وزیر اعظم کی مخالفت میں ٹویٹ کرنے پر سوشل میڈیا پر ٹرول ہوئے ترون وجے 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 6th September 2018, 8:04 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،06؍ ستمبر (ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) بھارتی جنتا پارٹی (بی جے پی ) لیڈر اورسابق راجیہ سبھا رکن پارلیمنٹ ترون وجے کے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے وزیر اعظم نریندر مودی کے خلاف لگا تار کئے گئے کئی ٹوئٹ کی وجہ سے انہیں ٹرول ہونا پڑا۔ منگل کی دیر رات بی جے پی لیڈر کے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے ایک کے بعد ایک کئی ٹوئٹ کئیگئے ۔ ان کے ٹوئٹر ہینڈل سے مودی کے خلاف اور کانگریس صدرراہل گاندھی کی حمایت مں کئی ٹوئٹ کئے گئے ہیں۔ حالانکہ ترون وجے نے اس معاملے پر صفائی دیتے ہوے کہا کہ ٹوئٹر اکاؤنٹ ہیک ہو گیا تھا جسے ڈلیٹ کر دیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ٹوئٹر اکاؤنٹ کو ہینڈل کرنے کے لئے جس شخص کو رکھا گیا تھا اسے ہٹا دیا ہے۔ترون وجے کے اکاؤنٹ سے سب سے پہلے کانگریس صدر راہل گاندھی کی کیلاش مانسرور یاترا کی حمایت میں ٹوئٹ کیا گیا جس میں لکھا گیا کہ راہل گاندھی کی کیلاش یاترا کو جو لوگ مذاق اڑا رہے انہیں ایسا ہیں کرنا چاہئے ۔ راہل جو بھی کر رہے وہی شیو اور ان کے درمیان ہے ۔ شیو سے بڑھا کچھ بھی نہیں ہے ۔ ترون وجے کے ایک دیگر ٹوئٹ میں کہا گیا کہ وہ خودتین بار کیلاش مانسرور جا چکے ہیں اور کیلا ش یاتریوں کے وفد کے صدر بھی رہ چکے ہیں۔ بی جے پی لیڈر کے ٹوئٹر اکاؤں ٹ سے وزیر اعظم نریندر مودی کو لے کربھی کئی ٹوئٹ کئے گئے ۔ جس میں کہا گیا کہ تم اس لئے وہاں پر نہیں ہو کیونکہ تم مشہور ہو تم اس لئے وہاں پر ہو کیونکہ لوگ تمہارے پیچھے ہیں۔ دیر رات آئے اس ٹوئٹ کے بعد سوشل میڈیا پر ترون وجے کو کافی ٹرول بھی کیا گیا ۔ اس کے بعد انہوں نے بدھ کی صبح ٹوئٹ کر کے کہا کہ وہ ابھی مارننگ واک پر ہیں اور جو شخص ان کا ٹوئٹر ہینڈل کرتا تھا اسے ہٹا دیا گی اہے ۔واضح رہے کہ ترون وجے 2010سے 2016تک اترا کھنڈ سے راجیہ سبھا رکن رہے ہیں ۔وہ پانچ جنیہ کے ایڈیٹر بھی رہ چکے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

سابق ایم پی پرفل کمار مہیشوری کی موت

راجیہ سبھا کے سابق رکن، یونائٹیڈ نیوز آف انڈیا)(یو این آئی) کے چیرمین (ایمریٹس)اور نوبھارت اخبار گروپ کے چیف ایڈیٹر پر فل کمار مہیشوری کا یہاں انتقال ہوگیا۔