اُترکنڑا میں کورونا کے پھر 37 معاملات؛دکشن کنڑا میں 131 اور اُڈپی میں 53 پوزیٹیو؛ کیا پھر لاک ڈاون ہوگا ؟

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 14th July 2020, 12:42 AM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

بھٹکل 13جولائی (ایس اونیوز) اُترکنڑا میں آج کورونا کے پھر 37 نئے معاملات سامنے آئے ہیں جس میں صرف بھٹکل سے ہی 20 پوزیٹیو کیسس ہیں۔اُڈھر پڑوسی ضلع اُڈپی میں 53، جبکہ دکشن کنڑا میں 131 کیسس سامنے آئے ہیں۔

کرناٹکا  بالخصوص ساحلی علاقوں میں بھی کورونا کے روز بروز معاملات کو دیکھتے ہوئے یہاں پھر ایک بار لاک ڈاون ڈالنے اور عوام کی چہل پہل پر روک لگانے کی باتیں کی جانے لگی ہیں۔

بھٹکل میں آج جو 20 معاملات سامنے آئے ہیں اُس میں ماولّی سے چار،  جالی سے دو،  بیلور سے دو اور مُٹھلی سے دو لوگ  شامل ہیں، جبکہ سرکاری اسپتال کی ایک اسٹاف کی رپورٹ بھی پوزیٹیو آنے کی اطلاع ملی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ  علوہ اسٹریٹ، آزاد نگر اور سلطان اسٹریٹ وغیرہ سے بھی بعض لوگوں کی رپورٹ کورونا پوزیٹیو آئی ہے۔

بھٹکل کے ساتھ ساتھ کمٹہ، ہلیال ، ہوناور، کاروار،  یلاپور اور سرسی میں بھی بعض لوگوں کی رپورٹ کورونا پوزیٹیو آنے کی اطلاعات ہیں، مگر وہاں کتنے کتنے  لوگوں کی رپورٹ پوزیٹیو ہے اُس کی مکمل رپورٹ موصول نہیں ہوسکی ہے۔

48 لوگ ڈسچارج:  گذشتہ تین دنوں سے بھٹکل ویمن سینٹر اور بھٹکل تعلقہ سرکاری اسپتال سے صحت یاب ہونے اوردوسری رپورٹ نیگیٹیو آنے پر اب تک 48 لوگوں کو دسچارج کرکے گھر جانے کی اجازت دی گئی ہے۔ مگر ابھی بھی ویمن سینٹر میں 70 سے زائد لوگ اورسرکاری اسپتال میں 30 سے زائد لوگ ایڈمٹ ہیں۔  اس دوران بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر بھرت نے اطلاع دی ہے کہ آج جس طرح 20 لوگوں کی رپورٹ پوزیٹیو آئی ہے اُسی طرح 128 لوگوں کی رپورٹ نیگیٹیو بھی آئی ہے۔

اس کے ساتھ ساتھ شہر کے ایک پرائیویٹ ہوٹل میں اور علی پبلک اسکول میں  دبئی سے آئے ہوئے تمام لوگ کورنٹائن میں ہیں جن کےابھی تک تھوک کے نمونے جانچ کے لئے روانہ نہیں کئے گئے ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ ان تمام لوگوں کو 14 دنوں تک  کورنٹائن میں رہنا   ہوگا، البتہ کل پرسو میں ان کے نمونے جانچ کے لئے روانہ کئے جاسکتے ہیں اور رپورٹ نیگیٹیو آنے کی صورت میں 14 دن مکمل کرنے پر گھر جانے کی اجازت دی جاسکتی ہے۔

