زیرالتواء قیدیوں کی فوری سماعت کے خط کو دہلی ہائی کورٹ نے مفاد عامہ کی عرضی میں بدلا

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 16th March 2019, 12:51 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 15 مارچ(آئی این ایس انڈیا/ایس او نیوز)  دہلی ہائی کورٹ نے یہاں جیلوں میں بندزیر التواء قیدیوں کے ایک خط کو جمعہ کو مفاد عامہ کی عرضی میں تبدیل کرتے ہوئے اس پر سماعت شروع کی۔زیرالتواء قیدیوں نے اپنے مقدموں کے جلد نمٹانے کا مطالبہ کیا ہے جو برسوں سے نچلی عدالتوں میں زیر التواء ہیں۔

چیف جسٹس راجندر مینن اور جسٹس جموں بھمبانی کی بنچ نے دہلی حکومت کو نوٹس جاری کیا اور 13 اگست تک اس درخواست پر جواب مانگا۔عدالت نے قتل سے لے کر منشیات رکھنے اور غیر قانونی سرگرمیاں (ممنوع) قانون جیسے جرائم میں مقدمات کا سامنا کر رہے سات التواء قیدیوں کی طرف سے بھیجے پانچ کاغذات پر نوٹس لیتے ہوئے مفاد عامہ کی عرضی پر سماعت شروع کی۔

عدالت کو خط لکھنے والے زیر التواء قیدیوں میں سے ایک عزیر احمد کو قومی جانچ ایجنسی نے مختلف جرائم کے لئے 2013 میں گرفتار کیا اور وہ پانچ سال سے زیادہ وقت سے یہاں روہنی جیل میں بند ہے۔اس نے خط میں دعوی کیا کہ ابھی تک اس معاملے میں الزام نہیں طے کئے گئے،اس نے دعوی کیا کہ اسے اس معاملے میں جھوٹا پھنسایا گیا۔

ایک اورزیرالتواقیدی عمران خان جولائی 2016 سے یہاں تہاڑ جیل میں بند ہے جب اس کوالزام کے تحت مختلف جرائم میں این آئی اے نے گرفتار کیا تھا۔اس نے اپنے خط میں کہا کہ اس معاملے میں جولائی 2016 میں چارج شیٹ دائر کیا گیا لیکن اس کے بعد سے معاملے میں کوئی پیش رفت نہیں ہوئی۔تہاڑ جیل میں بند شاہجہاں، محمد ساجد اور ستار منشیات رکھنے اور اسمگلنگ کے معاملے میں 2014 کی طرف سے بند ہے۔انہوں نے اپنے خط میں لکھا کہ معاملہ نچلی عدالت میں زیر التوا ہے جس نے ابھی تک 26 میں سے صرف آٹھ گواہوں سے جرح کی ہے۔انہوں نے اپنے معاملات میں فوری سماعت کی بھی مانگ کی ہے۔

سال 2015 میں قتل کے معاملے میں ملزم شہاب الدین تہاڑ جیل میں بند ہے۔اس نے اپنے معاملے میں جلد سماعت کا مطالبہ کیا ہے جس میں نچلی عدالت نے ابھی تک 20 میں سے صرف آٹھ گواہوں کے بیان درج کئے ہیں۔ایسی ہی ایک درخواست 2014 میں عصمت دری کے ایک کیس کے ملزم شنکر نے دائر کی ہے،وہ بھی تہاڑ جیل میں بند ہے،اس نے دلیل دی کہ نچلی عدالت کے کیس میں ابھی تک 17 میں سے صرف نو گواہوں سے جرح کی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی