چتردرگہ میں سری راملو کی کار پر پتھراؤ اور چپل پھینکنے کے بعد پولس نے کیا لاٹھی چارج

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 13th April 2018, 10:12 PM | ریاستی خبریں |

چتردرگہ 13 اپریل (ایس او نیوز) یہاں کے نائکن ہٹی میں حالات اُس وقت کشیدہ ہوگئے جب ایک رکن اسمبلی کے حامیوں نے ایک ایم پی کی کار پر پتھراؤ کرتے ہوئے ان پر چپل پھینکنا شروع کردیا۔ حالات پر قابو پانے کے لئے پولس بھی فوری طور پر حرکت میں آگئی اور لاٹھی چارج کرتے ہوئے بھیڑ کو منتشر کردیا۔

ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق بیلاری کے ایم پی سری راملو کو بی جے پی نے اس بار چتردرگہ کے مولاکلمورو اسمبلی حلقہ کی ٹکٹ دینے کا اعلان کیا ہے، اس بات پر ناراض اس حلقہ کے ایم ایل اے ایس تھپے سوامی کے حامیوں میں ناراضگی پائی جارہی ہے، جنہوں نے آج اس کا اظہار سری راملو کی کار پر پتھراؤ کرتے ہوئے کیا۔

بتایا گیا ہے کہ سری راملو آج جمعہ صبح مولاکلمورو کے قریبی علاقہ نائیکن ہٹّی کے ایک مندر میں پوجاپاٹ کے لئے پہنچے تھے جہاں سے اُنہیں اپنی انتخابی تشہیری مہم شروع کرنی تھی، ان کی آمد کو دیکھتے ہوئے سری راملو کے حامی بھی مندر میں ان کا استقبال کرنے کثیر تعداد میں جمع ہوگئے، جیسے ہی سری راملو یہاں پہنچے، رکن اسمبلی ایس تھپے سوامی کے حامیوں نے سری راملو کی کار پر پتھراؤ کرنا شروع کردیا، بعد میں اُن کی کار پر چپل پھینکے گئے، جس کو دیکھتے ہوئے کچھ دیر کے لئے حالات کشیدہ ہوگئے۔ بی جے پی کے دو گروپ جب ایک دوسرے کے آمنے سامنے آگئے تو کچھ دیر کے لئے مندر کا علاقہ جنگ  کا ماحول پیش کررہا تھا، پولس کو حالات پر قابو پانے کے لئے لاٹھی چارج کرنا پڑا۔ بی جے پی کے کارکنوں کو اس موقع پر حفاظتی مقامات کی طرف بھاگتے ہوئے دیکھا گیا۔ مندر میں سری راملو کے استقبال کے لئے پہنچے بی جے پی کارکنوں کو بھی اپنے تحفظ کے لئے اِدھر سے اُدھر بھاگنا پڑا۔

بے قابو بھیڑ کو منتشر کرنے کے بعد سری راملو کو  پولس نے سخت حفاظتی بندوبست میں  مندر لے جایا گیا، جہاں انہوں نے  پوجا پاٹ میں حصہ لیا۔

یہاں پر ایس تھپے سوامی کے حامیوں نے کھل کر سری راملو کے خلاف بیان بازی بھی کی اور کہا کہ بی جے پی ہائی کمانڈ اگر ایس تھپے سوامی کو ٹکٹ نہیں دیتی ہے تو پھر وہ بی جے پی کو بھی ووٹ نہیں دیں گے۔

اخبارنویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے سری راملو نے بتایا کہ وہ اس طرح کی مخالفتوں سے پیچھے ہٹنے والے نہیں ہیں اور نہ ہی ایس تھپے سوامی سے کسی طرح کی بات چیت کرنے کے موڈ میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ اسی حلقہ سے الیکشن  میں کھڑے ہوں گے اور مجھے پورا یقین ہے کہ یہاں کے عوام مجھے ہی کامیاب  کریں گے۔

