صعدہ میں حوثیوں کا اسلحہ ڈپو یمنی فوج کے کنٹرول میں

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 26th December 2018, 11:45 AM | عالمی خبریں |

دبئی ؍ صنعا ء 26دسمبر ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) یمن کے صوبے صعدہ میں سرکاری فوج کو پیر کے روز حوثیوں کا ایک اسلحہ ڈپو ملا جس میں جدید ترین گائیڈڈ میزائل بھی موجود ہیں۔ اس ڈپو کو باغی ملیشیا اپنے ایک ٹھکانے سے فرار کے وقت چھوڑ گئی تھی۔عسکری ذرائع کے مطابق یہ ڈپو صعدہ صوبے کے شمال مشرق میں واقع ضلعے کتاف البقع کے نزدیک وادی آل بوجبارہ میں ملا جس کو کچھ عرصہ قبل آزاد کرایا گیا تھا۔ ڈپو میں بھاری اور درمیانے درجے کے ہتھیار موجود ہیں۔ذرائع نے باور کرایا کہ یمنی فوج نے کتاف ضلعے کی جانب اپنی پیش قدمی جاری رکھی ہوئی ہے اور وہ اس پر مکمل کنٹرول حاصل کرنے کے قریب ہے۔ادھر عرب اتحاد کے لڑاکا طیاروں نے صعدہ میں متعدد میزائل لانچنگ پیڈز کو تباہ کر ڈالا۔ حوثی ملیشیا ان مقامات کو فوج، دیہات اور شہریوں کے گھروں کو نشانہ بنانے کے واسطے استعمال میں لاتی تھی۔ اس سے قبل اتحادی طیاروں نے مجز ضلعے کے مختلف علاقوں اور سحر ضلعے میں باغیوں کے ٹھکانوں پر شدید بم باری کی۔دوسری جانب شمالی صوبے لحج کے ضلعے القبیطہ میں یمنی فوج نے باغیوں کے زیر قبضہ نئے ٹھکانے آزاد کرا لیے۔یمنی مسلح افواج کے میڈیا سینٹر نے عسکری ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ القبیطہ ضلعے کے مشرقی محاذ پر آزاد کرائے جانے والے علاقوں میں پہاڑی سلسلوں کے علاوہ کئی علاقے شامل ہیں ۔ جب کہ مغربی سمت الکرب اور الکعبین کے علاقوں کو باغیوں کے قبضے سے چھڑا لیا گیا۔ذرائع کے مطابق اس دوران ہونے والی گھمسان کی لڑائی میں باغی حوثی ملیشیا کے درجنوں جنگجو ہلاک اور زخمی ہو گئے اور عسکری ساز و سامان کو بھی شدید نقصان پہنچا۔

ایک نظر اس پر بھی

انڈونیشیا میں سیلاب اور تودے سے مرنے والوں کی تعداد 89 ہوئی

  انڈونیشیا کے مشرقی علاقے پاپوا میں سیلاب اور مٹی کے تودے گرنے سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 89 ہو گئی ہے اور لاپتہ 74 لوگوں کی تلاش کے لئے ریسکیو آپریشن چلایا جا رہا ہے۔ راحت رسانی مہم میں مصروف حکام نے منگل کو یہاں یہ اطلاع دی۔

پاکستان جیسے دوست ملک سے امریکہ کو ’خارش ‘ ہونے لگی : پاکستان کا ایٹمی پروگرام امریکہ کے لیے بڑا خطرہ ہے: مائیک پومپیو

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے اتوار کو ایک انٹرویو میں امریکی سلامتی کو درپیش پانچ بڑے مسائل بتاتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے ایٹمی پروگرام کے غلط ہاتھوں میں لگ جانے کا خدشہ ان میں سے ایک ہے۔