ملائم سنگھ یادوکا لوک سبھا میں نظرآیا مودی پریم، تعریف کرتے ہوئےکہا 'میری خواہش ہےآپ دوبارہ وزیراعظم بنیں'

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 14th February 2019, 1:23 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 14؍فروری (ایس او نیوز؍ایجنسی) سماجوادی پارٹی کے سرپرست ملائم سنگھ یادو نے لوک سبھا میں کہا کہ وزیراعظم نریندرمودی دوبارہ وزیراعظم بنیں۔ انہوں نے لوک سبھا میں کہا کہ میں امید کرتا ہوں کہ تمام ارکان پارلیمنٹ جیت کردوبارہ آئیں۔ وزیراعظم سب کو ساتھ لےکرچلے ہیں۔ آپ (نریندرمودی) پھرسے وزیراعظم بنیں یہی ہماری خواہشات ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم کومبارکباد دینا چاہتا ہوں۔ اس دوران سونیا گاندھی ان کے پاس بیٹھی ہوئی تھیں۔ ملائم سنگھ یادونےکہا کہ ملک چلانا مشکل کام ہے۔ وزیراعظم مودی سب کوساتھ لے کرچلے ہیں، اس کے لئے وہ مبارکباد کے مستحق ہیں۔

ملائم سنگھ کے ذریعہ نریندرمودی کی تعریف پربی جے پی ارکان پارلیمنٹ نے میزیں تھپتھپا کراستقبال کیا۔ وہیں وزیراعظم نریندرمودی نے ہاتھ جوڑکران کا شکریہ ادا کیا۔

اسپیکرکی بھی کی تعریف: ملائم سنگھ یادونے لوک سبھا اسپیکرسمترا مہاجن کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے اچھا کام کیا۔ ملائم سنگھ نے کہا 'ہم وزیراعظم کو مبارکباد دینا چاہتے ہیں کہ آپ نے مل جل کرکام کیا۔ ہم آپ کااحترام کرتے ہیں۔  

ملائم کے بیان کا سیاسی مطلب: ملائم سنگھ یادو کے اس بیان کے سیاسی مطلب نکالے جارہے ہیں۔ دراصل ایک طرف ملائم سنگھ کے بیٹے اورسماجوادی پارٹی کے قومی صدرعام انتخابات میں نریندرمودی کے خلاف عظیم اتحاد بنانے میں مصروف ہیں۔ یوپی میں بی جے پی کوروکنے کے لئے اکھلیش یادو نے بہوجن سماج پارٹی کی سربراہ مایاوتی سے ہاتھ ملایا ہے۔ وزیراعظم مودی کے خلاف اکھلیش یادو حال کے دنوں میں کھل کرسامنے آئے ہیں۔ وہیں دوسری طرف سماجوادی پارٹی کے سابق سربراہ ملائم سنگھ یادو نے نریندرمودی کے دوبارہ وزیراعظم بننے کی خواہش ظاہرکردی ہے۔ ایسے میں ملائم سنگھ کے اس بیان سے باپ - بیٹے کے درمیان اختلاف ایک بارپھرابھرکرسامنے آگیا ہے۔

یوپی میں 38-38 سیٹوں پرالیکشن لڑرہی ہے بی ایس پی- ایس پی: واضح رہے کہ حال ہی میں لکھنو میں بی ایس پی سربراہ مایاوتی اورسماجوادی پارٹی کے سربراہ اکھلیش یادو نے ایک مشترکہ پریس کانفرنس کرکے لوک سبھا الیکشن کے لئےعظیم اتحاد (ایس پی - بی ایس پی اتحاد) کا اعلان کیا تھا۔ سب سے پہلے بی ایس پی سربراہ مایاوتی نے پریس کانفرنس کوخطاب کیا اورکہا کہ مودی - شاہ کے گروچیلے کی نیند اڑانے والی پریس کانفرنس ہے۔ اس دوران انہوں نے سیٹوں کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ دونوں پارٹیاں 38- 38 سیٹوں پرالیکشن لڑیں گی۔ رائے بریلی اورامیٹھی کی سیٹ کانگریس کے لئے چھوڑ دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ لکھنو گیسٹ ہاوس سانحہ سے اوپرعوامی مفاد ہے۔ وہیں اکھلیش یادونے کہا تھا کہ نریندرمودی اوربی جے پی حکومت کو شکست دینے کے لئے یہ اتحاد ہوا ہے۔ اب سے مایاوتی کی توہین ان کی (اکھلیش) بھی توہین سمجھی جائے گی۔  

ایک نظر اس پر بھی

سیلاب اور بارش سے کیرالہ، کرناٹک، مہاراشٹر وغیرہ بے حال، اَب دہلی پر منڈلایا خطرہ

ہریانہ کے ہتھنی كنڈ بیراج سے گزشتہ 40 برسوں میں سب سے زیادہ آٹھ لاکھ سے زیادہ کیوسک پانی جمنا میں چھوڑے جانے کے بعد دہلی اور ہریانہ میں دریاکے کنارے کے آس پاس کے علاقوں میں سیلاب کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے اور اگلے 24 گھنٹے انتہائی سنگین بتائے جا رہے ہیں۔