے۔

ایک نظر اس پر بھی

ملک کے وزیرداخلہ کے بعد اب کرناٹک کے وزیراعلیٰ کی کورونا رپورٹ بھی نکلی پوزیٹیو؛ کرناٹک میں آج بھی کورونا کے معاملات پانچ ہزار سے زائد

کرناٹک کے وزیراعلیٰ بی ایس یڈی یورپا نے ٹویٹ کرتے ہوئے خبر دی ہے کہ اُن کی کوویڈ۔19 رپورٹ آج اتوار کو  پوزیٹیو پائی گئی ہے۔ رات قریب 11:30 بجے ٹویٹ کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ ویسے تو وہ بالکل ٹھیک ٹھاک ہیں لیکن ڈاکٹروں کی ہدایت پر   احتیاطاً   اسپتال میں  ایڈمٹ ہوگئے ہیں۔

کرناٹک کے ضلع گدگ میں ماں نے اپنے بچوں کی تعلیم کے لئے ٹی وی خریدنے کے لئے "منگلسوتر" بیچ دیا

ریاست کرناٹک کے ضلع گدگ کی ایک خاتون نے کووڈ 19 وباء کے درمیان ٹی وی کے ذریعے کلاس جاری رکھنے کے کرناٹک حکومت کے فیصلے کے بعد اپنے بچوں کے لئے ٹیلی ویژن سیٹ خریدنے کے لئے اپنا "منگلسوتر" فروخت کر دیا۔

مینگلور کے سابق ایم ایل سی ایوان ڈیسوزا کی رپورٹ کورونا پوزیٹیو آتے ہی رکن اسمبلی یو ٹی قادر نے کیا ہوم کورنٹائن کا اعلان

سابق ایم ایل سی ایوان ڈیسوزا کی رپورٹ کورونا پوزیٹیو آنے کی اطلاع کے اگلے ہی روز رکن اسمبلی یوٹی قادر نے اتوار کو  اعلان کیا کہ وہ خود سے ہی ہوم کورنٹائن ہوگئے ہیں کیونکہ وہ ایوان ڈیسوزا کے ابتدائی رابطے میں تھے۔

منگلورو:کووِڈ سے فوت ہونے والوں کی آخری رسومات ان کے گھر والے ادا کرسکیں گے۔جنوبی کینرا اور اڈپی ضلع انتظامیہ کی مشروط اجازت

منگلورو کے اسسٹنٹ کمشنر مدن موہن کے بیان کے مطابق اب کووِڈ کی وجہ سے فوت ہونے والوں کی آخری رسومات اگر ان کے گھر والے اداکرنا چاہیں تو مشروط طور پر وہ یہ کام کرسکیں گے۔

کیاکرناٹکا میں قابو میں آرہا ہے کورونا ؟ پانچ ہزار سے زائد معاملات آنے کا سلسلہ جاری،اُڈپی اور مینگلور میں ایک ہی دن دس اموات

کرناٹک میں آج پھر ایک بار پانچ ہزار سے زائد کورونا کے معاملات درج کئے گئے ہیں البتہ  آج بنگلور میں  کورونا سے متاچڑہ لوگوں کی تعداد جو کافی دنوں سے  دو ہزار کو پار کررہی تھی، آج دو ہزار  سے  گھٹ گئی۔ راحت کی دوسری خبر یہ بھی رہی کہ آج ایک ہی دن 3860 لوگ ڈسچارج بھی ہوئے۔

بھاسکر راؤ نے بنگلورو پولیس کا شکریہ ادا کیا

کمل پنت کو شہر بنگلور کا نیا پولیس کمشنر مقررکیاگیا ہے۔ سبکدوش ہونے والے پولیس کمشنر بھاسکر راؤ نے وائرلیس کے ذریعہ شہرکی پولیس کا شکریہ ادا کیا کہ ان کی میعاد میں پولیس نے ان کا بھرپور تعاون کیا۔

”دہلی کا فساد بدلے کی کارروائی تھی۔ پولیس نے ہمیں کھلی چھوٹ دے رکھی تھی“۔فسادات میں شامل ایک ہندوتوا وادی نوجوان کے تاثرات

دہلی فسادات کے بعد پولیس کی طرف سے ایک طرف صرف مسلمانوں کے خلاف کارروائی جاری ہے۔ سی اے اے مخالف احتجاج میں شامل مسلم نوجوانوں اور مسلم قیادت کے اہم ستونوں پر قانون کا شکنجہ کسا جارہا ہے، جس پر خود عدالت کی جانب سے منفی تبصرہ بھی سامنے آ چکا ہے۔

کیا ’نئی قومی تعلیمی پالیسی‘ ہندوستان میں تبدیلی لا سکے گی؟ .........آز: محمد علم اللہ

ایک ایسے وقت میں جب کہ پورا ہندوستان ایک خطرناک وبائی مرض سے جوجھ رہا ہے، کئی ریاستوں میں سیلاب کی وجہ سے زندگی اجیرن بنی ہوئی ہے، مرکزی کابینہ نے آنا فانامیں نئی تعلیمی پالیسی کو منظوری دے دی۔جب کہ سول سوسائٹی اور اہل علم نے پہلے ہی اس پر سوالیہ نشان کھڑے کئے تھے اوراسے ایک ...

ملک پر موت اور بھکمری کا سایہ، حکومت لاپرواہ۔۔۔۔ از: ظفر آغا

جناب آپ امیتابھ بچن کے حالات سے بخوبی واقف ہیں۔ حضرت نے تالی بجائی، تھالی ڈھنڈھنائی، نریندر مودی کے کہنے پر دیا جلایا، سارے خاندان کے ساتھ بالکنی میں کھڑے ہو کر 'گو کورونا، گو کورونا' کے نعرے لگائے، اور ہوا کیا! حضرت مع اہل و عیال کورونا کا شکار ہو کر اسپتال پہنچ گئے۔

بھٹکل نیشنل ہائی وے کنارے پر مچھلی اور ترکاری کا لگ رہا ہے بازار۔ د ن بھر سنڈے مارکیٹ کا منظر

جب سے بھٹکل میں کورونا وباء کی وجہ سے لاک ڈاؤن کا سلسلہ شروع ہواتھا، تب سے ہفتہ واری سنڈے مارکیٹ اور مچھلی مارکیٹ بالکل بند ہے۔ لیکن ترکاری، فروٹ اور مچھلی کے کاروباریوں نے نیشنل ہائی وے، مین روڈ اور گلی محلوں کی صورت میں اس کا دوسرا نعم البدل تلاش کرلیا ہے۔

بابری مسجد کے "بے گناہ" مجرم ............ تحریر: معصوم مرادآبادی

بابری مسجد کا انہدام صدی کا سب سے گھناؤناجرم تھا۔ 6 دسمبر1992کو ایودھیا میں اس پانچ سو سالہ قدیم تاریخی عبادت گاہ کو زمیں بوس کرنے والے سنگھ پریوار کے مجرم خودکو سزا سے بچانے کے لئے اب تک قانون اور عدلیہ کے ساتھ آنکھ مچولی کھیلتے رہے ہیں۔ایک طرف تو وہ اس بات پر فخر کا اظہار کرتے ...