بجپے میں غیر قانونی ذبح خانہ چلانے کے لئے دو بھائی گرفتار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th July 2017, 1:00 PM | ساحلی خبریں |

منگلورو،17؍جولائی (ایس او نیوز) بجپے کے اَڈّور نامی علاقے میں غیر قانونی طور ذبح خانہ (سلاٹر ہاؤز) چلانے کے الزام میں بجپے پولیس نے دو بھائیوں کو گرفتا رکر لیا ہے جن کی شناخت مصطفی (۲۷سال) اور عبدالمجید (۲۳سال)کی حیثیت سے کی گئی ہے۔

پولیس کے مطابق بجپے انسپکٹر ٹی ڈی ناگراج کی قیادت میں ایک خصوصی ٹیم نے چھاپہ مارکر ان دو بھائیوں کو گرفتار کیا ہے جن کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ ان دونوں پر پہلے ہی سے بجپے پولیس اسٹیشن میں6کیس، سورتکل پولیس اسٹیشن اور کاوور پولیس اسٹیشن میں ایک ایک کیس درج ہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ 16جون کو اَڈّور کے مقام پر چھاپہ مارتے ہوئے انسپکٹر ٹی ڈی ناگراج کی ٹیم نے ایک ٹیمپو ٹراویلر، ایک رٹز کار اور ایک ڈسٹر کار کے ساتھ 16مویشی ضبط کیے تھے۔ اس معاملے میں مذکورہ بالادوبھائیوں کی تلاش جاری تھی۔چونکہ دونوں بھائی اس واقعے کے بعد لاپتہ ہوگئے تھے اس لئے پولیس اب تک انہیں گرفتار نہیں کرپائی تھی۔پولیس کا الزام ہے کہ یہ دونوں بھائی چوری کیے گئے جانور خریدکر قصائی خانہ چلایا کرتے تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کیخلاف کانگریس کا جاری کردہ ٹیپ جعلی، کرناٹک کانگریس رکن اسمبلی کابیان، کانگریس پریشان 

بی جے پی کے خلاف کانگریس کے ایک جاری کردہ ٹیپ سے کانگریس کی ٹکٹ پر جیت درج کرنے والے یلاپور کے رکن اسمبلی شیورام ہیبار نے پارٹی کی جانب سے جاری کردہ ٹیپ کو جعلی قرار دیاہے۔ اور اس بات کو غلط قرار دیا ہے کہ بی جے پی کی طرف سے انہیں رقم کی پیشکش کی گئی تھی اور وزارتی عہدہ دینے کا بھی ...

فتح کے جشن میں پاکستان نواز نعرے بازی کا جھوٹا ویڈیو۔ مینگلور پولس اسٹیشن میں کانگریس کی طرف سے شکایت درج

بی جے پی کے وزیراعلیٰ ایڈی یورپا کے استعفیٰ دینے اور کانگریس جے ڈی ایس محاذ کے لئے حکومت سازی کی راہ ہموار ہونے کی خوشی میں منگلور و کے کانگریس دفتر میں جشن فتح منایاگیاتھا۔ لیکن اس تعلق سے ایک ویڈیو کلپ سوشیل میڈیا پر عام ہواتھا جس میں جشن کے دوران پاکستان نواز نعرے بازی ...

بھٹکل میں گائیوں سے بھری دو لاریوں پر حملے کے الزام میں گیارہ افراد گرفتار؛ کیاجانوروں کو بی جے پی لیڈر کے ڈیری فارم لےجایا جارہا تھا ؟

  تعلقہ کے مرڈیشور نیشنل ہائی وے پر کل رات ہوئی ہندو شدت پسند تنظیموں کے کارکنوں کی غنڈہ گردی کے واقعے کے بعد پولس متحرک ہوکر اب تک گیارہ لوگوں کو گرفتار کرنے میں کامیاب ہوگئی ہے، جبکہ دیگر حملہ آوروں کی تلاش جاری ہے۔