آسام میں شہریت ثابت کرنے کے لیے پنچایت سرٹیفیکٹ درست : سپریم کورٹ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 5th December 2017, 8:05 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی5؍دسمبر(ایس او نیوز؍پریس ریلیز)سپریم کورٹ نے آج آسام کے لاکھوں افراد کی شہریت سے متعلق ایک انتہائی اہم کیس میں فیصلہ سناتے ہوئے پنچایت لنک سرٹیفیکٹ کی حیثیت کو بحال کردیا ہے جس کے بعد تقریبا 48؍لاکھ شادی شدہ خواتین کو اپنی شہریت پر لٹکی تلوارسے راحت ملی ہے۔مزید برآں عدالت نے شہریت کے سلسلے میں سرکار کے دوہرے رویے کو بھی خارج کردیا ہے اور سرکار سے کہا کہ اصلی اور غیر اصلی شہری میں لوگوں کو نہ بانٹے ، شہریت کے لیے صرف ایک کٹیگری ہو گی :’ وہ بھارت کی شہریت ہے‘ ، اس لیے صرف ثبوت کی بنیاد پر بات کی جائے ۔ اس کے ساتھ ہی آج جسٹس رنجن گگوئی اور جسٹس نریمن پر مشتمل عدالت عظمی کی دو رکنی بنچ نے 28 فروری 2017 کوگوہاٹی ہائی کورٹ کے ذریعہ دیے گئے اس فیصلے کو رد کر دیا جس میں این آر سی میں اندراج کے لیے پنچایت سر ٹیفیکٹ کو ناقابل قبول قرار دیا گیا تھا۔

اس فیصلے کو جمعیہ علما ء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا مولانا سید محمود اسعد مدنی اور جمعیہ علماء صوبہ آسام کے صدر ورکن پارلیمنٹ مولانا بدرالدین اجمل قاسمی نے انصاف کی جیت اور تاریخی اہمیت کا حامل قرار دیتے ہوئے لاکھوں لوگوں کی شہریت کے تحفظ کا ضامن قرار دیا ہے ،ان دونوں حضرات نے انصاف کی اس لڑائی میں شریک تمام حضرات نیز اس کے لیے دعا ؤں کا اہتمام کر نے والوں کا شکریہ ادا کیا۔

آسا م میں ہائی کورٹ کے فیصلے کی وجہ سے ان لوگوں کو شدید دشواری ہو گئی تھی جو پنچایت سرٹیفیکٹ کو معاون دستاویز کے طور پر صرف اس بات کو ثابت کر نے کے لئے جمع کررہے تھے کہ وہ فلاں کی بیٹی یا بیٹا ہے اور شادی یا کسی اور وجہ سے فلاں گاؤں سے فلاں گاؤں منتقل ہوکر رہائش پذیر ہوگئے ہیں۔معاملہ کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے جمعیۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا سید محمود اسعد مدنی اور جمعیۃ علماء صوبہ آسام کے صدر مولانا بدرالدین اجمل کی ہدایت پر جمعیۃ علماء صوبہ آسام نے گوہاٹی ہائی کورٹ کے فیصلہ کے خلاف اسی سال مارچ میں سپریم کورٹ میں دو متاثرین کی جانب سے پٹیشن داخل کیا تھا جس پر سماعت 22 نومبر کو مکمل ہو گئی تھی،آج اسی کا فیصلہ آیا ہے ۔

اس درمیان اصلی اور غیر اصلی شہریت کا معاملہ بھی سامنے آیا جو انتہائی تفریق کی بنیاد پر قائم کیا گیا تھا ،این آرسی کے کو آرڈینیٹر مسٹر پرتیک ہزیلا نے 12 اکتوبر 2017 کو اپنے ایک حلف نامہ میں سپریم کورٹ کو بتایا تھا کہ پنچایت سرٹیفیکٹ کے رد ہونے سے متاثر ہو نے والے 48 لاکھ لوگوں میں سے تقریبا 17 لاکھ اصلی شہری (inhabitant original ) ہیں اور باقی کی شہریت کی تحقیق و تصدیق کا کام جاری ہے۔ اس اصلی اور غیر اصلی کی تقسیم کے پیچھے کی سازش کو سمجھتے ہوئے جمعیہ علما ء ہند کے سکریٹری مولانا محمود مدنی اور جمعیہ علماء صوبہ آسام کے صدر مولانا بدرالدین اجمل کی ہدایت پر اس کے تقسیم کے خلاف سپریم کورٹ میں پٹیشن داخل کر کے اس کی وضاحت اور اس تقسیم کی بنیاد اور تعریف کرنے کی مانگ کی گئی۔ سپریم کورٹ میں آسام سرکار اور مرکزی سرکار کے وکلاء اس کی جامع تعریف کرنے اور تشفی بخش جواب دینے میں ناکام رہی۔

