مہمان اداریہ https://www.sahilonline.net/ur/guest-editorial ساحل آن لائن: ریاست کرناٹک سے شائع ہونے والا تین زبانوں کا منفرد نیوز پورٹل جو ساحلی کینرا کی خبروں کے ساتھ ساتھ ریاستی، قومی اور بین الاقوامی خبروں سے آپ کو باخبر رکھتا ہے۔ مہمان اداریہ اے پی سی آر ۔ حق کی لڑائی میں نیا کاروان ۔۔۔۔ ازقلم: مدثر احمد https://www.sahilonline.net/ur/apcr-fight-for-truth-editorial-by-mudassir-ahmed ہندوستان میں جمہوری نظام اور مسلمانوں کے مسائل پر قانونی کارروائی کرنے والی تین تنظیمیں ہیں ان میں جمیعت العلماء ہند ، اے پی سی آر اور پاپولر فرنٹ آف انڈیا ہر طرح سے مسلمانوں کے قانونی مسائل پر لڑائی لڑنے کے پابند ہیں ، ان میں سب سے زیادہ سرگرم تنظیمیں جمیعت العلماء ہند اور اے پی سی ہیں جو دہشت گردی کے معاملات سے لے کر ملک میں  بنائے جارہے نت نئے قوانین جو عوام کے مفاد میں  نہیں  ہیں انکے لئے قانونی چارہ جوئی کررہے ہیں ۔ اس بار مسلمان ناکام کیوں؟ کہاں ہے1985کا پرسنل لاء بورڈ،جس کی حکمت عملی نے حکومت وقت کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیا تھا ؟ (روزنامہ سالار کی خصوصی رپورٹ) https://www.sahilonline.net/ur/muslim-personal-law-board-1985-special-report مودی حکومت کی ہٹ دھرمی، سیاسی چال بازی اور مسلم پرسنل لاء بورڈ کی سیاسی غیرشعوری، مسلم تنظیموں کی غیر دانشمندی اور پورے مسلمانوں کی نااہلی و آپسی نااتفاقی کی وجہ سے ایک نشست میں تین طلاق کا بل راجیہ سبھا سے بھی منظور ہوگیا-اب اسے صدر ہند کے پاس رسمی طور پر بھیجاجائے گا جہاں دستخط کے بعد وہ ایک ایسی سیاہ تاریخ بن جائے گا،جس میں تین طلاق دینے والے مسلم مردوں کو جیل کی سلاخوں کے پیچھے ڈال دیاجائے گا اور بچوں سمیت بیوہ خاتون کو سڑکوں پر دربدر ٹھوکر کھانے کیلئے چھوڑ دیاجائے گا-اب تو سمجھ لیناچاہئے کے مودی حکومت کیا چاہتی ہے؟مسلمانوں کو ہندوستان میں وہ کیا حیثیت دینا چاہتی ہے؟ آر ایس ایس کی طرح کوئی مسلم تنظیم کیوں نہیں؟ از: ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز https://www.sahilonline.net/ur/why-not-a-muslim-organization-like-rss-article-by-dr-syed-fazil-hussain-parvez مسٹر نریندر مودی کی تاریخ ساز کامیابی پر بحث جاری ہے۔ کامیابی کا سب کو یقین تھا مگر اتنی بھاری اکثریت سے وہ دوبارہ برسر اقتدار آئیں گے اس کا شاید کسی کو اندازہ نہیں تھا۔ دنیا چڑھتے سورج کی پجاری ہے۔ کل ٹائم میگزین نے ٹائٹل اسٹوری مودی پر دی تھی جس کی سرخی تھی ”India’s Divider in Chief“۔ گاندھی سے گوڈسے کی طرف پھسلتے ہوئے انتخابی نتائج   ۔۔۔۔    اداریہ: کنڑاروزنامہ ’وارتا بھارتی‘   https://www.sahilonline.net/ur/vartha-bharati-editorial-on-lok-sabha-election-results-2019 لوک سبھا انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے  اور بی جے پی کو تاریخ سازکامیابی حاصل ہونے پر مینگلور اور بنگلور سے ایک ساتھ شائع ہونے والے کنڑا روزنامہ وارتھا بھارتی نے  بے باک  اداریہ لکھا ہے، جس کا اُردو ترجمہ بھٹکل کے معروف صحافی ڈاکٹر محمد حنیف شباب صاحب نے کیا ہے،  ساحل ا ٓن لائن کے قارئین کے لئے اسے  پیش کیا جارہا ہے: اتر پردیش میں لاقانونیت: بلند شہر میں پولیس پر حملہ۔