پارلیمنٹ کے مانسون سیشن سے پہلے کانگریس نے کہا: بندوق سے نہیں حل ہو سکتا کشمیر مسئلہ

Source: S.O. News Service | Published on 16th July 2017, 10:23 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،16/جولائی (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)پارلیمنٹ کے پیر سے شروع ہو رہے مانسون سیشن سے پہلے چین کے ساتھ سکم سیکٹر میں کشیدگی اور کشمیر معاملے کا ذکر کرتے ہوئے کانگریس نے کہا کہ پارلیمنٹ میں ان موضوعات پر بحث ہونی چاہیے۔کانگریس نے اس بات پر زور دیا کہ علاقائی سالمیت اور قومی سلامتی کے مسائل پر پارٹی حکومت کے ساتھ کھڑی ہے۔حکومت نے سیشن سے پہلے کل جماعتی میٹنگ بلائی اور ایوان کی کارروائی آسان طریقے سے چلانے کے سلسلہ میں تعاون مانگا۔کل جماعتی میٹنگ میں وزیر اعظم نریندر مودی، پارلیمانی امور کے وزیر اننت کمار، مرکزی وزیر ارون جیٹلی، راجیہ سبھا میں حزب اختلاف کے لیڈر غلام نبی آزاد،سی پی آئی کے جنرل سکریٹری سیتا رام یچوری،این سی پی کے شرد پوار جیسے لیڈر موجود تھے۔ترنمول کانگریس، جے ڈی یو سے کوئی لیڈر موجود نہیں تھا۔کل جماعتی میٹنگ کے بعد کانگریس نے کہا کہ بندوق کشمیر میں کشیدگی ختم کرنے کا راستہ نہیں ہو سکتا ہے اور وہ دیگر اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ کل سے شروع ہو رہے پارلیمنٹ سیشن کے دوران اس مسئلے کو اٹھائے گی۔کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے کہا کہ انہوں نے حکومت کو بتایا ہے کہ داخلی اور بیرونی سیکورٹی سے متعلق کچھ حساس مسائل ہیں اور پارلیمنٹ سیشن کے دوران ان پر بحث کیے جانے کی ضرورت ہے۔کانگریس لیڈر نے کہا کہ حکومت نے کشمیر میں بات چیت کے تمام دروازے بند کر دیئے ہیں،جس سے سیاسی گھٹن کی حالت بنی ہے۔انہوں نے کہاکہ بندوق سے کشمیر میں کشیدگی کا حل نہیں نکالا جا سکتا ہے۔اگر حکومت سوچتی ہے کہ کشمیر میں کشیدگی ختم کرنے کا واحد راستہ بندوق ہے،تو پھر ہم ان کے ساتھ نہیں ہیں۔راجیہ سبھا میں حزب اختلاف کے لیڈر نے کہا کہ پہلے جب بھی کشمیر کا مسئلہ اٹھا، اس میں پاکستان کے بارے میں بحث ہوئی، لیکن اب ہم چین کے بارے میں پڑھ اور سن رہے ہیں۔آزاد نے کہا کہ سکم سیکٹر میں بھوٹان کے پاس چین کے ساتھ جاری تعطل کے مسئلہ پر بھی بحث ہونی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ وہ قومی سلامتی سے جڑے مسائل پر حکومت کے ساتھ ہیں، لیکن داخلی اور بیرونی سیکورٹی کے کچھ حساس مسائل ہیں اور ان پر سیشن کے دوران بحث کئے جانے کی ضرورت ہے۔اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ قومی سلامتی سے منسلک موضوعات کے علاوہ اپوزیشن مدھیہ پردیش میں کسانوں سے منسلک مسائل، جی ایس ٹی سے متاثر ٹیکسٹائل کی صنعت اور ملازمین کے مسائل، آسام میں سیلاب کی صورتحال جیسے مسائل پر بھی بحث کرنا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ حکومت کو بحث کے لیے آگے آنا چاہیے اور اپوزیشن کی بات کو سننا چاہیے۔آزاد نے کہا کہ وہ پارلیمنٹ کی کارروائی میں رکاوٹ ڈالنے کے حق میں نہیں ہیں، لیکن حکومت جب ان کے واجب مطالبات پر توجہ نہیں دیتی ہے، پھر وہ اس کے لیے مجبور ہو جاتے ہیں۔
 

ایک نظر اس پر بھی

بہار کے بعد اب یوپی میں بی جے پی کا آپریشن؛ ایس پی اور بی ایس پی دونوں پارٹیوں کے ممکنہ اتحادکوروکنے کی ہرممکن ہوگی کوشش

 بہار میں قلعہ فتح کرنے کے بعد اب بی جے پی کا اگلا نشانہ یوپی ہوگا۔یوپی میں اپوزیشن کے ممکنہ مہاگٹھ بندھن کومنہدم کرنااب بی جے پی کی ترجیح ہے۔نتیش کمارکی حلف برداری کی تقریب کے فوراََبعدیوپی کے وزیراوربڑے لیڈرسددھارتھناتھ سنگھ نے ٹویٹ کرکے اس کا اشارہ کر دیاہے۔

یوپی اسمبلی سے ایس پی اوربی ایس پی ممبران کاواک آؤٹ

 اترپردیش قانون ساز کونسل میں آج ایس پی اوربی ایس پی ممبران نے مختلف مسائل کو لے کر ایوان سے واک آؤٹ کیاہے۔وقفہ صفرکے دوران ایس پی ارکان نے التواء کی تجویزکے ذریعے ریاست میں اساتذہ کے ایڈجسٹمنٹ کا معاملہ اٹھا۔ایس پی ارکان نے کہا کہ پچھلی ایس پی حکومت نے 12ہزار 460بی ٹی سی اساتذہ ...

لالویادوکے خاندان کے خلاف کارروائی کاسلسلہ جاری ای ڈی نے لالویادو، رابڑی،تیجسوی سمیت متعددلیڈروں پر منی لائونڈرنگ کاکیس درج

بہارمیں لالویادو خاندان پرایک اور بحران گہراگیاہے۔ رانچی اور پوری کے ہوٹلوں کو لیز پر دینے کے معاملے میں لالو، رابڑی اورتیجسوی یادو سمیت کئی لوگوں پر کیس درج کیاہے۔

ارون جیٹلی اورکے سی سی تیاگی شرد یادوکو منانے میں مصروف ،مرکزی وزارت پرڈیل ممکن؛ نتیش کمارکواسمبلی میں آج جمعہ کو ثابت کرنا ہوگا اکثریت

نتیش کمار کے مہاگٹھ بندھن چھوڑنے کے بعد بی جے پی کے ساتھ ملنے پر پارٹی کے سینئر لیڈر شرد یادو ناراض ہیں۔انہوں نے نتیش کمار سے اس فیصلے کے خلاف اپنا موقف بتا دیاہے۔جے ڈی یوکے دوسرے سینئر رہنما علی انور نے تو پارٹی کے فیصلے کے خلاف کھل کر بولا بھی ہے اور شرد یادو سے ملنے کے بعد کہا ...

28 جولائی کو بستر آئیں گے راہل گاندھی

کانگریس نائب صدر راہل گاندھی28جولائی کودوروزہ قیام پربسترپہنچیں گے۔راہل گاندھی اس دوران بہت سے پروگراموں میں شامل ہوں گے۔کانگریس جنرل سکریٹری اور چھتیس گڑھ انچارج پی ایل پنیا نے آج یہاں ایک پریس کانفرنس میں بتایاکہ گاندھی 28تاریخ کوبسترضلع کے ہیڈ کوارٹر جگدل پور پہنچیں گے۔