جمعیۃ علماء ہند نے ا ن مقدمات کی پیروی کر نے کے لئے سینئر وکلاء کی ایک ٹیم کی خدمات حاصل کی تھی جن میں سینئر ایڈووکیٹ ابھیشیک منو سنگھوی، سینئرایڈووکیٹ راجو راما چندرن،سینئر اڈووکیٹ بی ایچ مار لاپلے،سینئر اڈووکیٹ اعجاز مقبول،سینئر ایڈووکیٹ شکیل احمد، سینئر ایڈووکیٹ نذرالحق مزار بھیا،ایڈوکیٹ عبدالصبور تپادار، ایڈووکیٹ قاسم تعلق دار، ایڈووکیٹ امن ودود وغیرہ شامل تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

گجرات فسادات: 26نومبر تک ٹلی ذکیہ جعفری کی درخواست پر سماعت

سپریم کورٹ نے 2002میں گودھرا سانحہ کے بعد ہوئے فسادات کے سلسلے میں گجرات کے سابق وزیر اعلی نریندر مودی کو خصوصی تحقیقات ٹیم کی طرف سے کلین چٹ دئے جانے کو چیلنج کرنے والی ذکیہ جعفری کی درخواست پر پیر کو سماعت 26نومبر تک کے لیے ملتوی کر دی۔جسٹس اے ایم کھانولکر کی سربراہی میں والی ...

سپریم کورٹ نے کہا،نہیں ملتوی ہوگی سماعت، آلو ک ورماجلد از جلدداخل کریں جواب

سپریم کورٹ نے پیر کو سی بی آئی کے ڈائریکٹر آلوک کمار ورما سے کہا کہ ان کے خلاف بدعنوانی کے الزامات کے بارے میں سی وی سی کی جانچ رپورٹ پر جلد سے جلد آج ہی اپنا جواب داخل کریں۔عدالت نے واضح کیا کہ اس کیس کے لئے منگل کو مقدمے کی سماعت نہیں ٹالی جائے گی

یوپی حکومت کے پاس معذوربچوں کیلئے اسکول کھولنے کو بجٹ نہیں، سیاست چمکانے کیلئے کمبھ میلے پرکروڑوں روپے خرچ کر رہی ہے: راج بھر

اتر پردیش کے وزیر کابینہ اوم پرکاش راج بھر نے بی جے پی کی قیادت والی ریاستی حکومت پر ایک بار پھر نشانہ لگاتے ہوئے الزام لگایا کہ ریاستی حکومت کوکمبھ کے لئے ہزاروں کروڑ روپے خرچ کر رہی ہے لیکن معذور بچوں کے لئے اسکول کھولنے کو اس کے پاس بجٹ ہی نہیں ہے

سیاسی نظریات کی جنگ ہے اسمبلی انتخابات:سچن پائلٹ

کانگریس کے ریاستی صدر سچن پائلٹ نے پیر کو کہا ہے کہ ریاست میں آئندہ اسمبلی انتخابات دو سیاسی نظریات کی جنگ ہے۔پائلٹ نے ٹونک اسمبلی نشست سے پرچہ نامزدگی داخل کرنے کے بعد صحافی سے کہا کہ بی جے پی نے عوام کو دھوکہ دیا اور اس کارپورٹ کارڈ عوام کے سامنے ہے۔انہوں نے کہا کہ ناراض لوگ ...

سی بی آئی بمقابلہ سی بی آئی: آلوک ورما نے سی وی سی کی رپورٹ پر سپریم کورٹ کو سونپا جواب

سی بی آئی کے چھٹی پر بھیجے گئے ڈائریکٹر آلوک کمار ورما نے خود پر عائد بدعنوانی کے الزامات کو لے کر مرکزی ویجلنس کمیشن کی ابتدائی رپورٹ پر اپنا جواب داخل کر دیا ہے۔ ورما نے پیر کی دوپہر سیل بند لفافے میں سپریم کورٹ کو اپنا جواب سونپا۔ اس کیس میں عدالت منگل کو سماعت کرے گی ۔عدالت ...

کنہیا کمار اور جگنیش میوانی پر پھینکی گئی سیاہی، ملزم گرفتار

جواہر لال نہرو یونیورسٹی، (جے این یو) طالب علم یونین کے سابق صدر اور طالب علم رہنما کنہیا کمار اور گجرات کے ممبر اسمبلی جگنیش میواي پر پیر کو یہاں ایک پروگرام کے دوران ہندو سینا کے ایک کارکن نے سیاہی پھینک دی۔موقع پر تعینات پولیس نے فوری طور پر اس کارکن کو گرفتار کر لیا۔اس دوران ...