منظم طور پر گؤ رکھشکوں کے بڑھائے گئے حوصلوں کا نتیجہ۔۔۔(ٹائمز آف انڈیا کا اداریہ ) https://www.sahilonline.net/ur/uttara-pradesh-bulandshahr-mob-violence-editorial-by-dr-haneef-shabab اتر پردیش کے بلند شہر ضلع میں مبینہ طور پر گؤ کشی کے خلاف احتجاجی ہجوم کی جانب سے پولیس پر دہشت انگیز حملہ اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ گؤ رکھشکوں کے حوصلے کس حد تک بلند ہوگئے ہیں۔ زندہ قومیں شکایت نہیں کرتی ہیں، بلکہ پہاڑ کھود کر راستے بنا لیتی ہیں ..... آز: ڈاکٹر ظفر الاسلام خان https://www.sahilonline.net/ur/existent-communities-do-not-complain-they-make-roads-digging-the-mountains-article-by-dr-zafrul-islam-khan بہت عرصہ قبل میں نے ایک انگریز مفکر کا مقولہ پڑھا تھا کہ جب تک میری قوم میں ایسے سر پھرے موجود ہیں جو کسی نظریے کو ثابت کرنے کے لئے اپنا گھر بار داؤ پر لگاکر اس کی تحقیق کرتے رہیں، کسی چیز کی تلاش میں صحراؤں میں گھومتے رہیں اور پہاڑوں کی اونچی چوٹیوں کو سر کرنے کی جد وجہد کرتے نظرآتے رہیں، اس وقت تک مجھے اپنی قوم کے بارے میں کوئی پریشانی نہیں ہے۔ حکومت کی ممبئی فراموشی کا نتیجہ  https://www.sahilonline.net/ur/editorial-on-elphinstone-stampede ممبئی میں الفنسٹن روڈ اور پریل ریلوے اسٹیشنوں کو جوڑنے والے پل کی تنگی ، موسلادھار بارش ، شدید بھیڑ بھاڑ کا وقت، کئی ٹرینوں کے مسافروں کا دیر سے اسٹیشن اور پُل پر موجود ہونا، گوری لنکیش کے قتل میں قانون کی ناکامی کا کتنا ہاتھ؟ وارتا بھارتی کا اداریہ ............ (ترجمہ : ڈاکٹر محمد حنیف شبابؔ ) https://www.sahilonline.net/ur/murder-of-gauri-lankesh-and-failure-of-law-authoriday-editorial-by-kannada-vartha-bharathi-mangalore-translated-by-dr-haneef-shabab گوری لنکیش کے قاتل بہادر تو ہوہی نہیں سکتے۔ساتھ ہی وہ طاقتور اورشعوررکھنے والے بھی ہیں۔ہم اندازہ لگاسکتے ہیں کہ ایک تنہا اور غیر مسلح عورت پر سات راؤنڈگولیاں چلانے والے کس حد تک بزدل اورکس قسم کے کمینے ہونگے۔مہاتما گاندھی کو بھی اسی طرح قتل کردیا گیا تھا۔وہ ایک نصف لباس اور لوٹے والے فقیر تھے۔ صرف زبان پر رام نام کے علاوہ ان کے پا س کوئی بھی ہتھیار نہیں تھا۔سخت ضعیفی الگ تھی۔ایسی شخصیت کا مقابلہ فکر اور سوچ کی سطح پر کرنے کی طاقت نہ رکھنے اور انہیں گولی مارکر ہلاک کرنے والے گوڈسے کی نسل کے لوگ پورے ملک میں اسی بزدلانہ انداز میں پرتشدد سرگرمیوں کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔ گوری لنکیش کا نہیں ،جمہوریت کا قتل .. ۔۔۔ . روزنامہ سالار کا اداریہ https://www.sahilonline.net/ur/editorial-on-gauri-lankesh ہندوستان میں بڑھتی ہوئی نفرت ، عدم رواداری اور عدم برداشت کی مسموم فضاؤں نے گزشتہ 3سال کے دوران کئی ادیبوں ، قلم کاروں اور سماجی کارکنوں کی جانیں لی ہیں اور اس پر مرکزی حکومت کی خاموشی نے آگ میں گھی کا کام کیا ہے۔ اگست ،ستمبرمیں فلو کے خطرات اور ہماری ذمہ داریاں از:حکیم نازش احتشام اعظمی https://www.sahilonline.net/ur/article-on-flu-risks-and-our-responsibility لگ بھگ سات برسوں سے قومی دارلحکومت دہلی سمیت ملک کی متعدد ریاستوں ، مرکز کے زیر انتظام علاقوں اورملک کے لگ بھگ سبھی صوبوں کو ڈینگو،چکن گنیا،اوراس کے خاندان سے تعلق رکھنے والے دیگر مہلک ترین فلوٗ نے سراسیمہ کررکھا ہے۔ مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کے ساتھ بدترین سلوک کے لئے مودی حکومت اور بی جے پی پر کڑی تنقید۔۔۔ نیویارک ٹائمز کا اداریہ https://www.sahilonline.net/ur/new-york-times-slams-modi-govt-for-indias-rising-intolerance مودی حکومت کے برسراقتدار آنے کے بعد ملک میں بڑھتی ہوئی عدم رواداری اور مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کے ساتھ بیف کے نام پر ہجوم کے ہاتھوں سر زد ہونے والی پرتشدد کارروائیوں کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے نیو یارک ٹائمز نے17جولائی کو جو اداریہ تحریر کیاہے اس کا ترجمہ ذیل میں پیش کیا جاتا ہے: گائے اور ہندُوتو: جھوٹ اور سچ - آز: شمس الاسلام https://www.sahilonline.net/ur/cow-and-hindu-truth-and-wrong 'رام'، 'لو جہاد' اور 'گھر واپسی' (مسلمانوں و عیسائیوں کو جبریہ ہندو بنانا) جیسے معاملات کے بعد ہندُتووادی طاقتوں کے ہاتھ میں اب گئو رکشا کا ہتھیار ہے۔ مقدس گائے کو بچانے کے نام پر مسلمانوں اور دلتوں کو متشدد بھیڑ کے ذریعے گھیر کر مارپیٹ یہاں تک کہ قتل کر ڈالنے، ان کے اعضاء کاٹ  ڈالنے اور ان کے ساتھ لوٹ مار کرنے کے واقعات مسلسل ہو رہے ہیں۔ گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس کے بعد مرکزی حکومت کو دھمکی ۔۔۔۔۔ اعتماد کا اداریہ https://www.sahilonline.net/ur/right-wing-hindu-groups-threatened-special-report گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس میں مرکزی حکومت کو دھمکی دی گئی ہے کہ اگر وہ 2023تک ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر نہیں کروائے گی تو ہندو تنظیمیں خود وہاں مندر تعمیر کرلیں گے کوئی قانون یا عدالت کا پاس و لحاظ نہیں رکھا جائے گا جانوروں کی فروخت پر پابندی کے نام پر تنازعہ کھڑاکرنے کی ضرورت نہیں تھی (پرجا وانی کا اداریہ۔۔۔کنڑا سے ترجمہ) https://www.sahilonline.net/ur/no-need-to-create-conflict-on-the-ban-of-cattle-sales-editorial-of-kannada-daily-prajavani ذبح کرنے کے مقصد سے گائے، بیل، سانڈ، بھینس ، چھوٹے بچھڑے اور اونٹوں کو جانوروں کے میلے اور مارکیٹ میں بیچنے پرمرکزی حکومت کی طرف سے لگائی گئی  پابندی سے ایک بڑا تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے۔یہ پابندی اصل میں کوئی مناسب تدبیر ہی نہیں ہے۔ بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کو گؤ رکھشا کے سلسلے میں آر ایس ایس کی پالیسی عمل میں لانے کا الزام اپنے سر لینا پڑے گا۔اس سے سرکار کو فائدہ مل بھی سکتا ہے۔ لیکن اس کا بھاری نقصان دیش کی معیشت کو ہوگا۔ طلاق ثلاثہ پر سپریم کورٹ کا پانچواں دن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاسر ندیم الواجدی https://www.sahilonline.net/ur/triple-talaq-supreme-court-hearing-day-5-editorial-by-yaseer-nadeem-alwajidi ملت اسلامیہ کی تاریخ کے ایک اہم ترین مقدمے: طلاق ثلاثہ پر سپریم کورٹ کی کارروائی اپنے منطقی انجام کی طرف بڑھ رہی ہے۔ پانچویں دن وکلاء دفاع نے اپنے دلائل جاری رکھے اور ملت اسلامیہ کا بھر پور دفاع کیا۔ ہوشیار، خبردار۔۔۔۔۔۔۔از قلم : مدثر احمد https://www.sahilonline.net/ur/hoshiyar-khabardar-editorial-by-muddassir-ahmed جب ہندوستان کی سرزمین پر مغل ، نواب اور نظام حکومت کررہے تھے اس وقت انکے پاس جو مال و دولت اور خزانے تھے انہیں اگر وہ صحیح طریقے سے استعمال کرتے تو آج کے مسلمان کسی کی مدد کے طلبگار نہ ہوتے اور مسلمان قوم ایک عزت دار قوم بن کر اس ملک میں دوسروں پر حکومت کرتی یا کم از کم حکومتیں بنانے میں اہم رول ادا کرتی طلاق: مسلمانوں کا ایجنڈ ا کیا ہو؟ کنڑا ہفتہ وار’’ سنمارگہ‘‘ میں ایڈیٹر عبدالقادر کوکیلا کی تحریر https://www.sahilonline.net/ur/talaq-what-is-muslim-agenda-by-akkukkila-translationrauoof-ahmed-savanur ملک بھر میں جاری طلاق کی بحث کا سدباب دوطریقوں سےکرسکتےہیں۔ پہلا یہ ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی مرکزی حکومت پر پورا الزام دھر کر خاموش ہوجائیں۔ دوسرا انہی موضوعات کو بنیاد مان کر مسلم ملت کی داخلی ترقی کے لئے حکمت عملی ترتیب دیں ۔ طلاق کے گرد گھومنے والی ٹی وی چینلس کی بحث میں ہوسکتاہے اشتعال انگیزی ہو اور اخبارات میں شائع ہونے والے مضامین میں بھی مبالغہ آرائی ہو۔لیکن اس کامطلب ایسا نہیں ہے کہ مسلمانوں میں طلاق کی شرح بالکل صفر ہے، ہے نا! تو پھر مسلمانوں کے موجودہ حالات کیسے ہیں؟ جاسوسی اپنے ملک کے لئے؟ .... از : ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز https://www.sahilonline.net/ur/spying-for-own-country-special-report-by-dr-syed-fazil-hussin-editor-gawah پاکستان کی فوجی عدالت نے ہندوستان کے سابق نیوی کمانڈر کلبھوشن سدھیر یادو کو سزائے موت سنائی ہے۔ جس پر ہندوستان کا شدید ردعمل فطری ہے۔ خود پاکستانی میڈیا نے فوجی عدالت کے اس فیصلے کو بعید از قیاس اور ہند۔پاک کشیدگی میں مزید اضافے کا سبب قرار دیا۔ کلبھوشن کی سزا پر عمل آوری کب ہوگی ابھی اس بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے البتہ اس بات کے امکان کو مسترد نہیں کیا جاسکتا کہ اس فیصلے پر نظرثانی ہوسکتی ہے۔ پھر بھی یہ اندیشہ برقرار رہے گا کہ جس طرح سربجیت سنگھ کو معافی کے لئے بین الاقوامی سطح پر چلائی گئی تحریک کے باوجود پاکستان میں اسے سزائے موت دے دی گئی تھی۔ حالیہ الیکشن اور مسلمانوں کا لائحہ عمل۔۔۔۔از:ایس ۔ایم۔ ملک، ممبئی https://www.sahilonline.net/ur/the-election-process-and-muslims حالیہ ریاستوں اور ممبئی کے الیکشن کا بگل بج چکا ہے اور مسلمانوں میں اس بات کو لے کر کافی ہل چل بھی ہے کہ کس کوووٹ دیا جائے؟ ۔بی جے پی کے لئے یہ الیکشن اس لئے بے حد اہم ہے کہ اس الیکشن کی جیت خاص کریوپی،پنجاب،گوا،اس کے لئے کے الیکشن کو جتانے میں اہم رول ادا کرے گی۔ اس نے بہار میں نتیش کو واپس اپنے پالے میں کرلیا ہے۔ کانگریس اور مذہب و ذات کی سیاست از:حفیظ نعمانی https://www.sahilonline.net/ur/congress-aur-mazhab-o-zaath-ki-siyasat-hafiz-nomani سید فیصل علی سہارا کے گروپ ایڈیٹر ہیں۔ انھوں نے کانگریس کے ایک لیڈر غلام نبی آزاد سے اترپردیش میں کانگریس کی پالیسی کے بارے میں کھل کر گفتگو کی۔ فیصل صاحب نے معلوم کیا کہ ۲۰۱۲ء کے الیکشن میں کانگریس کو صرف ۲۸ سیٹیں ملیں جو اب تک کی سب سے کم سیٹیں تھیں۔ کوئی صورت نظر نہیں آتی ! https://www.sahilonline.net/ur/inquilab-editorial-koi-soorat-nazar-nahi-aati کوئی اور بحران ہوتا تو ممکن تھا کہ عوام پر اتنا اثر انداز نہ ہوتا جتنا کہ نوٹوں کا بحران اثر انداز ہورہا ہے۔ جب عوام کے ہاتھوں میں پیسہ ہی نہیں ہوگا تو کس بازار میں رونق رہے گی اور کون سی انڈسٹری چلے گی ؟ امن وانسانیت کی ہم آہنگی کے لئےمسرت آمیز سفر کنڑا روزنامہ کراولی منجاؤ میں بھٹکل کے وسنت دیواڑیگا کی خصوصی رپورٹ https://www.sahilonline.net/ur/bhatkal-pleasure-journey-for-peace-and-humanity-by-vasant-devadiga-jih-humanity-campaign دھماکوں میں مگن افق ، اپنی گڑگڑہٹ سے منہ کھولتی زمین ،بحالی کو برباد ی میں منتقل کرتی طوفانی ہوائیں بھی کسی ایک سہارے کے ذریعے اپنا وجود باقی رکھتے ہوئے خیال کرتی ہونگی کہ ہمارا کام ایسا تو نہیں ۔پونم کا چاند بھی ہمیشہ کے لئے وسیع سمندرپر نہیں رہتا، سنگھر ش یعنی تصادم کی آخری حد پر بھی امن و شانتی کی امید کو بچائے رکھنا فطرت کا اصول ہے۔ تمہارے درمیان رہ کر تمہاری طرح نہ ہوکر: کنڑا روزنامہ کراولی منجاؤ کا خصوصی اداریہ https://www.sahilonline.net/ur/live-among-youlike-not-being-karavali-munjau-editorial-by-gangadhar-hirregutti جماعت اسلامی ہند کی طرف سے ملک گیر سطح پر 21اگست تا04ستمبر تک منائی گئی ’’امن وانسانیت ‘‘مہم کے دوران اترکنڑا ضلع امن وانسانیت کمیٹی کا ایک وفد اترکنڑا ضلع اور ریاست گوا میں سب سے زیادہ شائع ہونے والے کنڑا روزنامہ ’’کراولی منجاؤ‘‘کے مدیر اعلیٰ گنگا دھر ہیرے گُتی سے ملاقات ک جمہوریت کا چوتھا ستون ہی منہدم ہوگیا تو ۔۔۔۔۔؟ از: ایم، اے ، کلّاپو۔منگلورو https://www.sahilonline.net/ur/if-the-fourth-pillar-of-democracy-by-ma-kallapu-mangalore ’’اس ملک میں اظہارِ رائے نام کی ایک آزادی بھی ہے،جس کے تحت تحریر ، تقریر، دھرنا، احتجاج کے ذریعے اپنے جذبات کا اظہار کئے جانے کا حق تمام کو ہے ہی۔ لیکن اس کے لئے سڑک پر ہنگامہ خیزی کرنے والوں کا پیدائشی حق سمجھنا خطرناک ہوگا۔ اس سلسلے میں ریاست کے کچھ میڈیا والے دوبارہ غوروفکر کرنے کی ضرورت ہے‘‘