وارانسی میں مذہبی مقام کی زمین کے سلسلہ میں دو فرقوں کے مابین جھڑپ، کئی زخمی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th July 2017, 3:02 PM | ملکی خبریں |

وارانسی،17؍جولائی(ایس او نیوز؍ایجنسی ) اترپردیش میں وارانسی کے صغری علاقہ میں کل رات ایک مذہبی مقام کی زمین کے سلسلے میں دو فرقوں کے مابین ہونے والی پرتشدد جھڑپ کو قابو میں کرنے کیلئے پولیس کو آنسو گیس کے گولے چھوڑنے پڑے اور لاٹھی چارج کرنا پڑا۔ اس واقعہ میں تین پولیس جوانوں سمیت کئی افراد زخمی ہوگئے۔ ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ یوگیشور رام مشرا نے آج یہاں بتایا کہ مہاتما گاندھی کاشی ودیاپیٹھ۔ فاطمان روڈ کے آس پاس کچھ شرپسند عناصر کے ذریعہ سماجی ماحول خراب کرنے کی کوشش کی گئی تھی، جسے انتظامیہ نے ناکام بنا دیا۔

انہوں نے بتایا کہ معاملے کی جانچ مجسٹریٹ کے ذریعہ کی جا رہی ہے۔ پولیس سی سی ٹی وی فوٹیج اور دیگر ذرائع سے شرانگیزی کرنے والے افراد کی شناخت کر رہی ہے۔

پولیس ذرائع نے بتایا کہ صغری کے فاطمان روڈ، گلاب باغ اور للاپورہ علاقہ میں دونوں فریقوں کی جانب سے رات گئے پتھربازی اور آتشزنی کے واقعات ہوئے۔ انہوں نے بتایا کہ پرتشدد واقعہ میں تین پولیس جوانوں سمیت ڈیڑھ درجن افراد زخمی ہوگئے۔ اس واقعہ میں کئی گاڑیوں کے شیشے توڑ دیئے گئے۔ حالات پر قابو پانے کیلئے ڈویژنل کمشنر رمیش نتین گوکرن، ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ مسٹر مشرا، سینئر پولیس سپرنٹنڈنٹ رام کرشن بھاردواج، پولیس سپرنٹنڈنٹ (سٹی) دنیش سنگھ سمیت تمام اعلی افسر موقع پر پہنچ گئے۔

حکام کی موجودگی میں دونوں فریقوں کے لوگوں کو سمجھانے کی کوشش کی گئی، لیکن کسی نے انتظامیہ کی بات نہیں مانی۔ اس کے بعد پولیس نے طاقت کا استعمال کیا۔ انہوں نے بتایا کہ ایک مذہبی مقام کی زمین پر ایک دوسرے مذہب کے لوگوں کے ذریعہ قبضہ کرنے کی افواہ کے بعد ہنگامہ ہوا۔ سینکڑوں لوگ سڑکوں پر نکل کر نعرہ بازی کرنے لگے۔

ایک نظر اس پر بھی

ایودھیا میں رام کے مجسمے کے لیے چاندی کے دس تیردے گاشیعہ وقف بورڈ،وسیم رضوی رام بھکتی ثابت کرنے کے لیے کسی حدتک جانے کوتیار

شیعہ وقف بورڈان دنوں سرکاری چمچہ گیری کے لیے پوری طرح کوشاں ہے۔اس کے لیے وہ کسی بھی حدتک جانے کوتیارہے۔ یوگی حکومت نے ایودھیا میں رام کے مجسمہ بنانے کا خیال بنایاہے۔