مینگلور کے ساتھ اُڈپی میں بھی بڑھ رہے ہیں کورونا کے معاملات:   اُترکنڑا کے ساتھ ساتھ ادھر پڑوسی اضلاع اُڈپی اور جنوبی کینرا میں بھی کورونا کے معاملات میں بے تحاشہ اضافہ دیکھا جارہا ہے جس کے نتیجے میں نہ صرف عوام الناس میں بلکہ ضلعی انتظامیہ میں بھی سخت تشویش پائی جارہی ہے۔  مینگلور میں ایک طرف جمعرات 16 جولائی سے  ایک ہفتہ کے لئے مکمل لاک ڈاون کا اعلان کیا گیا ہے تو وہیں پڑوسی ضلع اُڈپی کی سرحدوں کو سیل ڈاون کرکے تمام سواریوں کے ضلع میں داخلے پر ہی پابندی عائد کئے جانے کے تعلق سے غور کیا جارہا ہے۔

اُڈپی کے ڈپٹی کمشنر جی جگدیش نے آج پیر کو اخبارنویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ  ضلع میں جس طرح سے کورونا کے معاملات بڑھ رہے ہیں اُسے دیکھتے ہوئے سرحدوں کو سیل ڈاون کرنے کے تعلق سے سوچا جارہا ہے ، انہوں نے کہا کہ   کل منگل کو  عوامی نمائندوں کے ساتھ ایک میٹنگ منعقد کی جائے گی اور  اُڈپی کو لاک ڈاون کرنا ہے یا نہیں کرنا ہے، اس تعلق سے  فیصلہ لیا جائے گا۔

بھٹکل میں عوامی چہل پہل جاری:  بھلے ہی بھٹکل میں کورونا کے معاملات میں اضافہ دیکھا جارہا ہو اور سوشیل میڈیا میں یہ باتیں پھیلائی جارہی ہوں کہ بھٹکل کے عوام میں  کورونا کو لے کر خوف وہراس پھیلایا جارہا ہو، مگر بھٹکل میں عوامی چہل پہل برابر جاری ہے اور اُس میں کسی بھی طرح کا کوئی فرق نظر نہیں آیا، آج بھی صبح سے دوپہر لاک ڈاون سے پہلے تک بازاروں میں عوام کثیر تعداد میں بازاروں میں نظر آئے، سواریوں کی کافی ہلچل رہی، ہمیشہ کی طرح دوپہر کے وقت ماری کٹہ پر ٹریفک کا اژدھام رہا،  کئی لوگ خواتین اور بچوں کے ساتھ خریداری کرتے نظر آئے اورعوامی چہل پہل نے ثابت کردکھایا کہ بھٹکل کے عوام  میں کورونا کو لے کر کسی طرح کا کوئی خوف نہیں ہے اور عام زندگی معمول کے مطابق چل رہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کووِڈ اَپ ڈیٹ: ضلع شمالی کینرا میں بھٹکل میں 15 متاثرین سمیت99نئے پوزیٹیو معاملات۔کاروار میں ضلع پنچایت سی ای او کی رپورٹ بھی نکلی پوزیٹیو 

ضلع شمالی کینرا میں بدھ کی شام کو ملنے والی رپورٹ کے مطابق جملہ 99افراد کی رپورٹ پوزیٹیو آئی ہے جس میں ضلع پنچایت کے چیف ایکزیکٹیو بھی شامل ہیں۔جبکہ آج 74مریض صحت یا ب ہوکر اسپتال سے ڈسچارج ہوئے ہیں۔

 بھٹکل جالی پٹن پنچایت کی نئی عمارت کی تعمیرروک دی جائے۔ پنچایت اراکین نے کیا اسسٹنٹ کمشنر سے مطالبہ 

بھٹکل جالی پٹن پنچایت کے اراکین نے اسسٹنٹ کمشنرکو میمورنڈم دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ ایڈمنسٹریٹر کی حیثیت سے تحصیلدار نے جالی پٹن پنچایت کی نئی عمارت تعمیر کرنے کا جو کام شروع کیا ہے

اننت کمار ہیگڈے نے لگایابی ایس این ایل میں دیش دروہی افسران موجود ہونے کا الزام

اپنے متنازعہ بیانات کے لئے پہچانے جانے والے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے الزام لگایا کہ بھارت سنچار نگم لمیٹڈ کے اندر دیش دروہی افسران بیٹھے ہوئے جس کی وجہ سے اس کے کام کاج میں کوئی ترقی نہیں ہورہی ہے۔ اس لئے آئندہ دنوں میں اس کی نج کاری (پرائیویٹائزیشن) کیا جائے گا۔

