ٹریڈ یونینوں کی 2 روزہ ہڑتال، ملک گیر سطح پر حکومت کے خلاف احتجاج

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 8th January 2019, 11:46 AM | ملکی خبریں |

ممبئی، 8؍جنوری (ایس او نیوز؍ایجنسی) آج سے ملک گیر سطح پر ٹریڈ یونینوں نے دو روزہ ہڑتال کی کال دی ہے۔ اس ہڑتال میں تقریبا 20 کروڑ ملازمین شامل ہیں۔ اس کے ساتھ ہی ممبئی میں بیسٹ بس یونین نے ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔ اس کے مد نظر ممبئی میں ہر روز چلنے والی 1812 بسوں میں سے صبح ایک بھی بس نہیں چلی ہے۔ بیسٹ مینجمنٹ نے ہڑتال پر روک لگانے کے لئے میسما لگا دیا ہے۔

 ملک گیر سطح پر مرکزی حکومت کے خلاف کسان بھی احتجا ج کر رہے ہیں۔ کسان قرض معافی کے وعدے کو اب تک پورا نہیں کئے جانے سے ناراض ہیں۔ اس ہڑتال میں دس ٹریڈ یونین شامل ہیں۔

آئی این ٹی یو سی نے ہڑتال کی حمایت کرنے کا اعلان کیا ہے ۔ لوک سبھا انتخابات سے قبل ملک گیر سطح پر اس طرح کا احتجا ج سرکار کے لئے درد سر ثابت ہوسکتا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

راج ناتھ سنگھ نے اپوزیشن کے اتحادکونشانہ بنایا

مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے آج کہا کہ مودی حکومت کی مقبولیت سے خائف ہو کر اپوزیشن جماعتوں نے مہاگٹھ بندھن (عظیم اتحاد) بنایا ہے لیکن انہیں یقین ہے کہ عوامی حمایت بھارتیہ جنتا پارٹی کے حق میں ہی رہے گی۔

مایاوتی پر’غیر اخلاقی‘ تبصرہ کرنے والی بی جے پی ممبر اسمبلی سے خواتین کمیشن نے وضاحت طلب کی

بی ایس پی سربراہ مایاوتی کا موازنہ مبینہ طور پر ہجڑوں سے کرنے سے متعلق بیان کی مذمت کرتے ہوئے قومی خواتین کمیشن نے پیر کو بی جے پی ممبر اسمبلی سادھنا سنگھ کو نوٹس جاری کہا کہ وہ اپنی اس ’غیر اخلاقی، توہین اور غیر ذمہ دارانہ‘تبصرہ پر تسلی بخش وضاحت دیں۔

ملک نئے وزیراعظم کاانتظارکررہاہے،بی جے پی کے پاس کوئی اورہوتوبتائے،ہمارے پاس کئی چوائس ہیں:  اکھلیش یادو

سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے صدر اکھلیش یادو نے اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد کے رہنما کے بارے میں سوال پوچھ کربی جے پی پر طنز کرتے ہوئے پیر کو کہا کہ ملک کے عوام اگلے انتخابات کے بعد نیا وزیر اعظم چاہتی ہے.

مالیگاؤں2008 بم دھماکہ معاملہ؛ یو اے پی اے قانون کے اطلاق کے خلاف داخل اپیل پر 28؍ جنوری کو ہائی کورٹ میں سماعت متوقع

مالیگاؤں 2008ء بم دھماکہ معاملے کے کلیدی ملزم کرنل پروہیت و دیگر ملزمین کی جانب سے یو اے پی اے قانون کے اطلاق کے خلاف داخل اپیل پر 28؍ جنوری کو ہائی کورٹ میں سماعت ہوسکتی ہے ۔