اُدھر ایس تھپے سوامی کا کہنا ہے کہ بیلاری کے سری راملو کو یہاں آنے کی ضرورت آخر کیوں محسوس ہوئی ؟ ان کے مطابق وہ بیلاری میں بھی انتخابات میں کھڑے ہونے کی صورت میں جیت نہیں سکتے، اسی لئے انہوں نے اس طرف کا رُخ کیا ہے۔ ایسے میں مقامی لوگوں کا خیال ہے کہ  ایس تھپے سوامی کے بجائے بی جے پی  سری راملو کو ٹکٹ دیتی ہے تو  پھر تھپے سوامی  کانگریس پارٹی میں شامل ہوسکتے ہیں  یا پھر آزاد اُمیدوار کی حیثیت سے انتخابات میں حصہ لے سکتے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

کیا میسورو میں سدارامیا کے خلاف جنتا دل (ایس )نے بی جے پی کے ساتھ ہاتھ ملایا ہے ؟

ایسا لگتا ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی اور جنتا دل(ایس)نے میسورو میں صرف چامنڈیشوری سیٹ کے تعلق سے ہی نہیں بلکہ میسورو ضلع کی تمام اسمبلیوں سیٹوں پر وزیراعلیٰ سدارامیا کے خلاف آپس میں گٹھ جوڑ کرلیا ہے۔

کرناٹک انتخابات:بی جے پی نے سات امیدواروں کی چوتھی فہرست جاری کی

کرناٹک انتخابات کے سلسلہ میں بی جے پی کی سنٹرل کمیٹی نے سات امیدواروں کی چوتھی فہرست جاری کی ہے ۔جی آر پراوین پاٹل کو بھدراوتی حلقہ،جگدیش کو یشونت پورحلقہ،للیش ریڈی کو بی ٹی ایم لے آوٹ حلقہ،شریمتی ایچ لیلاوتی کو رامانگرم حلقہ،شریمتی نندنی گوڑا کو کنکاپور حلقہ،ایچ کے سریش کو ...

مواخذہ مسئلہ: کانگریس کو دستورپر سوال اٹھانے کا کوئی اخلاقی حق نہیں :اننت کمار

پارلیمانی امور کے وزیرو بی جے پی کے سینئر لیڈر اننت کمار نے آج کہا ہے کہ کانگریس جس نے ملک میں ایمرجنسی نافذ کی تھی،کو ملک کی دستوری اتھارٹی اورجمہوریت پر سوال اٹھانے کا کوئی اخلاقی حق حاصل نہیں ہے ۔

کرناٹک میں بی جے پی کا الیکشن کمیشن پرجانبداری برتنے کا الزام 

بی جے پی نے انگور کھٹے کی مانند اب یہ الزام لگارہی ہے کہ الیکشن کمیشن ریاست میں کانگریس کی جیت کے لئے کام کررہا ہے۔ کرناٹک میں بی جے پی امور کے انچارج مرلی دھر راؤ نے آج ایک اخباری کانفرنس میں الزام لگایا کہ ریاستی الیکشن کمیشن کانگریس کی ایماء پر متحرک ہے،

امبریش کے معاملے پر تبصرے سے سدرامیا کا انکار

منڈیا اسمبلی حلقے سے کانگریس امیدوار کے طور پر میدان میں اترنے میں سابق وزیر اور اس حلقے کے موجودہ رکن اسمبلی امبریش کے تذبذب پر تبصرہ کرنے سے وزیراعلیٰ سدرامیا نے انکار کردیا ہے۔

کرناٹک لوک آیوکتہ وشواناتھ شٹی خدمات سے رجوع

کرناٹک لوک آیوکتہ وشواناتھ شٹی جن پر 7؍مارچ کو ان کے چیمبر میں حملہ آور کی جانب سے چاقو سے حملہ کرتے ہوئے زخمی کردیا گیا تھا، اسپتال میں علاج کے بعد آج خدمات سے رجوع ہوگئے ۔جستس شٹی کے سینہ ، ہاتھ اور گردن پر چاقو سے حملہ کیا گیا تھا ۔