ایم پی اننت کمار ہیگڈے کا بھٹکل دورہ؛ 23.72کروڑ روپے کے ترقیاتی منصوبوں کو دکھائی ہری جھنڈی

پیر کو رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے بھٹکل کا دورہ کرتے ہوئے  بھٹکل تعلقہ میں ’پردھان منتری گرام سڑک یوجنا‘کے تحت 23.72کروڑ روپے لاگت کے مختلف ترقیاتی منصوبوں کو ہری جھنڈی دکھائی۔ وہ یہاں ماروتی نگر میں بی جے پی تعلقہ آفس کا افتتاح کرنے کے بعد خطاب کررہے تھے۔

کرناٹک میں ایک ہی دن 6257 کورونا پوزیٹیو معاملات ، 86 اموات

کرناٹک میں کورونا وائرس کا خوفناک پھیلاؤ رکنے اور تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے، ہر گزرتے لمحے اور دن کے ساتھ کورونا وائرس کے نئے معاملات میں اضافہ ہی ہوتاجار ہا ہے۔ ریاست میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا متاثرین کی تعداد تشویشناک حد تک اضافہ یکھا جارہا ہے۔ ریاست میں ایک ہی دن ...

کرناٹک: ایس ایس ایل سی سپلیمنٹری امتحانات ستمبر میں منعقد کئے جائینگے

ایس ایس ایل سی سپلیمنٹری امتحان آئندہ ماہ ستمبر میں منعقد کئے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور دو ایک دن میں امتحان کی تاریخ اور ٹائم ٹیبل کا اعلان کردیا جائے گا۔ یہ بات کرناٹک سکینڈری ایگزامنیشن بورڈ کی ڈائرکٹر وی سو منگلا نے کہی۔

بنگلور میں احتجاجیوں اور پولس کے درمیان زبردست جھڑپ؛ پولس فائرنگ میں دو کی موت؛ فیس بُک پر توہین آمیز پوسٹ پرعوام نے کیا تھا پولس تھانہ کا گھیراو

 فیس بُک پر مبینہ طور پر  پیغمبر اسلام حضرت محمد ﷺ کے خلاف توہین آمیز مسیج پوسٹ کرنے پر سخت برہمی ظاہر کرتے ہوئے بنگلور کے جی ہلی پولس تھانہ کے باہر  جمع ہوکرایک فرقہ کے لوگوں نے جب احتجاج کیا تو یہی احتجاج بعد میں تشدد میں تبدیل ہوگیا جس کے نتیجے میں بتایا جارہا ہے کہ ...

اننت کمار ہیگڈے نے لگایابی ایس این ایل میں دیش دروہی افسران موجود ہونے کا الزام

اپنے متنازعہ بیانات کے لئے پہچانے جانے والے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے الزام لگایا کہ بھارت سنچار نگم لمیٹڈ کے اندر دیش دروہی افسران بیٹھے ہوئے جس کی وجہ سے اس کے کام کاج میں کوئی ترقی نہیں ہورہی ہے۔ اس لئے آئندہ دنوں میں اس کی نج کاری (پرائیویٹائزیشن) کیا جائے گا۔

بنگلور: ٹرانسفرس کے احکامات ملتوی کرانے میں مبینہ طور پر با رسوخ اساتذہ کی لابی شامل، چار سال سے ڈگری کالجوں کے لکچررس کے تبادلے نہیں ہوسکے

ریاست کرناٹک کے سرکاری فرسٹ گریڈ کالجوں میں خدمات انجام دے رہے لکچررس کے تبادلے نہیں ہوسکے ہیں، جس کے سبب انہیں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اس تعلق سے الزامات لگائے جارہے ہیں کہ  چند با رسوخ لکچررس کی طرف سے سیاسی اثر و رسوخ کا استعمال کرکے تبادلوں کی کاروائی ملتوی ...