تین طلاق: ملک میں لاکھوں ہندوبہنوں اورگجرات کی بھابھی کو بھی انصاف ملناچاہیے،بحث کے دوران اویسی کاسخت حملہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 28th December 2017, 8:31 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی28دسمبر(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)مسلمانوں کے درمیان ایک ساتھ تین طلاق (طلاق بدعت)کو مجرمانہ بتانے اور اس رواج کو ختم کرنے کی تجویز والا سرخیوں میں چھایا بل جمعرات (28دسمبر)کو لوک سبھا میں پیش ہو گیا۔تین طلاق کو محدود کرنے اور شادی شدہ مسلم خواتین کے حقوق محفوظ کرنے سے متعلق ’’مسلم خواتین (شادی حقوق تحفظ)بل 2017‘‘کو مرکزی وزیر قانون روی شنکر پرساد نے پیش کیا۔بل کی اے آئی ایم آئی ایم، ٹی ایم سی، آر جے ڈی، بی جے ڈی جیسی اپوزیشن پارٹیاں مخالفت کر رہی ہیں۔

بتادیں کہ یہ بل صرف اس مہینے میں مرکزی کابینہ نے منظوری دی تھی۔پارلیمنٹ میں بحث کے دوران حزب اختلاف نے تین طلاق کے بل میں مجرمانہ دفعات کی مخالفت کی۔ایم آئی ایم لیڈر اسد الدین اویسی نے بل کی پرزورمخالفت کی اور کہا کہ اگر بل منظور ہوا تو مسلم خواتین کے حقوق کی خلاف ورزی ہو گی۔انہوں نے کہا کہ تجویز کردہ قانون کے بارے میں مسلمانوں کے ساتھ کوئی بات چیت نہیں کی گئی۔وزیر اعظم نریندر مودی پر طنز کستے ہوئے حیدرآباد کے بے باک لیڈر اسد الدین اویسی نے کہا کہ ملک میں 20لاکھ ایسی خواتین ہیں، جنہیں ان کے شوہروں نے چھوڑ دیا ہے اور وہ مسلمان نہیں ہیں۔ان کے لئے قوانین کی ضرورت ہے۔ان میں گجرات میں ہماری ’’بھابھی‘‘(بغیر نام لئے اویسی کا اشارہ وزیر اعظم مودی کی بیوی کی طرف تھا)بھی ہے،انہیں بھی انصاف ملنا چاہئے،یہ حکومت ایسا نہیں کر رہی ہے۔

اویسی نے الزام لگایا ہے کہ یہ بل آئین کو نظر انداز کرتا ہے اور قانونی فریم ورک میں موزوں نہیں بیٹھتا۔انہوں نے کہا کہ مسلم خواتین کے ساتھ ناانصافی کے معاملات سے نمٹنے کے لئے گھریلو تشدد قانون اور آئی پی سی کے تحت دیگر کافی دفعات ہیں اور اس طرح کے نئے قانون کی ضرورت نہیں ہے۔اویسی نے کہا کہ اس بل اور قانون بننے کے بعد مسلم خواتین کو چھوڑنے کے واقعات مزید آگے بڑھ جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ ملک میں قوانین پہلے سے ہی ہیں، گھریلو تشدد کے روک تھام ایکٹ، آئی پی سی،آپ ویسے ہی کام کو پھر جرم قرار نہیں دے سکتے ہیں،اس بل میں تضادات ہیں۔مرکزی وزیر قانون روی شنکر پرساد نے بل پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ قانون تاریخی ہے اور سپریم کورٹ کی طرف سے ’’طلاق بدعت ‘‘کو غیرکانون اعلان کئے جانے کے بعد مسلم خواتین کو انصاف دلانے کے لئے اس ایوان کی طرف سے اس سلسلے میں بل پاس کرنا ضروری ہو گیا ہے۔ انہوں نے اس سلسلے میں بعض ارکان کے اعتراضات کو مسترد کردیا اور کہا کہ یہ قانون کسی مذہب سے متعلق نہیں ہے لیکن خواتین کے اعزاز سے متعلق ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک کی خواتین بہت تکلیف کا شکار تھیں، 22اگست، 2017کو سپریم کورٹ نے اسے غیر آئینی قراردیا۔آج صبح (28دسمبر)میں نے پڑھا رامپور میں ایک عورت کو تین طلاق اس لئے دے دی گئی کیونکہ وہ صبح دیرسے اٹھی تھی۔وزیر نے کہا کہ خواتین کی عظمت سے جڑاہے، تین طلاق کوسپریم کورٹ نے بھی مسترد کردیاہے۔انہوں نے کہا کہ یہ توقع تھی کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ملک میں حالات  بہترہوں گے لیکن اس سال 300 طلاقیں ہوچکی ہیں، یہاں تک کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعدبھی 100طلاقیں ہوچکی ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

اکھلیش یادو ’ٹائیگر بام‘ کی طرح ہیں : مایاوتی 

اتر پردیش کی سیاست کے دو بڑے قد آور ملائم سنگھ یادو اور مایاوتی جب دہائیوں پرانی دشمنی بھلا کر مین پوری کی ریلی میں ایک ہی مشترکہ اسٹیج پر آئے تو ان کی تصاویر خوب وائرل ہوئیں دیکھی گئیں۔ دشمنی بھلا کر دونوں رہنماؤں نے اب اتر پردیش میں بی جے پی کو روکنے کی کوشش کرنے کی ایک طرح سے ...

نریندر مودی کی سیکورٹی کے پیش نظر وارانسی سیٹ پر بدلی گئی امیدواروں کی نامزدگی کی جگہ

وزیر اعظم نریندر مودی کی سیکوریٹی کے پیش نظر وارانسی پارلیمانی سیٹ کے انتخابات کیلئے نامزدگی مقام میں تبدیلی کی گئی ہے۔پہلے ضلع انتظامیہ نے ایڈمرل کورٹ میں نامزدگی کا اہتمام کیا تھا، لیکن اتوار کو نامزدگی مقام بدل کر کلکٹریٹ واقع رائفل کر دیا گیا۔انتظامیہ کے فیصلے کے بعد اب ...

ایس پی ۔ بی ایس پی کے پاس کانگریس کے ساتھ اتحاد کے علاوہ کوئی چارہ نہیں:سلمان خورشید

کانگریس کے سینئر لیڈر سلمان خورشید نے لوک سبھا انتخابات کے بعد اپنی پارٹی کے ایس پی۔بی ایس پی۔آر ایل ڈی کے ساتھ اتحاد ہونے کو ناگزیر قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انتخابی نتائج آنے کے بعد اتر پردیش کے اس اتحاد کے پاس کوئی اور چارہ نہیں ہوگا۔اتر پردیش کی کانگریس یونٹ کے دو بار چیف رہ ...

آئی این ایل ڈی کے سابق ممبر اسمبلی راؤ بہادر نے تھاما کانگریس کا دامن، دپیندر ہڈا کی نامزدگی میں ہوں گے شامل

جنوبی ہریانہ کے قدآور لیڈر اور انیلو کے سابق ممبر اسمبلی راؤ بہادر سنگھ نے اتوار کو کانگریس پارٹی کا دامن تھام لیا۔راؤ بہادر سنگھ نے آج بتایا کہ 22 اپریل کو روہتک میں ایم پی دپیندر ہڈا کی نامزدگی کے موقع پر وہ اپنے 5000 حامیوں کے ساتھ موجود رہیں گے۔کانگریس صدر راہل گاندھی اور ...