گنگولی میں دکان اور کارکو نذر آتش کرنے کا معاملہ۔ عدالت میں ہوا، دو ملزمین پر جرم ثابت۔10دسمبر کو سنائی جائے گی سزا

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 6th December 2018, 7:01 PM | ساحلی خبریں |

کنداپور6؍دسمبر (ایس او نیوز)تقریباً تین سال قبل گنگولی میں دکان اور موٹر گاڑی کو نذرِ آتش کیے جانے کا جرم ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنس کورٹ میں دو ملزمین پر ثابت ہوگیا ہے اور عدالت نے 10دسمبر کو سزاسنانے کی بات کہی ہے۔

جن 2ملزمین کو عدالت نے مجرم قرار دیا ہے ان کے نام محمد جنید اور ویلڈنگ جعفر بتائے جاتے ہیں جو کہ گنگولی کے رہنے والے ہیں۔ ان دونوں پر 21؍جنوری 2015کی رات میں گنگولی کے رہنے والے وینکٹیش شینوئی کی ملکیت والی دکان وینکٹیشورا اسٹورس اور اس سے ملحقہ گودام کے علاوہ گھر کے سامنے پارک کی گئی کار کو نذرآتش کرنے کا الزام تھا۔اس وقت کے بیندور سرکل پولیس انسپکٹر سدرشن کی قیادت میں تشکیل دی گئی تفتیشی ٹیم نے مذکورہ بالا ملزمین کو گرفتار کیا تھا۔ 

سیشنس عدالت کے جج پرکاش کھانڈیری نے کیس کی سماعت مکمل ہونے کے بعد کہا کہ انڈین پینل کوڈ کی دفعات 451, 436 اور 427 کے تحت ان دونوں ملزمین پردائر کیے گئے مقدمے میں جرم ثابت ہوگیا ہے،جس کے لئے سزا کی مقدار کا اعلان وہ 10دسمبر کوکریں گے۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ گنگولی میں آتش زنی کے اس واقعے کے بعدسنگھ پریوار کے لیڈروں نے اسے فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کی تھی۔ بی جے پی کی رکن اسمبلی شوبھا کرندلاجے نے 23؍جنوری 2015کواڈپی میں پریس کانفرنس کے دوران سنگین الزام لگاتے ہوئے اس واقعے کو بھٹکل کے دہشت گردوں کی کارروائی قراردیا تھا اور کہا تھا ’’کہ اس میں گنگولی کے مقامی لوگ ملوث نہیں ہیں بلکہ یہ دہشت گردی میں مہارت رکھنے والوں کی کارستانی ہے ، کیونکہ آتش زنی کے لئے 10لیٹر پٹرول استعمال کیا گیا ہے، انہوں نے کہا تھا کہ وہ لوگ بھٹکل کے ہوسکتے ہیں اور یہ ایک منصوبہ بند واردات ہے شوبھا نے یہاں تک کہا تھا کہ  پولیس کو جرم میں استعمال کی گئی کار کا جو رجسٹریشن نمبر معلوم ہو اہے وہ اڈپی ضلع کا نہیں ہے۔‘‘ 

ایک نظر اس پر بھی

اُترکنڑا سے چھٹی مرتبہ جیت درج کرنے والے اننت کمار ہیگڑے کی جیت کا فرق ریاست میں سب سے زیادہ؛ اسنوٹیکر کو سب سے زیادہ ووٹ بھٹکل میں حاصل ہوئے

پارلیمانی انتخابات میں شمالی کینرا کے بی جے پی امیدوار اننت کمار ہیگڈے نے پوری ریاست کرناٹک میں سب سے زیادہ ووٹوں سے کامیابی حاصل کی ہے۔ انہوں نے 479649 ووٹوں کی اکثریت سے کانگریس  جے ڈی ایس مشترکہ اُمیدور  آنند اسنوٹیکر  کو شکست دی ۔

ریاست میں کبھی ہار کا منھ نہ دیکھنے والے سیاسی لیڈروں کی ذلت بھری شکست

ریاست کرناٹکا میں انتخابی میدان میں کبھی ہار کا منھ نہ دیکھنے والے چند نامورسیاسی لیڈران جیسے ملیکا ارجن کھرگے، دیوے گوڈا، ویرپا موئیلی اورکے ایچ منی اَپا وغیرہ کو اس مرتبہ پارلیمانی انتخاب میں انتہائی ذلت آمیز شکست سے دوچار ہونا پڑا ہے۔ 

منگلورو:کلاس میں اسکارف پہننے پر سینٹ ایگنیس کالج نے طالبہ کو دیا ٹرانسفر سرٹفکیٹ۔طالبہ نے ظاہر کیاہائی کورٹ سے رجوع ہونے اور احتجاجی مظاہرے کاارادہ

کلاس روم میں اسکارف پہن کر حاضر رہنے کی پاداش میں منگلورومیں واقع سینٹ ایگنیس کالج نے پی یو سی سال دوم کی طالبہ فاطمہ فضیلا کو ٹرانسفر سرٹفکیٹ دیتے ہوئے کالج سے باہر کا راستہ دکھا دیا ہے۔

بھٹکل میں رمضان باکڑہ کی نیلامی؛ 40 باکڑوں کے لئے میونسپالٹی کو 1126 درخواستیں

رمضان کے آخری عشرہ کے لئے بھٹکل  میں لگنے والے رمضان باکڑہ کی آج میونسپالٹی کی جانب سے  نیلامی کی گئی۔ بتایا گیاہے کہ 40 باکڑوں کی نیلامی کے لئے  میونسپالٹی کے جملہ 1126 درخواست فارمس فروخت ہوئے تھے۔