دوسرے اضلاع کے مقابلے میں ضلع شمالی کینرا میں پوکسو کے معاملات زیادہ ہیں۔ کاروار میں مہیلا آیوگ چیر پرسن کا تبصرہ 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 11th July 2018, 8:10 PM | ساحلی خبریں |

کاروار 11؍جولائی (ایس او نیوز)خواتین کے ساتھ ہونے والے جنسی جرائم، گھریلو تشدد اور پیشہ ورانہ ماحول میں جنسی ہراسانی کی صورتحال کا جائزہ  لینے کے لئے ریاستی مہیلا آیوگ (ریاستی خواتین کمیٹی)  کی چیر پرسن ناگ لکشمی بائی نے محکمہ جاتی افسران کے ساتھ ضلع ڈپٹی کمشنر دفتر کے ہال میں میٹنگ منعقد کی اور خواتین کی  حفاظت اور ان کی فلاح و بہبود کے تعلق سے سرکاری سطح پر جاری اسکیموں پر عمل در آمد کا جائزہ لیا۔

مہیلا آیوگ کی چیر پرسن نے لیبر ڈپارٹمنٹ سے پوچھا کہ ضلع شمالی کینرا کی ماہی گیر طبقے کی خواتین گوا ، کیرالہ، منگلورو اور مہاراشٹرا کے مختلف مقامات پر مچھلیوں کی فیکٹریوں میں ملازمت کے لئے جارہی ہیں، تو ان کے تحفظ اور سلامتی کے تعلق سے ڈپارٹمنٹ  نے  کیا اقدامات کیے ہیں۔ لیکن لیبر ڈپارٹمنٹ کے کلیدی ذمہ دار کی غیر حاضری میں محکمہ کے نمائندگی کرنے والے ایف ڈی سی نے کوئی بھی اطمینان بخش جواب نہیں دیا تو آیوگ کی چیر پرسن نے اپنے عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پوری ریاست میں لیبر ڈپارٹمنٹ عوام کے مفاد کے لئے کام کرنے میں پوری طرح ناکام ہے۔ انہوں نے مذکورہ آفیسر کو حکم دیا کہ آئندہ 20دنوں کے اندر اس سلسلے میں ایک تفصیلی رپورٹ لازمی طور پر انہیں اور ڈپٹی کمشنر کو بھیجی جائے۔ 

ضلع میں موجود خواتین کے لئے مخصوص واحدمہیلا پولیس اسٹیشن کی بدتر حالت کا تذکرہ کرتے ہوئے ناگ لکشمی بائی نے کہاکہ میٹنگ سے پہلے انہوں نے اس پولیس اسٹیشن کا معائنہ کیا تو دیکھا کہ وہاں پولیس افسران اور اہلکاروں کے لئے  باتھ روم کی سہولت بھی نہیں ہے۔ اس کے علاوہ کمپیوٹر اور دیگر ضروری ساز وسامان بھی فراہم نہیں کیا جارہا ہے۔روزمرہ کے لئے ضروری بعض اشیاء خریدنے کے لئے پولیس اہلکار خود اپنی جیب سے پیسہ خرچ کر رہے ہیں۔ خواتین پولیس کے لئے موٹر گاڑیاں دستیاب نہیں ہیں۔ اس پولیس تھانے میں صرف ۶ افراد پر مشتمل عملہ موجود ہے جبکہ مزید ۳۶ اسامیوں کی وہاں ضرورت ہے۔مہیلا پولیس اسٹیشن کا کمرہ مرغیوں کے ڈربے سے بھی چھوٹا ہے۔ 

اس کے جواب میں میٹنگ میں موجود ضلع سپرنٹنڈنٹ ونائیک پاٹل نے کہا کہ ٹاؤن پولیس اسٹیشن سے متصل ترکاری مارکیٹ کو دوسری جگہ منتقل کرکے وہاں پر مہیلا پولیس اسٹیشن کی ایک جدید اور آراستہ عمارت تعمیر کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے اور یہ تجویز حکومت کو بھیج دی گئی ہے۔ ایس پی کے مطابق محکمہ پی ڈبلیو ڈی نے اس مقام کا معائنہ کیا ہے اور تجویز منظور کیے جانے کے مرحلے میں ہے۔لہٰذا یہاں جلد ہی تعمیر ات شروع کی جائیں گی۔اس پر اطمینان ظاہر کرتے ہوئے ناگ لکشمی بائی نے ایس پی سے درخواست کی کہ نئی عمارت تعمیر ہونے تک کم از کم خواتین پولیس افسران کے لئے مناسب واش روم کا انتظام کیا جائے۔

