گنگولی میں دکان اور کارکو نذر آتش کرنے کا معاملہ۔ عدالت میں ہوا، دو ملزمین پر جرم ثابت۔10دسمبر کو سنائی جائے گی سزا

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 6th December 2018, 7:01 PM | ساحلی خبریں |

کنداپور6؍دسمبر (ایس او نیوز)تقریباً تین سال قبل گنگولی میں دکان اور موٹر گاڑی کو نذرِ آتش کیے جانے کا جرم ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنس کورٹ میں دو ملزمین پر ثابت ہوگیا ہے اور عدالت نے 10دسمبر کو سزاسنانے کی بات کہی ہے۔

جن 2ملزمین کو عدالت نے مجرم قرار دیا ہے ان کے نام محمد جنید اور ویلڈنگ جعفر بتائے جاتے ہیں جو کہ گنگولی کے رہنے والے ہیں۔ ان دونوں پر 21؍جنوری 2015کی رات میں گنگولی کے رہنے والے وینکٹیش شینوئی کی ملکیت والی دکان وینکٹیشورا اسٹورس اور اس سے ملحقہ گودام کے علاوہ گھر کے سامنے پارک کی گئی کار کو نذرآتش کرنے کا الزام تھا۔اس وقت کے بیندور سرکل پولیس انسپکٹر سدرشن کی قیادت میں تشکیل دی گئی تفتیشی ٹیم نے مذکورہ بالا ملزمین کو گرفتار کیا تھا۔ 

سیشنس عدالت کے جج پرکاش کھانڈیری نے کیس کی سماعت مکمل ہونے کے بعد کہا کہ انڈین پینل کوڈ کی دفعات 451, 436 اور 427 کے تحت ان دونوں ملزمین پردائر کیے گئے مقدمے میں جرم ثابت ہوگیا ہے،جس کے لئے سزا کی مقدار کا اعلان وہ 10دسمبر کوکریں گے۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ گنگولی میں آتش زنی کے اس واقعے کے بعدسنگھ پریوار کے لیڈروں نے اسے فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کی تھی۔ بی جے پی کی رکن اسمبلی شوبھا کرندلاجے نے 23؍جنوری 2015کواڈپی میں پریس کانفرنس کے دوران سنگین الزام لگاتے ہوئے اس واقعے کو بھٹکل کے دہشت گردوں کی کارروائی قراردیا تھا اور کہا تھا ’’کہ اس میں گنگولی کے مقامی لوگ ملوث نہیں ہیں بلکہ یہ دہشت گردی میں مہارت رکھنے والوں کی کارستانی ہے ، کیونکہ آتش زنی کے لئے 10لیٹر پٹرول استعمال کیا گیا ہے، انہوں نے کہا تھا کہ وہ لوگ بھٹکل کے ہوسکتے ہیں اور یہ ایک منصوبہ بند واردات ہے شوبھا نے یہاں تک کہا تھا کہ  پولیس کو جرم میں استعمال کی گئی کار کا جو رجسٹریشن نمبر معلوم ہو اہے وہ اڈپی ضلع کا نہیں ہے۔‘‘ 

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: لاپتہ ماہی گیروں کا معاملہ۔ ڈپٹی کمشنر کے دفتر میں خصوصی اجلاس؛ بنگلہ دیشیوں کو ملازم نہ رکھنے ڈپٹی کمشنر کی تاکید

کشتی سمیت لاپتہ ماہی گیروں کے مسئلے پر ایک خصوصی جائزاتی میٹنگ ضلع شمالی کینرا کے ڈپٹی کمشنر ایس ایس نکول کے دفتر میں منعقد کی گئی، جس میں ماہی گیروں کے لیڈر، پولیس افسران اورتحقیقاتی ٹیم کے افسران شریک ہوئے۔ اس اجلاس میں ساحلی علاقے میں تحفظ اور سیکیوریٹی کے مسئلے پر بھی غور ...

ملیناڈو کراولی ریلوے لائن منصوبے پر جلد عمل درآمد کے لئے ریاستی وزیر اعلیٰ کمار اسوامی کا مرکزی حکومت سے تقاضہ

شیموگہ، شرنگیری، منگلورو جیسے علاقوں سے گزرنے والی ملیناڈو کراولی ریلوے لائن منصوبے پر جلد عمل درآمد کے لئے ریاستی وزیر اعلیٰ کمار ا سوامی نے مرکزی حکومت سے تقاضہ کیا ہے۔

ہبلی۔انکولہ ریلوے منصوبہ:سڑکوں پر احتجاج کرنے سے ریل آنے والی نہیں ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کا انتظار کیا جارہا ہے۔ اننت کمار ہیگڈے کا بیان

مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڈے نے ہبلی۔انکولہ ریلوے منصوبے میں ہورہی تاخیر کے سلسلے میں کہا کہ اس میں کوئی سیاسی کھیل نہیں ہورہا ہے، بلکہ سپریم کورٹ نے اس منصوبے پر اسٹے لگا رکھاہے اس لئے عدالت کے فیصلے کا انتظار کیا جارہا ہے۔ اس تاخیر کے خلاف راستہ روکویا احتجاجی مظاہرے کرنے سے ...

بھٹکل میں ویلفئیر پارٹی آف انڈیا کے زیراہتمام قومی صدر کی آمد پر خطاب عام : مسلمان  جب تک حکمرانی میں شامل نہیں ہونگے کوئی مسائل حل نہیں ہونگے : قاسم رسول الیاس

آزادی کے 70سالوں بعد بھی مسلمان  سیاسی طور پر بے وزن ، بے وقعت اور پسماندگی کا شکار ہیں۔ جو کل تک اقتدار کے مالک تھےآج ملکی سیاست میں ان کاکوئی کردار نہیں ہے، اس کے برعکس پچھڑے طبقات، دلت، اچھوت ، او بی سی ایک سیاسی قوت کے طورپر ابھر کر اپنی طاقت منوانے میں کامیاب ہیں ان کی ایک ...

کاروار: بوٹ سمیت لاپتہ ہونے والے ماہی گیروں کے اہل خانہ کو گزربسر کے لئے ریاستی حکومت کی طرف سے فی کس ایک لاکھ روپے کی امداد

ضلع شمالی کینرا کے ایڈیشنل ڈی سی ڈاکٹر سریش ایٹنال نے بتایا ہے کہ ملپے بندرگاہ سے ماہی گیری کے لئے نکلنے کے بعد مہاراشٹرا کے حدودمیں لاپتہ ہونے والی سوورنا تریبھوجا ماہی گیر کشتی پر موجود 7مچھیروں کے اہل خانہ کو گزربسر کے لئے ریاستی حکومت کی جانب سے عبوری راحت کے طورپر فی کس ...