اُترپردیش میں امن و امان کی صورت حال نازک؛ جمعیۃ العلماء نے حکومت اُترپردیش پر لگایا نظم و نسق قائم کرنے میں ناکامی کا الزام

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 6th February 2018, 9:11 PM | ملکی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

نئی دہلی۔ ۶؍فروری (ایس او نیوز/پریس ریلیز) جمعیۃ  علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے پرتا پ گڑھ میں ایک خاتون کے ساتھ وحشیانہ عمل پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسے واقعات ہندوستانیت او رانسانیت دونوں کے لیے شرمناک ہیں ۔ مولانا مدنی نے اترپردیش میں امن وامان کی صورت حال پر بھی تشویش ظاہر کی اور کہا کہ کاس گنج میں ایک ہفتہ گزر جانے کے باوجود بھی مسجد پر حملہ کیا گیا جو یہ ظاہرکرتا ہے کہ ریاست میں نظم ونسق قائم کرنے والی ایجنسیاں اپنی ذمہ داری ادا کرنے میں ناکام ہورہی ہیں ۔

مولانا مدنی نے کہا کہ انسپکٹر راج کو بڑھاوا دینے سے جرائم میں کمی نہیں آتی بلکہ انتظامیہ کو جواب دہ بنانا بہت ضروری ہے ۔ انھوں نے کہا کہ آج فرقہ پرستوں کے حوصلے کافی بلند ہیں کیو ں کہ ان کے اندر یہ زعم پیدا ہو گیا ہے کہ موجودہ صورت حال میں وہ قانون کی گرفت سے باہر ہیں ۔ مولانا مدنی نے اس با ت پر ز ور دیا کہ پرتاپ گڑھ میں رابعہ نا م کی خاتون کے ساتھ عصمت دری کی کوشش او رپٹائی کی وجہ سے دردناک موت اور ملک بھر میں خواتین کے خلاف بڑھ رہے جرائم ہماری سرکاروں کو یہ سوچنے کی دعوت دیتے ہیں کہ وہ کسی خاص طبقے کی خواتین کے مسائل پر سیاست سے بازآئیں اور اجتماعی طور سے ان کے بنیادی مسائل کا حل تلاشنے کی کوشش کریں ۔

ادھر دوسری طرف مولانا مدنی کی ہدایت پر جمعیۃ علماء پرتاپ گڑھ کا ایک وفد اس کے سکریٹری مولانا محمد فاروق قاسمی کی سربراہی میں متاثرہ خواتین کے اہل خانہ سے ملا اور جنازہ وغیرہ میں شرکت کی ۔اس سلسلے میں مولانا حکیم الدین قاسمی سکریٹری جمعیۃ  علماء ہند نے بتایا کہ جمعیۃ  علماء کے ضلعی ذمہ داروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ مجرموں کو کیفرکردار تک پہنچانے میں قانونی واخلاقی ہر طرح کا تعاون دیں ، کیوں کہ یہ واقعہ سماج کے ماتھے پر بدنما داغ ہے۔ اس وفد میں مولانا تاجدار قاسمی ضلع نائب صدر اور مولانا جاوید قاسمی بھی شریک تھے ۔

ایک نظر اس پر بھی

تلنگانہ میں 19فروری کو کابینہ کی توسیع

تلنگانہ کے وزیر اعلی کے چندرشیکھر راؤ دوبارہ اقتدار میں آنے کے دو ماہ کے بعد اپنی کابینہ میں توسیع کرنے کی تیاری میں ہے اور ساری بحث اب اس بات پر ٹک گئی ہے کہ اس میں کن لوگوں کو شامل کیا جائے گا۔

بھٹکل میں مجلس اصلاح وتنظیم کی جانب سے پلوامہ دہشت گردانہ حملہ کی کڑی مذمت: تحصیلدار کی معرفت وزیراعظم کو میمورنڈم ؛کڑی کارروائی کا مطالبہ

کشمیر کے پلوامہ میں دہشت گردانہ حملے کی کڑی مذمت کرتے ہوئے مجلس اصلاح وتنظیم بھٹکل نے تحصیلدار کی معرفت وزیر اعظم نریندر مودی کو اپیل سونپتے ہوئے دہشت گردی کا کرار ا جواب دینے کا مطالبہ کیا۔

بھٹکل: شرالی میں ہائی وے کی توسیع کے دوران ہنگامہ؛ پولس کی لی گئی مدد؛ عوامی مخالفت نظرانداز؛ 30میٹرکی ہی توسیع کے ساتھ کام شروع

شرالی میں قومی شاہراہ کی تعمیر 45میٹر کی توسیع کے ساتھ ہی کی جائے ، کسی حال میں بھی توسیع کو 30میٹر تک کم کرنے نہیں دیں گے۔  مقامی  عوام کی سخت مخالفت کے باوجود ضلع انتطامیہ بدھ کو 30 میٹر کی توسیع کے ساتھ شاہراہ تعمیری کام کی شروعات کی۔