پونچھ میں پاک فوج نے کی جنگ بندی کی خلاف ورزی، خاتون کی موت

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th August 2017, 10:44 AM | ملکی خبریں |

جموں،12/اگست(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)پاکستانی فوج کی طرف سے جموں کشمیر کے پونچھ ضلع میں کنٹرول لائن (ایل او سی) کے پاس سرحدی دیہات اورہندوستانی چوکی کو نشانہ بنا کر آج کی گئی فائرنگ میں 40 سالہ ایک خاتون کی موت ہو گئی۔ حکام نے یہ معلومات دی۔دفاعی ترجمان نے بتایا کہ پاکستانی فوج نے بغیراشتعال کے ایل او سی کے قریب پونچھ سیکٹر میں صبح تقریبا سوا پانچ بجے چھوٹے اور خود کار ہتھیاروں سے اندھا دھند فائرنگ کی اور مارٹر کے گولے داغے۔سر حد ی چوکیوں پر تعینات ہندوستانی فوج کے جوانوں نے اس کا پختہ اور مؤثر طریقے سے جواب دیا۔انہوں نے بتایا کہ چھ بج کر 64 بجے دونوں جانب سے فائرنگ تھم گئی۔پولیس کے ایک افسر نے بتایا کہ صبح تقریباََپانچ بجکر 20 منٹ پر سرحد پار سے داغے گئے مارٹر گولے گوکلاد یلران گاؤں میں رہنے والے محمد شبیر کے گھر کے قریب گرے، جس دھماکے ہونے سے شبیر کی بیوی رقیہ بیگم کی موت ہو گئی۔آٹھ اگست کو پونچھ ضلع کے کرشناگھاٹی سیکٹر میں پاکستانی فوج کی جانب سے کی گئی فائرنگ اور گولہ باری میں سپاہی پون سنگھ سگرا (21) شہید ہو گئے تھے۔اس سال یکم اگست تک پاکستانی فوج کی طرف سے جنگ بندی کی خلاف ورزی کے 285 واقعات ہوئے ہیں۔ سال 2016 میں یہ اعداد و شمار 228 سے کافی کم تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

وزیر اعلیٰ نتیش کمارکا کشن گنج کے سیلاب زدہ علاقوں کا دورہ;ایم پی مولانااسرارالحق قاسمی نے میمورنڈم سونپ کر سیلاب متاثرین کی فوری بازآبادکاری کامطالبہ کیا

بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے آج کشن گنج کے سیلاب زدہ علاقوں کا دورہ کرکے سیلاب متاثرین سے ملاقات کی اورراحت وامداد کے کاموں کا جائزہ لیا۔اس موقع پر علاقے کے ایم مولانا اسرارالحق

حادثات سے دکھی پربھونے کہا;ریلوے کے لئے خون اور پسینہ ایک کیا، استعفی پرمودی نے انتظارکرنے کوکہا

گزشتہ پانچ دنوں میں اتر پردیش میں دو ٹرینوں کے حادثات کی اخلاقی ذمہ داری لے کر ریلوے وزیر سریش پربھو استعفی دینے کی پیشکش کی ہے،اگرچہ ان کا استعفی ابھی تک قبول نہیں ہوا تھا۔

حکومت ہماری خاموشی کو بزدلی نہ سمجھے: سید عالمگیر اشرف;رائے پور میں بورڈ کی ہنگامی میٹنگ طلب، ملک بھر میں جاری کیا پیغام،مذہب میں دخل اندازی نا قابل برداشت

مرکزی حکومت کی مسلسل مذہب میں غیر قانونی دخل اندازی حکومت کے لئے اچھا نہیں ہے۔ اپنی ناکامیوں اورمجرموں کو شہ دینے کی مجراانہ سازشوں پر پردہ ڈالنے کے لئے ملک کے