مہیلا آیوگ چیر پرسن نے بتایا کہ مجبور اور بے گھر ہونے والی خواتین کے لئے قائم ضلع کے باز آباد کاری مرکز ’سویکار‘ میں عشق و محبت کے چکر میں پھنس کر زندگی برباد کرنے والی 17نوجوان لڑکیاں موجود ہیں۔ جن کی عمریں 19سے 24سال کے درمیان ہیں۔ان کی تعلیم بھی ادھوری رہ گئی ہے۔ اس لئے محکمہ بہبودئ خواتین و اطفال کو چاہیے کہ ان کو تعلیم سے محروم نہ رکھتے ہوئے آگے پڑھائی جاری رکھنے کی سہولت ان خواتین کو فراہم کی جائے۔

میٹنگ میں ضلع ڈپٹی کمشنر ایس ایس نکول، محکمہ بہبودئ خواتین و اطفال کے ڈپٹی ڈائریکٹر راجیندرا بیکل اوردیگر محکمہ جات کے ذمہ داران موجود تھے۔

میٹنگ کے بعداخبار نویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے ناگ لکشمی بائی نے بتایا کہ مہیلا آیوگ کی چیر پرسن کا عہدہ سنبھالنے کے بعدوہ ایک سال کے اندر ریاست کے مختلف اضلاع کا دورہ کرکے خواتین کے مسائل کوجاننے اور سمجھنے کی پوری کوشش کررہی ہیں۔جہاں تک کم عمر لڑکیوں کے ساتھ جنسی زیادتی اور ہراسانی کے لئے پوکسو ایکٹ کے معاملات کا تعلق ہے اس کی تعداد دوسرے اضلاع کے مقابلے میں ضلع شمالی کینرا میں زیادہ سامنے آرہی ہے۔ بچوں کے استحصال کو روکنے کے لئے متعلقہ محکمہ کو واضح ہدایات دی گئی ہیں۔انہوں نے بتایا کہ کلبرگی اور ہاویری ضلع میں خواتین کے پیٹ سے رحم (یوٹیرس) نکالنے کا دھندہ بڑے پیمانے پر چل پڑا ہے۔ اس کی بنیادی وجہ وہاں پر پائی جانے والی غربت کے علاوہ جہالت اور خوف ہے۔ ایسی خواتین کے لئے خودروزگار اسکیم کے تحت پیکیج فراہم کرنے کی سفارش حکومت سے کی گئی ہے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بیلتھنگڈی میں غیر قانونی ریت کا ذخیرہ ؛ تحصیلدار کی قیادت میں چھاپہ : کشتیاں ضبط

بیلتھنگڈی تحصیلدار کی قیادت میں تعلقہ کے دھرمستھل ، اجکوری نامی مقام پر چھاپہ مارتے ہوئے افسران نے ندی کنارے جاری غیر قانونی ریت سپلائی کے ذخیرے اور کشتیوں کو ضبط کرلینے کا واقعہ پیش آیا ہے۔

منگلورمیں سواریوں کی تلاشی کے دوران غیر قانونی ریت سپلائی کرنے والی ٹپر لاریاں ضبط

منگلورو جنوبی زون کے اے سی پی ، جنوبی زون راؤڑی نگراں دستہ کے ساتھ مشترکہ طورپر کنکناڑی شہری پولس تھانہ حدود کے پڈیل جنکشن اور پمپ ویل قومی شاہراہ پر سواریوں کی تلاشی کے دوران غیر قانونی طورپر ریت سپلائی کرنےو الی لاریوں کا پتہ چلنے پر سواریوں کو ضبط کرنے کا واقعہ پیش آیا ہے۔

ہوناور شراوتی ندی سے ریت سپلائی کے انتظار میں مزدور، ٹھیکدار اور سواری مالکان :کیا حکومت اس طرف توجہ دے گی ؟

گذشتہ جون سے بند ریت سپلائی ستمبر ختم ہونےکو ہے شروع ہونے کے کوئی آثار نظر نہیں آنے  سے ریت پر انحصار کرنے والے مزدور، سواری مالکان، ٹھیکدار سب پریشان ہیں۔ سرکاری عمارات سمیت کئی پرائیویٹ عمارات کی تعمیر ریت نہیں ملنے کی وجہ سے رکی ہوئی ہیں، ترقی کو گرہن لگاہے۔

مینگلور کے قریب بنٹوال میں نابالغہ کی عصمت دری کی کوشش : تین ملزم گرفتار

چہارم جماعت میں زیر تعلیم نابالغہ کی عصمت دری کی کوشش کئے جانے کا واقعہ بنٹوال تعلقہ پانے منگلورو کے قریب گوڈینبلی میں پیش آیاہے۔ اس سلسلے میں بنٹوال شہری تھانہ پولس نےمعاملے کو لےکر تین ملزموں کو گرفتار کیا ہے۔