آلوپھینکنے کے معاملے میں ایس پی کارکن گرفتار، سماجوادی پارٹی نے اٹھایاسوال 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 14th January 2018, 11:57 AM | ملکی خبریں |

لکھنؤ، 13جنوری(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) اترپردیش اسمبلی،راج بھون اور دیگر اہم مقامات پر آلو پھینک کے معاملے میں پولیس نے قنوج ضلع کے دو لوگوں کو گرفتار کیا۔ان میں سے ایک آلو کو اپنے لوڈر لانے والا ڈرائیور ہے۔پولیس اس معاملے میں چھ افراد کو تلاش کر رہی ہے۔یہ لوگ سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے کارکن ہے اوریہ بات کہی جارہی ہے کہ ان لوگوں نے دارالحکومت کے اہم علاقوں میں آلوکو پھینک کرحکومت کو بدنام کرنے کی نیت تھی۔ اس معاملے میں ایس پی صدر اکھلیش یادو نے شہر کے سینئر پولیس اہلکارکونشانہ بنایا ۔لکھنؤ کے سینئر پولیس سپرنٹنڈنٹ دیپک کمار نے بتایا کہ چھ جنوری کی صبح دارالحکومت کے وی آئی پی علاقوں میں علی الصباح آلوپھینکے گئے تھے۔پولیس نے سب سے پہلے سی ٹی وی کیمرے کی مدد سے آلو پھینک آئے لوڈر کی نشاندہی کی۔اس لوڈرکے مالک اور ڈرائیور کی شناخت قنوج ضلع کے ٹھٹھیا علاقے کے سنتوش پال کے طور پر ہوئی۔سنتوش کی شناخت پر اس معاملے میں قنوج کے تروا چہرہ سنگھ کو حراست میں لیا گیا۔اس معاملے پر سخت رد عمل ظاہر کرتے ہوئے ایس پی سپریمو اکھلیش یادو نے کہا کہ کولڈ اسٹوریج میں آلو برباد ہو رہا ہے، کسانوں نے قرض لیا ہے۔اگر ایس پی کے لوگ کسان ہیں، وہ آلو لائے تو انہوں نے کیا گناہ کیا۔اکھلیش یادونے لکھنؤ کے سینئر پولیس اہلکار کو کٹہرے میں کھڑا کرتے ہوئے کہاکہ ایس ایس پی چور اور مجرموں کو نہیں روک پا رہے ہیں۔ایس ایس پی کے گھر کے پڑوس میں سابق ممبر اسمبلی کے بیٹے کا قتل ہوگیا۔انہوں نے کہاکہ اگر آلو ہمارے لیڈروں نے پھینکا تو کیا غلط کیا۔اب ہم کسانوں سے کہہ رہے کہ ایک بوری آلو ضلع کے ضلع مجسٹریٹ کو دیں۔ حکومت کے اس رویہ سے قانون درست نہیں ہوگا۔جن کوقانون ونظام صحیح کرنا ہو وہ آلو کسانوں کو گرفتار کر رہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

سواتی مالیوال نے ہڑتال ختم کی، آرڈیننس کو تاریخی جیت قرار دیا 

دہلی خواتین کمیشن کی صدر سواتی مالیوال نے 12 سال سے کم عمر کی لڑکیوں سے جنسی زیادتی کے قصورواروں کو سزائے موت سمیت ایسے جرائم کے لئے سخت سزا کی فراہمی سے متعلق آرڈیننس کے متعلق صدرجمہوریہ کی طرف سے اعلان کیے جانے کے بعد آج اپنی بھوک ہڑتال ختم کر لی۔